Kashif Hafeez Siddiqui

نقیب کے نقیب

In Urdu Columns on January 18, 2018 at 3:31 pm

قدرت ظالم یقینا نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ اسی لئیے آخرت موجود ہے ۔۔۔۔۔۔ سارا حساب کتاب وہاں بے باک ہو گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کوئ سفارش ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئ کرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئ طاقت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئ ایجنسی کام نہیں آئے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بس اللہ کا قانون ہو گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور انصاف ہو گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جو کہ شفاف اور بے رحم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نقیب اللہ محسود ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ قاتلوں سے سوال پوچھے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مجھے کس جرم میں قتل کیا گیا ؟ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ صرف نقیب ہی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہاتھ پاوں بندھے ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پشت پہ گولیاں کھانے والے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جعلی پولیس مقابلوں میں مارے جانے والے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ راہ چلتے اغوا ہوکر قتل ہو جانے والے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سب مظلوم اللہ کے حضور مدعی ہوں گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس روز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ خوش اور نازاں ہوں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور سب ظالموں کی ناک خاک آلود ہو گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ انشااللہ

سی ٹی ڈی کے اہلکاروں نے چپل گارڈن گل شیر آغا ہوٹل سے خوبصورت جواں سال، تین بچوں کے والد نقیب محسود کو اغوا کیا تھا. پولیس نےمقدمہ درج کرنے سےبھی انکار کیا تھا. نقیب کے تین بچے ہیں . جن میں نو سالہ نائلہ , سات سالہ علینہ اور دو سال کا بیٹا عاطف شامل ہیں. نقیب سہراب گوٹھ میں مقیم تھا .
نقیب محسود کے چاچازاد رحمان محسود نے “دی نیوز” کے رپورٹر دوست کو بتایا کہ نقیب محسود کسی بھی دہشتگرد کارروائی میں ملوث نہیں تھا. آپریشن راہ نجات کے بعد نقیب اپنے آبائی علاقے جنوبی وزیرستان کے تحصیل مکین گاؤں رزمک سے خاندان سمیت کراچی مستقل منتقل ہوا تھا

Advertisements

کراچی کے وکیل جن کا تعلق دیر سے ہے

In Urdu Columns on January 18, 2018 at 3:29 pm

کراچی کے لاکھوں پریشان او مضطرب بہاریوں ، بنگالیوں ، برمیوں اور پختونوں خاندانوں کے لئیے قومی اسمبلی میں آواز کراچی سے نہیں ۔ دیر سے ااٹھی ہے

26756828_2059712624055324_945836161063356634_o

الحمداللہ قومی اسمبلی میں جماعت اسلامی کے نادرا کے حوالے سے آئینی بل کو منظور کرتےہوئے قائمہ کمیٹی کے سپرد کردیا گیا ۔۔۔۔۔۔ جماعت اسلامی کی کراچی کے شہریوں کیلئے ایک اور بڑی پیش رفت ۔۔۔۔ ۔

مذکورہ بل جماعت اسلامی کے ممبران قومی اسمبلی صاحبزادہ محمد یعقوب ،صاحبزادہ طارق اللہ،شیر اکبر خان اور محترمہ عائشہ سید کی طرف سے جمع کرایا گیا تھا۔
بل جمع کرانے کا مقصد قومی شناختی کارڈ کے حصول میں پاکستانی شہریوں کو پیش آمدہ مشکلات کا ازالہ کرتے ہوئے ایک پہلے سے طے شدہ میکانزم کے ذریعے بلاک شدہ شناختی کارڈ اور مندرجہ ذیل کاغذات مہیا کرنے کی صورت قومی شناختی کارڈ جاری شامل ہیں ۔بل میں ایکٹ کی دفعہ دس کے بعد نئی دفعہ دس اے کو شامل کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ ایسے تمام افراد کو شناختی کارڈ جاری کردیے جائیں گے اور بلاک شدہ کلیئر کردیے جائیں گے جن کے پاس تیس سال سے پہلے تک کے مندرجہ ذیل کاغذات سے کوئی بھی ثبوت کے طور پرموجود ہوں

۱ ۔ ریونیو ڈیپارٹمنٹ سے تصدیق شدہ تیس سال قبل رجسٹرڈ شدہ زمین کے کاغذات۔
۲ ۔ مجاز اتھارٹی کی جانب سے جاری کردہ مقامی ڈومیسائل سرٹیفکیٹ۔
۳ ۔ ریونیو ڈیپارٹمنٹ کی طرف تصدیق شدہ شجرہ نسب
۴ ۔ پچیس سال قبل ذاتی یا خون کا رشتہ دار کی سرکاری ملازمت کی سند۔
۵ ۔ تیس سال قبل جاری کردہ مصدقہ تعلیمی سند۔
۶ ۔ درخواست دہندہ کو تیس سال قبل جاری کردہ پاسپورٹ۔

مذکورہ بل کو اگر قائمہ کمیٹی منظور کرتی ہے اور دونوں ایوانوں سے منظور ہوتا ہے تو پورے پاکستان میں شہریوں کے بلاک شدہ شناختی کارڈ کلیئر ہوجائیں گے اورجن کے پاس شناختی کارڈ نہیں ہیں اور پاکستان میں تیس سال پہلے کی موجودگی کا ثبوت ان کے پاس ہے تو وہ افراد بھی اس سے استفادہ کر یں گے

ظلم کی کوئ حد ہے

In Urdu Columns on January 18, 2018 at 3:26 pm

غم زدہ باپ کہتا ہے کہ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ اکلوتے بیٹے نے عصر کی نماز پڑھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چائے پی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ماتھا چوما اور بولا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دوستوں کے ساتھ کھانا وغیرہ کھا کر آتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پھر ہوا یوں کہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کسی موڑ پہ پولیس کے رکنے کا اشارہ بقول پولیس اس نے نہ جانے کیوں اگنور کردیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مستعد پولیس اہلکار جو ہر قاتل و ظالم کو پکڑ لیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فورا ایکشن میں آکر۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گاڑی پہ فائرنگ کر دیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ براہ راست گاڑی پہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ براہ راست ڈرائیور پہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نہ کسی ٹائر پہ اور نہ ہی کوئ Chase ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بس ٹھائیں ٹھائیں ٹھائیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ پولیس والے سادہ لباس میں تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پھر ۲۲ سالہ انتظار کی لاش ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بلکتی ماں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دہائیاں دیتا باپ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اکلوتا بیٹا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اب قبر میں آسودہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایف آئ آرنامعلوم افراد کے خلاف ہے