Kashif Hafeez Siddiqui

For the ‘Mutants’ of Ahmediyat cum Liberalism

In Clsh of Civilizations, pakistan, Uncategorized on August 28, 2009 at 1:49 pm

There are two types of extremisms which are moving side by side, parallel to each other. One is well known due to the Swat issue and the behavior of Taliban, i.e., ‘Religious Extremism’. On the other hand there is Liberal Extremism”—an enormously fatal and dangerous one in its own kind.

This liberal extremism is the output of the liberal, materialistic and secular (read anti-religion) Western education system. The primary objective of this system is to produce mentally & ideologically slave generations which will not only be helpful but also become tools in spreading their own Western agendas.

This generation is definitely good in English but unaware of Muslim values and culture. It seems that insulting and abusing religious people is a fashion for them.

After reading several English newspaper articles and internet blogs, I have noticed the following stereotype aproaches with minute differences whenever these liberal extremists are challenged:

I am an expert of ‘Pakistan History’.

I have God gifted understanding of Jinnah’s views the knowledge of others about Quaid-e-Azam is doubtful.

 • I have all the rights whatever I want to write but YOU are not allowed to disagree with me.

I have the right to use whatever abusive language about YOU because you deserve it.

 • I am a certified patriotic and YOU are an enemy of the country since maulvis opposed Jinnah before Partition.

 • I am open minded, liberal, enlightened and YOU are closed minded, backward Mullah

I am champion of secularism and YOU are a religious fascist

 • I am at peak of intellectuality and YOU have even no intelligence.

 • I know everything and YOU know nothing.

• I am an authority on all subjects if YOU dare challenge me then you are an idiot.

 • If an Ahmadi officer dies in Swat Operation then he is a hero. For the several Muslim soldiers who got martyred, it was simply their duty.

 • Irshad Manji (a lesbian), Asra Noamani (a lady having son without wedlock), Ayan Hirsi Ali (an atheist –co-producer & writer of film Fitna), Amina Wadud (who lead the mixed gender prayers drama) are their icons whereas Dr. Israr Ahmed and Jamaat-e-Islami people are criminals and can’t be tolerated at any blog.

I am are reading and observing the above again and again from liberal & Ahmadi mouthpieces for the last few years and the fact is that now I am sick and tired of all these bhashans. Liberals and Ahmadies are living in their own utopia and fool’s paradise.

They have no understanding of common Pakistanis’ problems. They always want to raise non-issues for their own vested interests and want to malign Pakistan’s image internationally.

What do you think what are the real issues of common Pakistanis, Blasphemy laws? Hudood Ordinance? Religious extremism?

No sir, a common Pakistani is facing the problems of day by day increasing Inflation and price hike, law & order, less salaries, lack of education, discrimination in education system, political instability, US intervention in Pakistani politics and state affairs, etc.

 The problems which are portrayed by these so called “Liberals” are their own “mental blocks”. No common Pakistani has any concern with them. In the latest IRI survey religious extremism not even amongst the top 5 problems faced by the common Pakistanis. But these drum beaters always shout like a crow.

IRI

These liberals are short sighted people and just want to present and discuss what they want. They don’t give a damn about what others think and believe. They have no interest in common Pakistanis’ miseries, troubles and problems. They have their own agenda.

This “Mummy Daddy – Burger Group” tries to present themselves as intellectuals. Their hidden agenda is promoting vulgarity amongst Pakistani and Muslim youth. The evident example is www.naseeb.com

where they developed the villages of Gays & Lesbians – Shame on them! This website is a mutation of so-called Liberalism and Ahmadiyat.

They have zero level tolerance against criticism. The use of abusive and indecent language is common by these liberal fascists and interestingly they believe that their opponents deserve this language, which shows their sick state of mind.

In the name of human rights they become Ahmadi mouthpieces. They even used Gojra incident in favor of Ahmadies. They portray that every practicing Muslim wants to kill Ahmadies but the fact is that every Muslim is in favor of protecting their rights under the Constitution of Pakistan and unanimously approved resolution of the national assembly in 1974, where they are protected as minority.

If someone wants to call them Muslim on the name of human rights then it’s not acceptable under the Constitution and for us, the people of Pakistan. Ahmadies are clearly non-Muslims but we believe that they should enjoy each and every right as a minority.

The mutation of Ahmadiyat and Liberalism is also evident from some blogs which could not be considered as mere ideological garbage centers. In these blogs and websites they promote all those values and norms which are against the teachings of Islam. Even some “poor couple”  raised the questions like why Pig is haram? Why one should keep a beard when Gillette exists.

 They want to prove themselves as champions of “Jinnah’s vision of Pakistan as an inclusive, liberal and secular state” but totally ignore the Quaid-e-Azam view of Pakistan become a test lab of Islam. See Quaid-e-Azam views about relationship of Pakistan & Islam in my following post

 https://kashifiat.wordpress.com/2009/08/14/quaid-e-azam-ka-pakistan-in-his-own-words/

My submission to these mutants of Ahmediyat and Liberalism is that now kindly stop calling your opponents as terrorists, mullahs and fitnas. There is a need to develop an atmosphere of tolerance. We can live and tolerate each other in a civilized way. Both sides can visit each other blogs and post healthy comments and criticism.

 Shayad kai utar jai, teray dil main mari baat

Advertisements
  1. janab, stop using the name of Ahmadiyya Islam with those whose opinions you find disagreeable. This is a typical mullah tactics. Anyone who is a threat to their existance is a suspected Qadiani. Unfortunately, you suffer from the same mullah mentality. Those who consider themselves to be leftists and liberals demand certain changes which are reasonable. But when Ahmadis support an opinion, they support it because it is absolutely Islamic and nothing else.

    Blasphemy laws are unislamic, treatment of minorities in Pakistan is unislamic, any civil war, suicide bombing, dissent against the government, rebellion, corruption is all unislamic and Jamaat Ahmadiyya has opposed it for the past 120 years.

    But Ahmadis do not agree with the liberals on how Islam should be practiced and preached. Many liberals that you have named in your post like wudud, numani etc stand against the Ahmadiyya beliefs and idoelogy. Dr. Israr Ahmad is an opponent of Ahmadiyyat , but manji et al. are opponents of Islam. Rushdie and Manji have written books and Ahmadiyya authors have answered them. Please learn your facts before you start using “Ahmediya” as an abuse for all those you don’t like.

    Ahmadiyya Islam adheres to the prescribed code of life taught to us by the Holy Prophet (Saw). We observe five daily prayers, fasting, zakat, hajj and implement Islamic ways on our daily lives. We adhere to the strict instructions of Pardah and shun all kinds of social ills prevalent in society. As Iqbal himself confessed that the “example of pure Islamic life can be observed in Qadian”.. I doubt that any liberals would agree with how Ahmadis live their daily lives.

    wassalam

  2. Kashif you’re doing excellent job. JazaakaAllah. There is no room for comments. you have left nothing that should be added. great job and great kashif.

  3. Reference to Iqbal’s statement that I quoted in my first post.

    ’’پنجاب میں اسلامی سیرت کا ٹھیٹھ نمونہ ا س جماعت کی شکل میں ظاہر ہوا ہے جسے فرقہ قادیانی کہتے ہیں‘‘۔

    ( لیکچرملت بیضا پر عمرانی نظر ۔ ۱۹۱۰؁ء)

  4. Great stuff Kashif. Keep exposing those who use Islam to accomplish the Agenda.

    @Lutf: U know what? everyone can actually “READ” what’s Qadyaniat. Kindly don;t play here. I read a funny stuff in your books tht Jesus(AS) are burried in.. Kashmir? Godforbid..

    *burried*?

  5. Adnan, you rather have Holy Prophet (saw) buried in earth and Jesus (as) resting at the right hand of God. I don’t!

    • don’t play. Do you agree that qadyanis believe that Esa(As) is burried in Kasmir?

      • yes. Jesus (as) is buried in Khanyar District of Srinagar in Kashmir. The tomb is known as that of Yuz Asaf, and faces Jerusalem.

        • وفات مسیح ۔ احادیث اور اقوالِ صحابہ کی روشنی میں

          Close فہرست بند کریں
          وفات مسیح ۔ احادیث اور اقوالِ صحابہ کی روشنی میں
          فہرست مضامین
          Close فہرست بند کریں
          حضرت مسیح علیہ السلام کو قرآن کریم نے متعدد آیات میں وفات یافتہ قرار دیا ہے ۔ اور آنحضرت ﷺ اور آپ ؐ کے صحابہؓ کا یہی عقیدہ تھا ۔ آئےے پہلے چند احادیث اور پھر صحابہؓ کے اقوال ملاحظہ ہوں ۔

          مسیح کی عمر

          حضرت عیسیٰ بن مریم ایک سو بیس سال زندہ رہے ۔ (کنزالعمال جلد ۶ صفحہ ۱۲۰ از علاؤالدین علی المتقی ۔ دائرہ المعارف النظامیہ ۔ حیدرآباد ۱۳۱۲ھ)

          مسیح فوت ہوگئے

          اگر حضرت موسیٰ ؑ اور عیسیٰ ؑ زندہ ہوتے تو انہیں میری پیروی کے بغیرچارہ نہ ہوتا ۔ (الیواقیت والجواہر صفحہ ۲۲ از علامہ عبدالوہاب شعرانی مطبع ازہریہ مصر ، مطبع سوم ، ۱۳۲۱ھ)

          ایک اور روایت میں ہے ۔ اگرحضرت عیسیٰ زندہ ہوتے تو انہیں میری پیروی کے بغیر چارہ نہ ہوتا۔(شرح فقہ اکبر مصری صفحہ ۱۱۲ از حضرت امام علی القاری مطبوعہ ۱۳۷۵ھ)

          آنحضرت ﷺ نے نجران کے عیسائیوں کو توحید کا پیغام دیتے ہوئے فرمایا ۔ ’ کیا تم نہیں جانتے کہ ہمارا رب زندہ ہے کبھی نہیں مرے گامگر حضرت عیسیٰ علیہ السلام وفات پاچکے ہیں ۔ (اسباب النزول صفحہ ۵۳ از حضرت ابوالحسن الواحدی طبع اولیٰ ۱۹۵۹ء مطبع مصطفی البابی مصر)

          فلسطین سے ہجرت

          حضور ﷺ نے فرمایا ۔ ’اللہ تعالیٰ نے حضرت عیسیٰ ؑ کی طرف وحی کی کہ اے عیسیٰ ایک جگہ سے دوسری جگہ کی طرف نقل مکانی کرتا رہ تاکہ کوئی تجھے پہچان کر دکھ نہ دے ‘۔ (کنزالعمال جلد ۲ صفحہ ۳۴)

          ’حضرت عیسیٰ ؑ ہمیشہ سیروسیاحت کیا کرتے تھے اور جہاں شام پڑتی تھی جنگل کی سبزیاں کھاتے اور خالص پانی پیتے تھے‘ ۔ (کنزالعمال جلد ۲ صفحہ ۷۱)

          امت محمدیہ میں سے امام

          آنحضرت ﷺ نے جہاں امت محمدیہ میں مسیح موعود کی خبر دی ہے وہاں ساتھ ہی فرمایا ۔ امامکم منکم تم میں سے تمہارا امام ہوگا ۔ (بخاری کتاب الانبیاء باب نزول عیسیٰ )

          صحیح مسلم کی روایت اس کی مزید وضاحت کرتی ہے ۔ آپ ﷺ نے فرمایا ۔ امکم منکم ۔تمہاری امامت کرے گا اور تم میں سے ہوگا (مسلم کتاب الایمان باب بیان نزول عیسیٰ )

          حضور ﷺ نے فرمایا حضرت موسیٰ نے دعا کی کہ اے رب مجھ کو امت محمدیہ کا نبی بنادے ۔ ارشاد ہوا اس امت کا نبی اسی میں سے ہوگا ۔ عرض کیا تو مجھ کو محمدکی امت میں سے بنادیجئے ۔ ارشاد ہوا کہ تم پہلے ہوگئے وہ پیچھے ہونگے البتہ تم کو اور ان کو دارالجلال یعنی جنت میں جمع کردونگا ۔ (نشر الطیب از اشرف علی تھانوی ۱۳۹۷ھ ادب منزل پاکستان چوک ، کراچی)

          ایک روایت میں ہے کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام نے دعا کی کہ مجھے امت محمدیہ کا امام مہدی بنادے۔ تو اللہ نے فرمایا ۔ اس کا وجود احمد ﷺکے ذریعہ (یعنی اس کی امت میں سے) ہوگا ۔ (کتاب المہدی صفحہ ۱۱۲ از صدرالدین صدر، مطبوعہ تہران ۱۹۶۶ء)

          الگ الگ حلیے

          حضور ﷺ نے مسیح ناصری اور مسیح موعود کے الگ الگ حلیے بھی بیان فرمائے ہیں ۔ حضرت عیسیٰ سرخ رنگ کے اور گھنگھریالے بالوں والے اور چوڑے سینے والے تھے ۔ آنے والا مسیح موعود گندمی رنگ اور سیدھے بالوں والا ہے ۔ (صحیح بخاری کتاب الانبیاء باب و اذکرنی الکتاب مریم)

          آخری خطاب

          حضور ﷺ نے اپنی زندگی کے آخری ایام میں صحابہ رضوان اللہ علیھم سے خطاب کرتے ہوئے فرمایا ۔ ’اے لوگو ! مجھے یہ بات پہنچی ہے کہ تم اپنے نبی کی موت سے خوفزدہ ہو ۔ کیا مجھ سے پہلے مبعوث ہونے والا کوئی نبی بھی ایسا گزرا ہے جو غیر طبعی عمر پاکر ہمیشہ زندہ رہا ہو کہ میں ہمیشہ زندہ رہ سکوں گا ۔ یاد رکھو کہ میں اپنے رب سے ملنے والا ہوں ۔‘ (المواہب الدنیہ جلد ۲ صفحہ ۳۶۸ از احمد بن ابی بکر خطیب قسطلانی شرفیہ ۱۹۰۸ء)

          صحابہ کا پہلا اجماع

          یہی وجہ ہے کہ آنحضرت ﷺ کی وفات کے بعد صحابہ کرام کا سب سے پہلا اجماع حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی وفات پر ہوا ۔ کئی صحابہ نے شدت محبت اور غم کی وجہ سے حضور ﷺ کو وفات یافتہ تسلیم کرنے سے انکار کردیا ۔ تب حضرت ابوبکر ؓ تشریف لائے اور سورۃ آل عمران کی آیت نمبر ۱۴۵ تلاوت فرمائی ۔

          ما محمد الا رسول قد خلت من قبلہ الرسل

          یعنی محمد ؐ صرف ایک رسول ہیں۔ اور ان سے پہلے سب رسول فوت ہوچکے ہیں ۔ یہ آیت سن کر صحابہ نے حضور ﷺ کو فوت شدہ مان لیا ۔ اگر کوئی ایک صحابی بھی حضرت عیسیٰ ؑ کو زندہ سمجھتا تو وہ کہہ سکتا تھا کہ اگر حضرت عیسیٰ رسول ہو کر اب تک زندہ ہیں تو آنحضرت ﷺ کیونکر فوت ہوسکتے ہیں ۔ (بخاری کتاب المغازی باب مرض النبی )

          اجماع صحابہ کی جھلک بحرین میں

          فرقہ اہلحدیث کے بانی محمد بن عبدالوہاب تحریر فرماتے ہیں ۔ حضور ﷺ کی وفات کے بعد بحرین کے کئی لوگ اس بات سے مرتد ہوگئے کہ اگر حضور ﷺ رسول ہوتے تو ہرگز فوت نہ ہوتے ۔ تب صحابی رسول حضرت جارود بن معلی رضی اللہ عنہ نے ان سے خطاب کیا اور فرمایا آنحضرت ﷺ اللہ کے بندے اور رسول ہیں ۔ آپ ویسے ہی زندہ رہے جیسے حضرت موسیٰ ؑ اور عیسیٰ ؑ زندہ رہے اور اسی طرح انتقال کرگئے جیسے حضرت موسیٰ ؑ اور حضرت عیسیٰ ؑ نے وفات پائی ۔ یہ سن کر سب لوگ اسلام میں واپس آگئے ۔ ( مختصر سیرۃ الرسول ؐ صفحہ ۱۸۷ از محمدبن عبدالوہاب دارلعربیہ بیروت لبنان)

          اجماع صحابہ کی جھلک کوفہ میں

          حضرت علی رضی اللہ عنہ کی وفات پر حضرت امام حسن رضی اللہ عنہ نے خطبہ دیتے ہوئے فرمایا ۔ ’حضرت علی رضی اللہ عنہ اس رات فوت ہوئے جس رات حضرت عیسیٰ بن مریم کی روح اٹھائی گئی تھی ۔ یعنی ۲۷ رمضان کی رات ۔ (طبقات ابن سعد ، جلد ۳ صفحہ ۳۹ دارالبیروت للطباعہ والنشر)

          حضرت ابن عباس کا عقیدہ

          حضرت ابن عباس رضی اللّٰہ عنہ آیت انی متوفیک ۔۔ کا ترجمہ کرتے ہوئے فرماتے ہیں ۔ ممیتک ۔یعنی میں تجھے موت دینے والا ہوں ۔ (بخاری کتاب التفسیر سورۃ المائدہ باب ماجعل اللہ من بحیرۃ۔۔۔)

          حیات مسیح کا عقیدہ

          دوسری طرف حیات مسیح کے عقیدہ کی قرآن و حدیث سے کوئی تائید نہیں ہوتی ۔ حضرت بانی جماعت احمدیہ نے چیلنج دیا ہے کہ کسی ایک حدیث میں بھی حضرت مسیح کے مادی جسم سمیت آسمان پر جانے کا کوئی ذکر نہیں ۔ پس آنحضور ﷺ کی طرف منسوب ہونے والے ہر شخص کا وہی عقیدہ ہونا چاہیے جو حضور ﷺ کا تھا اور آپ ﷺ کے صحابہ رضوان اللہ علیھم کا تھا کیونکہ اسی میں فلاح اور نجات ہے ۔

          • بانی سلسلہ احمدیہ کا چیلنج

            ’اگر پوچھا جائے کہ اس بات کا ثبوت کیا ہے کہ حضرت عیسیٰ ؑ اپنے جسم عنصری کے ساتھ آسمان پر چڑھ گئے تھے تو نہ کوئی آیت پیش کرسکتے ہیں اور نہ کوئی حدیث دکھلاسکتے ہیں صرف نزول کے لفظ کے ساتھ اپنی طرف سے آسمان کا لفظ ملا کرعوام کو دھوکا دیتے ہیں مگر یاد رہے کہ کسی حدیث مرفوع متصل میں آسمان کا لفظ پایا نہیں جاتا اور نزول کا لفظ محاورات عرب میں مسافر کیلئے آتا ہے اور نزیل مسافرکو کہتے ہیں ۔ چنانچہ ہمارے ملک کا بھی یہی محاورہ ہے کہ ادب کے طور پر کسی وارد شہر کو پوچھا کرتے ہیں کہ آپ کہاں اترے ہیں اور اس بول چال میں کوئی بھی یہ خیال نہیں کرتا کہ یہ شخص آسمان سے اترا ہے اگر اسلام کے تمام فرقوں کی حدیث کی کتابیں تلاش کرو توصحیح حدیث تو کیا وضعی حدیث بھی ایسی نہیں پاؤ گے جس میں یہ لکھا ہو کہ حضرت عیسیٰ ؑ جسم عنصری کے ساتھ آسمان پر چلے گئے تھے اور پھر کسی زمانہ میں زمین کی طرف واپس آئیں گے ۔ اگر کوئی حدیث پیش کرے تو ہم ایسے شخص کو بیس ہزار روپیہ تک تاوان دے سکتے ہیں اور توبہ کرنا اور تمام اپنی کتابوں کا جلا دینا اس کے علاوہ ہوگا۔‘ (کتاب البریہ روحانی خزائن جلد ۱۳ صفحہ ۲۲۵ حاشیہ)

        • Lutf, Quran itself replies for liars like your liar liar prophet and his followers.


          And for claiming that they killed the Messiah, Jesus, son of Mary, the messenger of GOD. In fact, they never killed him, they never crucified him – they were made to think that they did. All factions who are disputing in this matter are full of doubt concerning this issue. They possess no knowledge; they only conjecture. For certain, they never killed him. (Quran 4:157)

          Allah o Akbar. No wonder why Mirza Qadyani suffered a smelly death due to diarrhea

          No wonder why you guys are non-Muslims and can never be accepted as Muslims. GO and fix your bascis then whine about reembering your cult as a Muslim Sect. Allah’s Quran knew how some fools later would try to mislead others thus Quran itself clarified everything.I know you would make silly attempts to deny it but i am not even least bothered to respond you.

          Have fun and keep crying

          • bring on the cheap, vulgar and slanderour remarks. This disease is typical of the rejectors of truth.

  6. Fair enough!

  7. Kashif, nicely written. and this article has also been published at http://www.pakspectator.com

  8. again a master piece…especially this para:

    “They have no understanding of common Pakistanis’ problems. They always want to raise non-issues for their own vested interests and want to malign Pakistan’s image internationally.
    What do you think what are the real issues of common Pakistanis, Blasphemy laws? Hudood Ordinance? Religious extremism?”

    brother kashif !
    may Allah(swt) give you the strength and reward for the jihad you started. keep exposing…jazakAllah kahirun.

    .

  9. While I agree largely agree with the author, I was appalled to read the first comment from one ‘Mr. Lutf” defending the Ahmadi religion.

    Lets be very clear on one thing – Ahmadi’s are not Muslims, nor is Ahmadi a muslim sect by any stretch of definition. ‘Mr. Lutf” is trying to defend his religion by mentioning their lifestyle.

    I personally know very pious Christians, Jews and Hindus; but that is not enough argument to justify merits of their religion. ‘Mr. Lutf’ it is the strategy adopted by the religion and the people practicing the religion which matters. In case of Ahmadi religion it is very much anti-Islam and anti-Pakistan.

    May Allah guide all of us to the right path – the path of his Last and True Prophet Hazrat Muhammad Mustafa – Sal Allah u wasallam, Fida abi wa ummi.

    Naveed

    • Naveed, if you follow the 2nd amendment in Pakistani constitution as your holy book then ofcourse you have a right to force me to call myself a not-muslim. But if you claim to follow the Quran, then you have no right to force your opinion on anyone. You are free to call me whatever you like, but I should not be legally bound to call me whatever you like.

      See, you claim to follow the path of Holy Prophet (saw), but it seems to be mere lip service. If you followed him truly, you would have accepted anyone who consider themselves to be muslims as muslims.

  10. You say Ahmadi muslims are not muslims…

    How about this.

    *۔۔۔ایک فرقہ کے عقائد:

    ایک فرقہ کے عقائد ملاحظہ ہوں:

    ۱۔۔۔’’ سرور کائنات علیہ السلام کو پکارنا، شفیع المذنبین سمجھنا، ختم پڑھنا، صورت مبارکہ اور قبر شریف کا تصور کرنا، حاجت روا، صاحبِ تصرف ، مختار جملہ صفات کو باذن اللہ تعالیٰ باعطاء الٰہی ماننا بھی شرک ہے اور شرک بھی ابوجہل جیسا‘‘ ۔(محمد عبدالوہاب نجدی ، کتاب التوحید عربی مطبوعہ ریاض ، ملخصاً)

    ۲۔۔۔’’شافع محشر علیہ التحیۃ والثناء سے استغاثہ طلب کرنا شیطانی فعل ہے اور شرک ہے‘‘۔ (محمد بن عبدالوہاب ، نجدی ، کشف الشبہات عربی ، مطبوعہ ریاض، صفحہ ۵۷)

    ۳۔۔۔ ’’رسول معظم ﷺ کی تعظیم کرنا شرک ہے‘‘۔ (شوکانی،قاضی ، الدر النفیذ ، صفحہ۳۶ و ۵۱)

    ۴۔۔۔ ’’نور مجسم ﷺ مر کر مٹی میں مل گئے‘‘۔ (اسماعیل دہلوی،مولوی۔ تقویۃالایمان مطبوعہ میر محمد کتب خانہ کراچی، صفحہ ۵۷)

    ۵۔۔۔ ’’الصلوٰۃ والسلام علیک یا رسول اللہ پڑھنے والا بدعت اورگنہگار ہے‘‘ ۔ (اخبار اہل حدیث امرتسر ،۸اکتوبر ۱۹۱۵ء صفحہ ۱۲)

    ۶۔۔۔ ’’ہر وہ شخص جو شہر اجمیر یا سالار مسعود کی قبر یا کسی ایسی ہی دوسری جگہ (سرہند، پاکپٹن، بغداد، گنج بخش وغیرہ) حاجت طلب کرنے جاتا ہے وہ ایسے شدید گناہ کا مرتکب ہوتا ہے جو قتل اور زنا سے بھی بڑا ہے۔ او ر یہ شخص اپنے جرم میں ویسا ہی ہے جیسے کوئی خود بنائی ہوئی چیز کی عبادت کرتا یا لات و منات سے دعائیں مانگتا ہے‘‘۔(ہفت روزہ اہل حدیث لاہور۔ ۱۶؍جولائی ۱۹۷۶ء صفحہ اول)

    ۷۔۔۔’’ (نمازی کو) شیخ یا ان ہی جیسے اور بزرگوں کی طرف خواہ جناب رسالت ماب ہی ہوں ، اپنی ہمت (خیال) کو لگا دینا اپنے بیل اور گدھے کی صورت میں مستغرق ہونے سے زیادہ برا ہے‘‘۔(اسماعیل دہلوی، مولوی۔صراط مستقیم اردو مطبوعہ اسلامی اکادمی، لاہور، صفحہ ۱۶۹)

    ۸۔۔۔ ’’آقائے نامدار ﷺ کے مزارشریف کی تعظیم کرنا کفر و شرک ہے‘‘۔(الدار النفید صفحہ۵۹)

    ۹۔۔۔ ’’ صاحب لولاک ﷺ کی قبر مبارک بُت ہے‘‘۔ (ایضاً صفحہ ۱۷، ۵۹ ، ۶۲)

    ۱۰۔۔۔ ’’ جس کا نام محمد یا علی ہے وہ کسی چیز کا مختار نہیں‘‘۔(تقویۃ الایمان، صفحہ ۴۳)

    ۱۱۔۔۔ قادری، نقشبندی، چشتی کہلانا بدعات کفریہ ہیں۔ (اسماعیل دہلوی، مولوی۔ تذکیر الاخوان مطبوعہ میر محمد کتب خانہ کراچی، صفحہ ۶۴)

    ۱۲۔۔۔’’اللہ چاہے تو کروڑوں محمد(ﷺ) جیسے پیدا کر سکتا ہے‘‘۔(تقویۃ الایمان صفحہ ۳۶)

    ۱۳۔۔۔ ’’ جو لوگ محجوب،یا ابن عباسؓ یا انبیاء ؑ یا ملائکہ یا اولیاء کو اپنے اور خدا کے درمیان واسطہ جانتے ہیں تا کہ یہ ان کے حق میں سفارش کریں ۔۔۔ پس ایسا عقیدہ رکھنے والا مشرک کافر ہے۔ اس کا خون روا ہے اور مال مباح ہے اگرچہ ’’اشھَدُاَن لا اِلٰہَ اِلاّ اللّٰہَُ و اَنّ محمد رسول اللہ ‘‘ پڑھے اور نماز ، روزہ پر بھی عامل ہو اور خود کو مسلمان کہے پھر بھی اس کے اعمال باطل ہوئے‘‘۔ (سلیمان بن عمان، نجدی، الھدیۃ السنیتہ اردو ترجمہ اسماعیل غزنوی ،مولانا۔ تحفۃ وہابیہ مطبوعہ امرتسر ۱۹۲۷ء صفحہ ۸۸)

    *۔۔۔ایک دوسرے فرقے کے عقائد:

    ان سے ملتے جلتے ایک دوسرے فرقے کے عقائد یہ ہیں:

    ۱۔۔۔ ’’ پھر یہ کہ آپ کی ذات مقدسہ پرعلم غیب کا حکم کیا جانا اگر بقول زید صحیح ہو تو دریافت طلب یہ امر ہے کہ اس غیب سے مراد بعض ہے یا کل غیب۔ اگر بعض علوم غیبیہ مراد ہیں تو اس میں حضورؐ کی ہی کیا تخصیص ہے۔ ایسا علم غیب تو زید و عمر بلکہ ہر صبی و مجنون بلکہ جمیع حیوانات وبہائم کے لئے بھی حاصل ہے‘‘۔ (از اشرف علی تھانوی،مولانا۔ حفظ الایمان مع بسط البنان مطبوعہ کتب خانہ اعزازیہ، دیوبند، صفحہ ۸)

    ۲۔۔۔’’ اکثر لوگ پیروں اور پیغمبروں کو اور اماموں کو اور شہیدوں کو اور فرشتوں کو اور پریوں کو مشکل کے وقت پکارتے ہیں اور ان سے مرادیں مانگتے ہیں ۔۔۔ سووہ شرک میں گرفتار ہیں‘‘۔( تقویۃ الایمان صفحہ ۱۹)

    ۳۔۔۔ ’’انسان آپس میں سب بھائی ہیں۔ جو بڑا بزرگ ہو ،وہ بڑا بھائی ہے تو اس کی بڑ ے بھائی کی سی تعظیم کیجئے ۔اولیاء و انبیاء امام اور امام زادے ، پیر اورشہید یعنی جتنے اللہ کے مقرب بندے ہیں وہ سب انسان ہی ہیں او ر بندے عاجز اور ہمارے بھائی‘‘۔(ایضاً صفحہ ۵۶)

    ۴۔۔۔کوئی کسی کے لئے حاجت روا اور مشکل کشا و دست گیر کس طرح ہو سکتاہے۔ ایسے عقائد والے لوگ پکے کافر ہیں۔ ان کا کوئی نکاح نہیں ۔ ایسے عقائد باطلہ پر مطلع ہو کر جو انہیں کافر مشرک نہ کہے وہ بھی ویسا ہی کافر ہے‘‘۔ (غلام اللہ خان ، مولوی۔ جواہرالقرآن مطبوعہ مکتبہ رشیدیہ راولپنڈی ، صفحہ ۱۴۷ ملخصاً)

    ۵۔۔۔ ’’ شیطان و ملک الموت کو یہ وسعت (علم محیط زمین) نص سے ثابت ہوئی۔ فخر عالم کی وسعت علم کی کون سی نص قطعی ہے کہ جس سے تمام نصوص کو رد کر کے ایک شرک ثابت کرتا ہے‘‘۔(خلیل اینٹھوی، مولانا۔ البراہین القاطعہ علی ظلام الانوارالساطعہ مطبوعہ کتب خانہ امدادیہ دیوبند ۱۹۶۲ء صفحہ ۵۵)

    ۶۔۔۔ ’’انبیاء اپنی امت سے (اگر) ممتاز ہوتے ہیں تو علم ہی میں ممتازہوتے ہیں، باقی رہاعمل اس میں بسااوقات بظاہر امتی مساوی ہو جاتے ہیں بلکہ بڑھ جاتے ہیں‘‘۔(محمدقاسم نانوتوی،بانی مدرسہ دیوبند، تحذیر الناس ، مطبوعہ کتب خانہ رحیمیہ، صفحہ ۵)

    ۷۔۔۔’’نبی کو جو حاضر و ناظر کہے بلاشک شرع اس کوکافر کہے۔(جواہر القرآن صفحہ ۶)

    ۸۔۔۔ ’’یہ ہر روز اعادہ ولادت (حضورﷺ) کا تو مثل ہنود کے کہ سانگ کنہیا کی ولادت کاہر سال کرتے ہیں‘‘۔ (البراھین القاطعہ علی ظلام الانوار الساطعہ صفحہ ۱۵۲)

    ۹۔۔۔(الف):کذب داخل تحت قدرت باری تعالیٰ جل و علیٰ ہے کیو ں نہ ہو۔ وھو علی کل شئی قدیر (رشید احمد گنگوہی ، مولوی۔ فتاویٰ رشیدیہ، مطبوعہ سعید اینڈ سنز کراچی صفحہ ۹۲)

    ۔۔۔(ب): ’’ لا نسلم کہ کذب مذکور محال بمعنی مسطور باشد۔‘‘ (ترجمہ فارسی مطبوعہ فاروقی کتب خانہ ملتان صفحہ ۱۷) ’’ و الا لازم آید کہ قدرت انسانی ا زید از قدرت ربانی باشد‘‘۔ ترجمہ : اگر خدا جھوٹ نہ بول سکے تو لازم آئے کہ آدمی کی قدرت اس سے بڑھ جائے گی۔ (ایضاً صفحہ ۱۷)

    ۔۔۔(ج):’’امکان کذب (باری تعالیٰ) کا مسئلہ تو اب جدید کسی نے نہیں نکالا بلکہ قدماء میں اختلاف ہوئے ہیں‘‘۔ (البراہین القاطعہ علی ظلام الانوار الساطعہ صفحہ ۶)

    ۱۰۔۔۔ ’’ یہ عقیدہ رکھنا کہ آپ ؐ کو علم الغیب تھا صریح شرک ہے‘‘۔ (فتاویٰ رشیدیہ صفحہ ۹۶)

    ’’علم غیب خاصہ حق تعالیٰ ہے۔اس لفظ کو کسی تاویل سے دوسرے پر اطلاق کرنا ابہام شرک سے خالی نہیں‘‘۔(ایضاً صفحہ۹۳)

    ۱۱۔۔۔(الف):’’ اگر بالفرض بعد زمانہ نبوی صلعم بھی کوئی نبی پیدا ہو تو پھر بھی خاتمیت محمدی میں کچھ فرق نہ آئے گا۔ (تحذیرالناس مطبوعہ دارالاشاعت ، کراچی صفحہ۳۴)

    ۔۔۔(ب):’’عوام کے خیال میں تو رسول اللہ صلعم کا خاتم ہونا بایں معنی ہے کہ آپ کا زمانہ انبیاء سابق کے زمانے کے بعد اور آپ سب میں آخر (آخری) نبی ہیں مگر اہل فہم پر روشن ہوگاکہ تقدیم یاتاخیر زمانہ (زمانی) میں بالذات کچھ فضیلت نہیں۔ پھر مقام مدح میں وَلٰکِنْ رّسُولَ اللّٰہ وَ خَاتَمَ النّبِیّینفرمانا اس صورت میں کیونکر صحیح ہو سکتا ہے ‘‘۔ (تحذیرالناس مطبوعہ کتب خانہ امدادیہ ، دیوبند، صفحہ ۳)

    ۱۲۔۔۔ (الف): دروغ صریح بھی کئی طرح ہوتا ہے جن میں سے ہر ایک کا حکم یکساں نہیں، ہرقسم سے نبی کو معصوم ہونا ضرور (ضروری) نہیں۔ (محمد قاسم نانوتوی ، مولانا۔ تصفیۃ العقائد مطبوعہ دارالاشاعت کراچی ۱۹۷۶ء ص ۲۹)

    ۔۔۔(ب):’’بالجملہ علی العموم کذب کو منافی شان نبوت بایں معنی سمجھنا کہ یہ معصیت ہے اور انبیاء علیھم السلام معاصی سے معصوم ہیں خالی غلطی سے نہیں‘‘۔ (ایضاً صفحہ ۳۱،۳۲)

    ۱۳۔۔۔اور انسان خود مختار ہے ۔اچھے کام کریں یانہ کریں اور اللہ کو پہلے اس سے کوئی بھی علم نہیں کہ کیا کریں گے بلکہ اللہ کو ان کے کرنے کے بعد معلوم ہوگا‘‘۔(حسین علی ، مولوی۔ بلغۃ الحیران فی ربط آیات الفرقان مطبوعہ حمایت اسلام پریس لاہور۔ ص ۱۵۷، ۱۵۸)

    *۔۔۔ انقلابات ہیں زمانے کے:

    (دونوں مذکورہ فرقوں کا رشتہ پیوند نوٹ کریں)

    حضرات علمائے دیوبند نے اپنی کتب میں باربار عقائد نجدیہ وہابیہ کی زبردست تردید کی ہے ۔مثلاً:

    ۱۔۔۔ مولانا خلیل احمد اینٹھوی دیوبندی (۱۸۵۲ء۔ ۱۹۲۷ء) لکھتے ہیں:

    ’’ ان کا ( محمد بن عبدالوہاب نجدی او ر اس کے تابعین) عقیدہ یہ ہے کہ بس وہ ہی مسلمان ہیں اور جو ان کے عقیدہ کے خلاف ہو وہ مشرک ہے اوراس بناء پر انہوں نے اہل سنت کا قتل مباح سمجھ رکھاتھا‘‘۔(المسند علی المفند، مطبوعہ کراچی صفحہ ۲۲)

    (نوٹ)۔۔۔اس کتاب پر شیخ الہند و شیخ الدیوبند مولانامحمود حسن(۱۸۵۱ء ۔ ۱۹۲۰ء) حکیم الامت دیوبند مولانا اشرف علی صاحب تھانوی (۱۸۶۳ء ۔ ۱۹۳۴ء) مولانا المفتی کفایت اللہ دہلوی (۱۸۷۵ء۔ ۱۹۵۳ء ) جیسے اکابر کے تصدیقی دستخط موجود ہیں۔

    ۲۔۔۔ مولانا محمد انور شاہ صاحب کشمیری (۱۸۷۵ء۔ ۱۹۳۴ء) سابق شیخ الحدیث دیوبند لکھتے ہیں کہ ’’اما محمد بن عبدالوہاب النجدی فانہ کان رجلا بلیدا قلیل العلم فکان یتسارع الی الحکم بالکفر‘‘ ۔(فیض الباری مطبوعہ قاہرہ ۱۹۳۸ء)

    ترجمہ:’’یعنی محمد بن عبدالوہاب نجدی ایک کم علم اور کم فہم انسان تھا۔ اس لئے کفر کا حکم لگانے میں اسے باک نہ تھا‘‘۔

    ۳۔۔۔مولانا حسین احمد مدنی (۱۸۷۹ء۔ ۱۹۵۷ء) شیخ الحدیث دیوبند رقم طراز ہیں:

    (الف):’’ محمد بن عبدالوہاب کا عقیدہ تھا کہ جملہ اہل عالم و تمام مسلمانان دیار مشرک و کافر ہیں اور ان سے قتل و قتال کرنا اور ان کے اموال کو ان سے چھین لینا حلال اور جائز بلکہ واجب ہے۔ (الشہاب الثاقب علی المسترق الکاذب مطبوعہ کتب خانہ رحیمیہ، دیوبند صفحہ ۲۳)

    ۔۔۔(ب)’’زیارت رسول مقبول ﷺ وحضوری آستانہ شریفہ و ملاحظہ روضہ مطہرہ کو یہ طائفہ بدعت حرام وغیرہ لکھتا ہے۔ (ایضاً صفحہ ۴۵)

    ۔۔۔(ج):’’ شان نبوت و حضرت رسالت علی صاحبہا الصلوٰۃ والسلا م میں وہابیہ نہایت گستاخی کے کلمات استعمال کرتے ہیں اور اپنے آپ کو مماثل ذات سرور کائنات خیال کرتے ہیں۔۔۔ توسل دعا میں آپ کی ذات پاک سے بعد وفات ناجائز کہتے ہیں۔ ان کے بڑوں کامقولہ ہے کہ معاذاللہ معاذاللہ ۔ نقل کفر کفر نباشد۔ کہ ہمارے ہاتھ کی لاٹھی ذات سرور کائنات علیہ الصلوٰۃ والسلام سے ہم کوزیادہ نفع دینے والی ہے، ہم اس سے کتےّ کو بھی دفع کر سکتے ہیں ، اور ذات فخر عالم ﷺ سے تو یہ بھی نہیں کر سکتے‘‘۔ (ایضاً صفحہ ۴۷)

    ۔۔۔(د):’’وہابیہ کثرت صلوٰۃ و سلام و درود برخیرالانام علیہ السلام اور قرات دلائل الخیرات و قصیدہ بردہ و قصیدہ ہمزیہ وغیرہ۔۔۔ کو سخت قبیح ومکروہ جانتے ہیں‘‘(ایضاً صفحہ۶۶)

    ’’الحاصل وہ (محمد بن عبدالوہاب نجدی) ایک ظالم و باغی خو نخوار فاسق شخص تھا‘‘۔(ایضاً صفحہ ۴۲)

    نوٹ:۔ مولانا حسین احمد مدنی صاحب کی وفات پر اکابر علماء اہل حدیث نے خراج عقیدت پیش کیا ۔ مولانا سید محمد داؤد غزنوی، مولانا محمد اسماعیل سلفی گوجرانوالہ او ر مولانا محمد صدیق لائل پوری نے غائبانہ نمازجنازہ ادا کی اور تعزیت کی قراردادیں پاس کیں۔

    مولانا حسین احمد مدنی کتاب ’’ الشہاب الثاقب علی المسترق الکاذب‘‘ کے مندرجہ ذیل اقتباسات وہابیہ نجدیہ کے متعلق سواد اعظم اہل سنت کے نقطہ نگاہ کو بالکل واضح ، غیرمبہم اور صاف لفظوں میں پیش کرتے ہیں:۔

    *۔۔۔’’وہابیہ کسی خاص امام کی تقلید کو شرک فی الرسالۃ جانتے ہیں اور ائمہ اربعہ اور ان کے مقلدین کی شان میں الفاظ واہیہ ، خبیثہ استعمال کرتے ہیں اوراس کی وجہ سے مسائل میں وہ گروہ اہل سنت والجماعت کے مخالف ہو گئے ۔ چنانچہ غیر مقلدین ہند اسی طائفہ شنیعہ کے پیرو ہیں۔ وہابیہ نجد عرب اگرچہ بوقت اظہار دعویٰ حنبلی ہونے کا اقرار کرتے ہیں لیکن عمل درآمد کا ہرگز جملہ مسائل سے امام احمد بن حنبل رحمۃ اللہ علیہ کے مذہب پر نہیں ہے۔ بلکہ وہ بھی اپنے فہم کے مطابق جس حدیث کو مخالف فقہ حنابلہ خیال کرتے ہیں اس کی وجہ سے فقہ کو چھوڑ دیتے ہیں، ان کابھی مثل غیرمقلدین کے اکابر امت کی شان میں الفاظ گستاخانہ بے ادبانہ استعمال کرنا معمول بہ ہے‘‘۔(الشہاب الثاقب علی المسترق الکاذب صفحہ۶۲،۶۳)

    *۔۔۔’’ان (وہابیہ نجدیہ) کا اعتقاد یہ ہے کہ انبیاء علیہم السلام کے واسطے حیات فی القبور ثابت نہیں بلکہ وہ بھی مثل دیگر مسلمین کے متصف بالحیوۃ البرزخیہ اسی مرتبہ سے ہیں۔ پس جو حال دیگر مومنین کا ہے وہ ہی ان کا ہوگا۔ یہ جملہ عقائد ان کے ان لوگوں پر بخوبی ظاہر وباہر ہیں جنہوں نے دیار نجد عرب کا سفر کیاہویا حرمین شریفین میں رہ کر ان لوگوں سے ملاقات کی ہو یاکسی طرح سے ان کے عقائد پر مطلع ہواہو۔ یہ لوگ جب مسجد شریف نبوی میں آتے ہیں تو نماز پڑھ کر نکل جاتے ہیں اور روضہ اقدس پر حاضر ہو کر صلوٰۃ وسلام و دعا وغیرہ پڑھنا مکروہ و بدعت شمارکرتے ہیں۔ ان ہی ا فعال خبیثہ و اقوال واہیہ کی وجہ سے اہل عرب کو ان سے نفرت بے شمار ہے‘‘۔(ایضاً صفحہ ۶۵، ۶۶)

    لطف کی بات یہ ہے کہ صاحب شہاب ثاقب عقائد نجدیہ وہابیہ کی نہ صرف شدت و غلظت کے ساتھ تردید کرتے ہیں بلکہ مثبت انداز میں ان کے عقائد مردودہ کے جواب میں ذات رسالت مآب ﷺ ، اولیائے کرام کی بابت اپنے عقائد، سواد اعظم اہل سنت والجماعت کے مطابق پیش کرتے ہیں۔

    (۱)۔۔۔حضور ﷺ کی حیات دنیا تک محدود نہیں بلکہ ہرحال میں زندہ و پائندہ ہیں ۔ (الشہاب الثاقب علی المسترق الکاذب صفحہ ۴۵)

    (۲)۔۔۔ دربار رسالت ؐ میں حاضری کی نیت سے سفر کرنا جائز ہے اورہمارے اکابر نے اس کے لئے سفر کیا ہے۔(ایضاً صفحہ ۴۶)

    (۳)۔۔۔ہم توسل بالنبی ﷺ کے قائل ہیں (ایضاً صفحہ ۵۷)

    (۴)۔۔۔ہم اشغال باطنیہ کے قائل وعامل ہیں۔(ایضاً صفحہ ۶۰)

    (۵)۔۔۔ذکر رسالت مآب ﷺ بلکہ اولیاء اللہ کے ذکر کو بھی ہم مستوجب برکت سمجھتے ہیں۔(ایضاً صفحہ ۶۷)

    (۶)۔۔۔ہم ہر قسم کے درود کو جائز سمجھتے ہیں۔(ایضاً صفحہ ۶۶)

    (۷)۔۔۔مسجد نبوی ؐ یا کسی اور مقام پر یارسول اللہ کہنا بھی ہمارے نزدیک جائز ہے۔(ایضاً صفحہ ۶۵)

    *۔۔۔ علی ہذالقیاس تبلیغی جماعت نے اپنی مشہور کتاب ’’تبلیغی نصاب‘‘ صفحہ ۷۸۹ پر یا رسول اللہ اور یا محمد کے ذکر کو باعث خیر و برکت بتایاہے۔ نیز جماعت مودودیہ کے بانی نے حج کے انتظامات اور دیگر رسومات کی ادائیگی میں حکومت نجدیہ پرشدید تنقید کی ہے۔

    مگرزمانے کے انقلابات دیکھئے کہ ’’پیٹروڈالر‘‘ کی چکاچوند نے ان تمام عقائد و نظریات کو نہ صرف نسیاً منسیاً کر دیا ہے بلکہ وہ حکومت سعودیہ نجدیہ کی تعریف میں رطب اللسان ہیں۔ نواب محمد صدیق حسن خان (۱۲۴۸ھ۔ ۱۳۰۷ھ) اورمولانا ثناء اللہ صاحب امرتسری (م۔ ۱۹۴۸ء) نے طائفہ نجدیہ وہابیہ سے نہ صرف بیزاری و لاتعلقی کا اظہار کیا ہے بلکہ محمد بن عبدالوہاب نجدی کی شخصیت اور تعلیمات کو درخور اعتناء بھی نہیں سمجھا اور ایک لحاظ سے اسے مسترد کر دیا ہے۔

    چنانچہ انہوں نے سرکار انگلشیہ سے پورے شدومد کے ساتھ التجاء کی تھی کہ بجائے فرقہ وہابیہ کے ان کواہل حدیث لکھا جائے ۔ پس بموجب چٹھی گورنمنٹ انڈیا بنام پنجاب گورنمنٹ نمبر ۱۷۵۸ مورخہ ۳؍ دسمبر ۱۸۸۹ء سرکاری دفتروں میں انہیں وہابی فرقہ کی بجائے ’’اہل حدیث‘‘ لکھنے کا حکم جاری کیا گیا اور وہابی لکھنے کی قانوناً ممانعت کر دی گئی۔

    *۔۔۔انقلاب روزگارملاحظہ فرمائیے کہ یہ لوگ آج محمد بن عبدالوہاب کو اپنا ہیرو قرار دے رہے ہیں ۔ کتاب التوحید وغیرہ کی اشاعت میں سرگرم

    ہیں ۔ اس کا ترجمہ پشتو زبان میں کروا کر مہاجرین افغانستان میں تقسیم کر رہے ہیں اوراس کے نام سے کئی ادارے قائم کر رکھے ہیں۔ اس باب میں

    اہل حدیث،دیوبندی اورمودودیہ ایک دوسرے سے بڑھ چڑھ کر حکومت سعودیہ نجدیہ کی خوشنودی مزاج کے لئے مستعد ہیں۔ اس کے ثبوت میں چند حوالے درج ذیل ہیں۔

    *۔۔۔’’ جو کتاب مَیں( صدیق حسن خان) نے ۱۲۹۲ہجری میں لکھی ہے اور اس کانام ہدایۃ السائل ہے۔ اس ۔۔۔ میں وہابیہ کے حال میں لکھا ہے کہ ان کی کیفیت کچھ نہ پوچھو ۔۔۔ سراسر نادانی اورحماقت میں گرفتار ہیں۔ ‘‘۔ (محمدصدیق حسن خان،ترجمان وہابیہ مطبوعہ لاہور ۱۳۱۲ھ صفحہ ۲۱)

    *۔۔۔پھرآگے چل کر نواب صاحب موصوف ’’ترجمان وہابیہ‘‘ میں وہابی مذہب کی تاریخ بیان کرتے ہوئے لکھتے ہیں کہ:

    ’’ مسلمان ہند میں کوئی مسلمان وہابی مذہب کا نہیں ہے اس لئے کہ جو کارروائی ان لوگوں نے ملک عرب میں عموماً اور مکّہ معظمہ اورمدینہ منورہ میں خصوصاً کی اور جو تکلیف ان کے ہاتھوں سے ساکنان حجاز و حرمین شریفین کوپہنچی وہ معاملہ کسی مسلمان ہند وغیرہ کے ساتھ اہل مکہ و مدینہ کے نہیں کیا۔ اوراس طرح کی جرأت کسی شخص سے نہیں ہو سکتی اور یہ بھی معلوم ہوا کہ یہ فتنہ وہابیوں کا ۱۸۱۸ء میں بالکل خاموش ہو گیا۔ اس کے بعد کسی شخص امیر وغریب نے اس ملک میں بھی پھر سر نہ اٹھایا‘‘۔(ایضاً صفحہ۴۰)

    ’’۔۔۔ مشہور ہے کہ اہل حدیث کے مذہب کا بانی عبدالوہاب نجدی ہوا ہے مگر حاشا و کلا ہمیں اس سے کوئی بھی نسبت نہیں ۔۔۔ آج تک کسی نے نہ دیکھا ہوگا کہ اہل حدیث نے کبھی بھولے سے بھی عبدالوہاب نجدی کے اقوال کو سنداً پیش کیا ہو کہ ھذا قول امامنا عبدالوھاب و بہ ناخذ (یہ قول ہمارے امام عبدالوہاب کا ہے اور اس سے ہم اخذ کرتے ہیں) ۔(ثناء اللہ امرتسری، مولانا۔ اہل حدیث کا مذہب مطبوعہ لاہور ۱۹۷۵ء صفحہ ۱۰۸، ۱۰۹)

    *۔۔۔ گردش دوراں سے اب ان کو ’’فیصل ایوارڈ ‘‘ ملتے ہیں اور حکومت سعودیہ نجدیہ کے زیر اہتمام مساجد کی عالمی تنظیم کے معتبر رکن بنے ہوئے ہیں۔ نجدیت پرستی میں یہاں تک غلو کیاہے کہ اہل سنت والجماعت کی دینی سرگرمیوں کے خلاف متملقانہ جاسوسی کے فرائض سرانجام دے رہے ہیں۔

    ہمیں ان کی اقتدار نجدیت کے سامنے جبہ سائی اور مدح سرائی سے کوئی غرض نہیں ۔ سوال یہ ہے کہ آج جب یہ لوگ اتحاد بین المسلمین کے داعی بن کر میدان میں نکلے ہوئے ہیں تو کیا انہیں اس امرکا احساس نہیں کہ ذات رسالت ماب ؐ ، صحابہ کرامؓ اور اولیاء اللہ ؒ کے خلاف انہوں نے جو گل افشانیاں کی ہیں ان پر بھی ذرا توجہ فرمائیں۔ اپنے پیرومرشد حاجی امداداللہ مہاجرمکی کے فیصلہ ہفت مسئلہ اوراپنے مجموعہ عقائد موسومہ المہند کی سفارشات کو بھی نافذالعمل کریں ۔ نیز جہاں جماعت مودودیہ اپنے بانی کی نگارشات بسلسلہ نجدیت وہابیت سے رجوع کر کے آج ان کی نمائندگی اور گماشتگی کے فرائض ادا کر رہی ہے وہاں ’’حدیث دجال‘‘ کے متعلق مودودی صاحب کی تحقیقات سورہ تحریم میں امہات المومنین سیدہ عائشہ صدیقہ و سیدہ حفصہ رضی اللہ تعالیٰ عنھما کی بابت قابل اعتراض تفہیمات ، سورہ و الضحیٰ کی تفسیر میں حضور ﷺ کے ’’جاہلی معاشرہ میں گم ہو جانے کا اندیشہ ‘‘ اور سورہ نصر میں ’’منصب نبوت کی ادائیگی میں کوتاہیوں سے مغفرت‘‘ وغیرہ جیسی قرآنی تفہیمات اورحضرت عثمان رضی اللہ عنہ پر اقربا نوازی اورمال غنیمت میں غلط تصرف جیسے الزامات کو علی الاعلان مسترد کر کے اجماع امت کے طے شدہ مسلمہ عقائد و نظریات پر واپس آ جائیں۔

    مگر وہ ایسا نہیں کریں گے کیونکہ اہل سنت والجماعت کے پاس قوت و شوکت کا وہ سامان نہیں جو حکومت نجدیہ سعودیہ کے پاس موجود ہے۔ بہرحال اگراتحاد مقصود ہے تو صدق دل سے ہونا چاہئے زبانی کلامی پروپیگنڈا سے کچھ حاصل نہیں ہوگا۔ (یہ اقتباسات مجاہدمولانا عبدالستار خان نیازی کی کتاب اتحاد بین المسلمین وقت کی اہم ضرورت کے صفحہ ۷۱ تا ۷۹ اور صفحہ ۸۷ تا صفحہ ۹۵ سے ہیں)

  11. if someone ask me to define Qadiyaniyat i shall define in three words
    1) LIES
    2) DECEPTION
    3) FORGERY

    the same is true about the prophet jesus(pbuh). why?
    because mirza waned to be known as maseeh al mo’oud.
    the funny thing that mirza changes his stance on the location of the so called grave of prophet jesus(pbuh)
    here is some more examples of lies about HAZRAT EISA ALEH HE SALAT O SALAM and his tomb in kashmir
    The claims of qadianis that prophet jesus (pbuh) didn,t died at cross rather he migrated to Kashmir where he married a women maryan who bore him children and prophet jesus(pbuh) died at the age of 120.he was buried in mohalla kan yar district of sri nagar (famous as roza bal).these claim are so ridiculous that even mirza ghulam ahmed qadiani couldn,t show the seriousness in his claim.followin are the examples
    (GRAVE OF JESUS IS IN AL KHALEELI)
    In azala e auham written in 1891 he invented the theory that prophet jesus (pbuh) was not taken physically to heavens but he was taken down from the cross, went to AL KHALILI died and buried there .he writes:
    “ this is the true that masih went to his native place, and
    died there ,but it was not
    true that the same body which was buried ,became alive
    again…..verse 3chapter 1 of ACTS is a testimony about
    the natural death of jesus in AL KHALEELI. After his
    death masih was only visible to his students for 40 days”
    (AZALA E AUHAM / ROOHANI KHAZAIN
    VOL:3 – P:353-354 )
    (GRAVE OF JESUS IS IN QUDS)
    In 1894 mirza ghulam ahmed qadiyani twisted the
    same story.he wrotes in Atmam e Hujjat(roohani
    khazain vol 8) he wrote:
    “ this has to be admitted that Hazrat EISA is
    also dead and interestingly enough
    The grave of Hazrat EISA is also in Syria
    and for further clarity,in the
    footnote I included the letter of molvi
    mohd al saeedi trablisi. he is the
    resident of Tripoli, in the country of
    syria and in his area there is a grave of
    Hazrat EISA .if you say that the grave is
    a fake, then you must provide the
    Proof of this fake, and prove that when
    this fraud took place .and in this
    event We will not be sure about the graves
    of any prophet and trust will be lost,and
    we will have to say that all those burial
    places are fake.
    (Atmam e hujjat p:18-19 / roohani
    khazain vol 8 p:296-297, 1894)
    (GRAVE IN KASHMIR)
    After 8 yrs once again mirza ghulam ahmed
    qadiyani twisted the same story and
    Now he start claimin that grave is in Kashmir.
    “ it is proved with certainity that iesa
    migrated to Kashmir. After this Allah
    liberated him with his blessing and
    he kept on living there for a long
    time until he died and was included
    among the dead. And his burial place
    is still in the city of sri nagar .
    (Al huda ,12 june 1902,page 109)
    I hope you shall answer the question that what mr ghulam ahmed wanted to say which site is the proclaimed burial site of prophet jesus(pbuh)?
    may ALLAH keep us away from fire of the hell.

    • The first two references mention the sources of the “alleged” graves. It was not claimed by Promised Messiah (as) himself. But the grave in Kashmir was confirmed after revelation from Allah Almighty Himself. There is no doubt about it.

  12. “the same is true about the prophet jesus(pbuh). why?”

    astaghfirullah ul azeem.now i understand why anger is haram.
    i want to correct the statement
    “the same is true about so called grave of prophet jesus (pbuh)

  13. “There is no doubt about it”

    this calls for a laugh? lolzzzz
    atleast you right about one thing that there is no doubt.
    but rest assured that these revelations did not came from Allah(swt) but given by ” saltanat e englishiya”

    • Funny how you remind me of those Jewish and Christian theories about the “authors” of Quran.

      The proof of a revelation is in its truth.

  14. “Funny how you remind me of those Jewish and Christian theories about the “authors” of Quran”

    i can’t believe it……..
    how can any one defend the liar like mirza ghulam ahmed qadiyani???
    believe me its too funny for me….
    what do you think of century you are living? 19th century??
    boy we are living in 21st century the age of information overload where some clicks of computer key board are enough to expose the liar like mirza ghulam qadiyani……
    go and do some thing else i assure you that this forum is not suitable for ridiculous and cheap lies.

  15. Guys! leave this liar guy lutf all alone. Liars can’t prove anything at all. Ignore him. Quran is enough to reply these so called Muslims who do not believe that Jesus(AS) was NOT dead.


    And for claiming that they killed the Messiah, Jesus, son of Mary, the messenger of GOD. In fact, they never killed him, they never crucified him – they were made to think that they did. All factions who are disputing in this matter are full of doubt concerning this issue. They possess no knowledge; they only conjecture. For certain, they never killed him. (4:157)

    Lutf, unlike so called liberal sites like PTH and ATP, you will not be stopped to think out loud

  16. عقیدہ حیات مسیح کا منبع

    Close فہرست بند کریں
    عقیدہ حیات مسیح کا منبع
    فہرست مضامین
    Close فہرست بند کریں
    مسلمانوں میں سے ایک گروہ کا خیال ہے کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام کو اللہ تعالیٰ نے مادی جسم سمیت آسمان پر اٹھالیا اور آخری زمانہ میں وہ دوبارہ اسی جسم سمیت زمین پر اتریں گے۔

    یہ ایک ایسا عقیدہ ہے جس کی قرآن اور حدیث سے کوئی تائید نہیں ہوتی ۔ بلکہ قرآن کریم کی متعدد آیات واضح طور پر حضرت مسیح علیہ السلام کو دوسرے انبیاء کی طرح وفات یافتہ قرار دیتی ہیں اور حدیث میں تو رسول کریم ﷺ نے ان کی عمر بھی ۱۲۰ سال قرار دی ہے ۔ (کنزالعمال جلد ۱۱ صفحہ ۴۷۹ مؤستہ الرسالہ ۔ بیروت)

    صحابہ اور بزرگان امت کا عقیدہ

    رسول کریم ﷺ کی وفات پر تمام صحابہ کا اجماع اس بات پر ہوا تھا کہ رسول کریم ﷺ بھی اسی طرح فوت ہوئے جس طرح پہلے تمام انبیاء نے وفات پائی ہے ۔ (بخاری کتاب المغازی باب مرض النبی از امام بخاری)

    حضرت بانی سلسلہ احمدیہ اور آپ کی جماعت کا بھی یہی عقیدہ ہے ۔ حضرت مرزا غلام احمد قادیانی بانی جماعت احمدیہ نے قرآن کریم کی تیس آیات اور متعدد احادیث سے مسیح علیہ السلام کی وفات ثابت کی ہے اور اس موضوع پر ایک زبردست چیلنج بھی دیا ہے۔

    بانی سلسلہ احمدیہ کا چیلنج

    ’اگر پوچھا جائے کہ اس بات کا ثبوت کیا ہے کہ حضرت عیسیٰ ؑ اپنے جسم عنصری کے ساتھ آسمان پر چڑھ گئے تھے تو نہ کوئی آیت پیش کرسکتے ہیں اور نہ کوئی حدیث دکھلاسکتے ہیں صرف نزول کے لفظ کے ساتھ اپنی طرف سے آسمان کا لفظ ملا کرعوام کو دھوکا دیتے ہیں مگر یاد رہے کہ کسی حدیث مرفوع متصل میں آسمان کا لفظ پایا نہیں جاتا اور نزول کا لفظ محاورات عرب میں مسافر کیلئے آتا ہے اور نزیل مسافرکو کہتے ہیں ۔ چنانچہ ہمارے ملک کا بھی یہی محاورہ ہے کہ ادب کے طور پر کسی وارد شہر کو پوچھا کرتے ہیں کہ آپ کہاں اترے ہیں اور اس بول چال میں کوئی بھی یہ خیال نہیں کرتا کہ یہ شخص آسمان سے اترا ہے اگر اسلام کے تمام فرقوں کی حدیث کی کتابیں تلاش کرو توصحیح حدیث تو کیا وضعی حدیث بھی ایسی نہیں پاؤ گے جس میں یہ لکھا ہو کہ حضرت عیسیٰ ؑ جسم عنصری کے ساتھ آسمان پر چلے گئے تھے اور پھر کسی زمانہ میں زمین کی طرف واپس آئیں گے ۔ اگر کوئی حدیث پیش کرے تو ہم ایسے شخص کو بیس ہزار روپیہ تک تاوان دے سکتے ہیں اور توبہ کرنا اور تمام اپنی کتابوں کا جلا دینا اس کے علاوہ ہوگا۔‘ (کتاب البریہ روحانی خزائن جلد ۱۳ صفحہ ۲۲۵ حاشیہ)

    یہ چیلنج ۱۸۹۸ء میں دیا گیا تھا اور اس پر ایک سو سال پورے ہوگئے مگر اس کے خلاف ایک بھی مثال پیش نہیں کی جاسکتی۔حقیقت یہ ہے کہ حیات مسیح کا عقیدہ اسلامی عقیدہ نہیں بلکہ صحابہ کے دور کے بعد عیسائیوں کی طرف سے آیا ہے ۔ چنانچہ قدیم اور جدید علماء اور مفسرین کی یہی تحقیق ہے اور مسلسل اس صداقت کا اقرار کرتے چلے جارہے ہیں ۔

    عظیم متکلم علامہ ابن قیم

    یہ جو مسیح کے بارہ میں ذکرکیا جاتا ہے کہ وہ ۳۳ سال کی عمر میں آسمان کی طرف اٹھائے گئے اس کا ثبوت کسی مرفوع متصل حدیث سے نہیں ملتا۔ (زادالمعاد جلد اول صفحہ ۲۰ از امام ابن قیم مطبع میمنیہ مصر)

    حنفی عالم علامہ ابن عابدین الشامی

    امام ابن قیم کا نظریہ درست ہے اور واقعی یہ عقیدہ مسلمانوں میں عیسائیوں سے آیا ہے ۔ (تفسیر فتح البیان جلد ۲ صفحہ ۴۹ از نواب صدیق حسن خان، مطبع کبریٰ میریہ مصر۔ ۱۳۰۱ھ)

    مشہور مفسر اور مسلمان لیڈر سر سید احمد خان

    تین آیتوں سے حضرت عیسیٰ کا اپنی موت سے وفات پانا علانیہ ظاہر ہے مگر چونکہ علماء اسلام نے بہ تقلید بعض فرق نصاریٰ کے قبل اس کے کہ مطلب قرآن مجید پر غور کریں یہ تسلیم کرلیا تھا کہ حضرت عیسیٰ زندہ آسمان پر چلے گئے ہیں ۔ اس لئے انہوں نے ان آیتوں کے بعض الفاظ کو اپنی غیر محقق تسیلم کے مطابق کرنے کی بیجا کوشش کی ہے ۔ (تفسیر القرآن جلد ۲ صفحہ ۴۳ از سرسید احمد خان دوست ایسوسی ایٹس ۱۹۹۴ء)

    مولانا عبیداللہ سندھی

    یہ جو حیات عیسیٰ لوگوں میں مشہور ہے وہ ایک یہودی کہانی اور صابی من گھڑت افسانہ ہے مسلمانوں میں فتنہ عثمان کے بعد بواسطہ انصار بنی ہاشم یہ بات پھیلی اور یہ صابی اور یہودی تھے قرآن میں کوئی ایسی آیت نہیں جو اس بات پر دلالت کرتی ہو کہ عیسیٰ نہیں مرا۔ (الہام الرحمان فی تفسیر القرآن اردو جلد اول صفحہ ۲۴۰ از عبیداللہ سندھی ادارہ بیت الحکمت ۔ کبیر والا ملتان)

    نواب اعظم یار جنگ مولوی چراغ علی

    رفع کا مطلب بیان کرتے ہوئے فرماتے ہیں ۔’ یہ بات تفحیم و تشریف و تفحیم کے طور پر کہی جاتی ہے نہ یہ کہ وہ درحقیقت آسمان کی طرف بادلوں میں اڑتے ہوئے نظر آئے اور کسی آسمان پر جا بیٹھے ان باتوں کی ہمارے ہاں کوئی اصل نہیں ۔ بعد میں حضرت عیسیٰ یقیناًمرگئے جس کی خبر قرآن مجید میں دوسری جگہ دی گئی ہے ۔ (تہذیب الاخلاق جلد ۳ صفحہ ۲۲۱ از نواب اعظم یار مطبوعہ ۱۸۹۶ء)

    مشہور مفکر غلام احمد پرویز

    حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے اب تک زندہ ہونیکی تائید قرآن کریم سے نہیں ملتی ۔ قرآن کریم آپ کی وفات پاجانے کا بصراحت ذکر کرتا ہے ۔۔۔ حضرت عیسیٰ کے زندہ آسمان پر اٹھائے جانے کا تصور مذہب عیسائیت میں بعد کی اختراع ہے ۔ (شعلہ مستور ۷۹ ۔۸۳ از غلام احمد پرویز ادارہ طلوع اسلام لاہور)

    معروف ادیب اور مفسر ابوالکلام آزاد

    یہ عقیدہ اپنی نوعیت میں ہر اعتبار سے ایک مسیحی عقیدہ ہے اور اسلامی شکل و لباس میں ظاہر ہوا ہے ۔ (نقش آزاد صفحہ ۱۰۲ کتاب منزل لاہور طبع دوم جولائی ۵۹)

    ممتاز عرب عالم عبدالکریم الخطیب

    قرآن مجید میں مسیح کی دوبارہ آمد کا کوئی ذکر نہیں مسیح کے بارے میں اکثر روایات علماء اہل کتاب نے اسلام میں داخل کی ہیں ۔ (المسیح فی القرآن صفحہ ۵۳۸ دارالکتب الحدیثہ شارع جمہوریہ طبع اول ۱۹۶۵ء)

    علامہ شورائی

    عیسائی علماء نے یہودیوں کو دائرہ عیسائیت میں لانے کی خاطر بے سروپا باتیں عوام میں پھیلادیں ۔ وفات کے متعلق بھی لوگوں کو ذہن نشین کرایا گیا کہ حضرت عیسیٰ نے صلیب پر جان تو ضرور دی ہے لیکن تین دن کے بعد زندہ ہو کر آسمان پر چڑھ گئے اور قیامت کے قریب زمین پر اتریں گے اور عیسائیت کے دشمنوں کا قلع قمع کریں گے ۔ (سائنٹفک قرآن پارہ دوم صفحہ ۷۶ از علامہ شورائی قرآن سوسائٹی کراچی)

    اب فیصلہ آپ کا کام ہے کہ درست بات کونسی ہے ۔

  17. جس وقت الله نے فرمایا اے عیسیٰ! بے شک میں تمہیں وفات دینے والا ہوں اور تمہیں اپنی طرف اٹھانے والا ہوں اور تمہیں کافروں سے پاک کرنے والا ہوں اور جو لوگ تیرے تابعدار ہوں گے انہیں ان لوگوں پر قیامت کے دن تک غالب رکھنے والا ہوں جو تیرے منکر ہیں پھر تم سب کو میری طرف لوٹ کر آنا ہوگا پھر میں تم میں فیصلہ کروں گا جس بات میں تم جھگڑتے تھے
    (sura al e imran -3 : 55)

    اور البتہ عیسیٰ قیامت کی ایک نشانی ہے پس تم اس میں شبہ نہ کرو اور میری تابعداری کرو یہی سیدھا راستہ ہے
    (sura az zukhruf- 89 : 61)

    اور ان کے اس کہنے پر کہ ہم نے مسیح عیسیٰ مریم کے بیٹے کو قتل کیا جو الله کا رسول تھا حالانکہ انہوں نے نہ اسے قتل کیا اور نہ سولی پر چڑھایا لیکن ان کو اشتباہ ہو گیا اورجن لوگوں نے اس کے بارے میں اختلاف کیا ہے وہ بھی دراصل شک میں مبتلا ہیں ان کے پا س بھی اس معاملہ میں کوئی یقین نہیں ہے محض گمان ہی کی پیروی ہے انہوں نے یقیناً مسیح کو قتل نہیں کیا
    بلکہ اسے الله نے اپنی طرف اٹھا لیا اور الله زبردست حکمت والا ہے
    اور اہلِ کتاب میں کوئی ایسانہ ہوگا جواسکی موت سے پہلے اس پر ایمان نہ لائے گا اور قیامت کے دن وہ ان پر گواہ ہو گا
    (sura an nisa 4: 157/159)

    • REFUTATION OF ARGUMENTS GIVEN IN SUPPORT OF JESUS’ PHYSICAL ASCENSION TO HEAVEN

      ARGUMENT: Allah says in the Holy Quran: “…But they killed him (Jesus) not, nor crucified him, but so it was made to appear to them and those who differ therein are full of doubt, with no (certain) knowledge but only conjecture to follow, for a surely they killed him not; Nay, Allah raised him up unto Himself; and Allah is Exalted in Power, Wise.” (4:158-159)

      REFUTATION: It is absurd to think that one who is neither killed, nor put to death by putting on the Cross has necessarily ascended bodily to heaven. Do the Non-Ahmadies believe that Hazrat MusaAS or the Holy Prophet Muhammad (peace and blessings of God be on him) are alive in heaven as they were neither killed nor put to death by crucifixion? Besides, the Arabic words Maa Salabooho do not deny the fact of Hadhrat Jesus’AS being nailed to the Cross but deny his having died on it as is clear from Arabic lexicon. They say Salaba Ash-Shaia, i.e., he burned the thing. Salabal Izama means, he extracted the marrow out of the bones. Salabal Lissa means, he crucified the thief, i.e., he put him to death in a certain well-known manner (Lane & Aqrab). In crucifixion one was nailed to a framework made in the form of a cross and, being kept without food and drink, slowly died of pain, hunger, fatigue, and exposure.

      ARGUMENT: The words Wa Laakin Shubbiha Lahum in verse 4:158 means that the likeness of Hadhrat JesusAS was cast upon another person–Judas or somebody else who was then crucified in place of Hazrat Jesusas.

      REFUTATION: The curious part of it is that there is not only one story that speaks of the casting of the likeness of Hadhrat JesusAS, there are several stories. But intelligent commentators like Abu Hayyaan have discarded all such stories. The word Shubbiha means, he was made to appear like, or was made to resemble. Now the question arises, who is the person who was made to appear “like one crucified”. Clearly it was Hadhrat JesusAS whom the Jews tried to crucify or slay. Nobody else can be meant here, for there is absolutely no reference to any other person in the context. The context cannot be twisted as to make room for somebody else of whom no mention at all is made in the verse. To what then was Hadhrat JesusAS made like? The context provides a clear answer to that question. The Jews did not kill him by crucifixion, but he was made to appear to them like “one crucified”, and thus it was that they wrongly took him for dead. It was thus Hadhrat JesusAS who was made to resemble “one crucified”. This interpretation is not only in perfect harmony with the context but is also clearly borne out by all relevant facts of history.

      The second meaning of the expression Shubbiha Lahum is, that “the matter became confused to them.” This interpretation is also clearly borne out by history, for, although the Jews asserted that they had put Hadhrat JesusAS to death by suspending him on the Cross, they were not sure of it and the circumstances being obscure, the matter had certainly become confused to them. The fact that the Jews themselves were not sure whether Hadhrat JesusAS had actually died on the Cross is supported by the Bible and by all authentic historical facts.

      ARGUMENT: The words in verse 4:159 Bal Rafa’ahollaho Ilaihi –“Nay Allah raised him up unto Himself” clearly shows that Allah lifted Hadhrat Jesus’AS body to heaven.

      REFUTATION: As a matter of fact the referred Arabic words simply mean that Allah exalted him (Hadhrat JesusAS) to Himself. Here the exaltation is the exaltation of the soul of which the Jews were trying to deprive him by putting to death through crucifixion, but Allah frustrated them in their evil designs. The detail of their failure is given in Part One of this publication.

      In the Holy Quran, the Traditions of the Holy ProphetSAW, the Commentaries and in the Arabic idioms, whenever the word Rafa’a is used by Allah for a human being, it always connotes exaltation of ranks and spiritual nearness, because no fixed abode can be, or has ever been, assigned to God as the Holy Quran declares: “And He is Allah, both in the heavens and in the earth.” (6:4) “So withersoever you turn, there will be the face of Allah.” (2:116) “And We are nearer to him than even his jugular vein.” (50:17) Hence, Rafa’a Ilallah does not necessitate one’s physical ascension to heaven, rather this Rafa’a–exaltation is achieved on this very earth.

      As a matter of fact that word Rafa’a has never been used in the entire Holy Quran nor in the Traditions of the Holy ProphetSAW as a connotation of physical ascension to heaven as is clear from the following references:

      Wa Lau Shi’naa La Rafa’anaaho Bihaa Wa Laakinnahoo Akhlada Ilal Ardhi–“And if We had pleased, We would have exalted him thereby; but he inclined to the earth.” (7:177) Here the commentators are unanimous in their interpretation of the exaltation of the ranks of the referred person. It is never meant to indicate the intention of physically raising up the referred person to heaven.

      Wa Rafa’anaaho Makaanan Aliyyaa–“And We exalted him (Hadhrat IdrisAS) to lofty station.” (19:58) Likewise see: 24:37; 80:14-15; 56:35; 58:12.

      Idha Tawaza Al-Abdo Rafa’ahollaho Ilas Samaa Is-Saabiati–“When a person shows humility, Allah lifts him up to the seventh heaven.” (Kanzul Ummaal Vol. 2, page 53) This Hadith clearly shows that even if the word Samaa (sky) had been used here instead of Allah, the verse could not have meant anything else but spiritual honor and exaltation. Will the non-Ahmadies believe that every act of humility literally lifts a person up to heaven in both body and spirit? Certainly, there can be no bigger folly than such an inference. Why then draw such inference in the case of JesusAS? Why should he be sent up to heaven alive? Was not this earth sufficient for him as the Quran declared: Alam Najalil Arza Kifaatan Ahya’an Wa Amwaatan–“Have We not made the earth sufficient for the living and the dead?” (77:26-27)

      All the Muslims are aware of the fact that there occurs the word Warfa’anee (and exalt me in ranks) in the prayer which the Holy ProphetSAW used to pray between two Sajdas (prostrations). (Kitab Ibn Maja) All the Muslims supplicate this prayer between two Sajdas in their Salat, but does any one ever think that he is supplicating for his physical ascension to heaven? Or, is there any doubt regarding the Holy ProphetSAW’s Rafa’a (exaltation of ranks) despite his sojourn on this very earth?

      In the Commentary of the Holy Quran known as Tafseer Saafi under the verse Maa Muhammadun Illa Rasool Qad Khalat Min Qablihir Rusul (3:145) the demise of the Holy Prophet Muhammad (peace and blessings of God be on him) has been mentioned in he following words: Hatta Idha Da’a Allaho Nabiyyahoo Wa Rafa’a Hoo Ilaihi–“Until when Allah called His Prophet and exalted him to Himself.” Now here are words Rafa’a Hoo Ilaihi used for the Holy ProphetSAW had never been interpreted as his corporal ascension to heaven. Is it not strange and outright blasphemy to interpret the word Rafa’a for the Holy ProphetSAW as exaltation of his ranks, and for JesusAS as his physical ascension to heaven?
      ARGUMENT: Allah says in the Holy Quran: “And there is none of the people of the Book must believe in him before his death and on the Day of Judgement he will be a witness against them.” (4:160) As Jews and Christians have not all believed in HadhratJesusAS, therefore, he must be alive with his physical body in heaven, and after descending from heaven in the last days he shall turn them into believers.

      REFUTATION: Although the words of verse 4:160 do not show that Hadhrat JesusAS is now sitting in the sky in his physical body, yet the fantastic conclusion is drawn. But it is forgotten that if Hadhrat JesusAS be supported to be alive, even then all Jews and Christians cannot believe in Hadhrat JesusAS; because many generations of them are dead. How can they then believe? So it is clear that if they have all to believe in Hadhrat JesusAS, it must be supposed that along with him the Jews and Christians are also alive, which is obviously absurd. Besides, if the interpretation of the Non-Ahmadies is accepted for the sake of argument, then it establishes contradictions in the Holy Quran as is clear from the following references:

      “Nay, but Allah has sealed them because of their disbelief, so they believe no but little.” (4:156)

      “So, We have caused enmity and hatred among them till the Day of Resurrection.” (5:15)

      “When Allah said, O Jesus, I will cause thee to die…and will place those who follow thee above those who disbelieve, until the Day of Resurrection.” (3:56)
      These verses clearly show that all Jews shall not believe in Hadhrat JesusAS, hence, the interpretation of the Non-Ahmadies is entirely wrong. The correct translation of the verse 4:160 without twisting words so as to yield far-fetched meanings is: “And there is none among the People of the Book but will believe in it (the crucifixion of Jesus) before his death; and on the Day of Resurrection, he (Jesus) shall be a witness among them.” What the Quranic verse lays down is that every Jew and Christian must according to their creeds, continue to believe in the death of Hadhrat JesusAS on the Cross. The Jew because he wants to show that according to Deuteronomy 21:23 the curse of God fell upon Hadhrat JesusAS, and the Christian because he wants to affirm the doctrine of Atonement as mentioned in Galatians 3:13. So both these peoples go on sticking to this absurd and unfounded belief (Jesus’AS death on the Cross) in the face of all reason and all established facts of history. The attempts to make the words La Yominanna Bihee Qabla Mautehee (will believe in it before his death) mean “will believe in him (Jesus) before his (Jesus) death” is simply ridiculous. The context spurns the idea, as does the second reading of the expression, viz., Mautihee (his death) reported by Ubayy in Ibn Jareer, Vol. 6, page 13.

      ARGUMENT: Allah says in the Holy Quran: “And behold I did restrain the children of Israel from (violence to) thee when thou did show them the clear signs.” (5:111) This verse clearly shows that the Jews could not even touch Hadhrat JesusAS. But if it is accepted that he was hanged on the Cross, his hands bled, and he was taken down from the Cross after suffering a lot of troubles, then this verse proves false.

      REFUTATION: There is not a single word which connotes that Allah restrained the Jews from violence to Hadhrat JesusAS, hence, the Non-Ahmadi translator Allaama Yusuf Ali had no other choice but to put the words “violence to” in brackets. The verse does not mean that Jesus suffered no persecution at the hands of enemies. A similar expression has been used with regard to the early Muslims in the Quran: Yaa Ayyuhalladheena Aamanudh-Karoo Ni’Amatillahi Alaikum Idh Hamma Qaumun An Yabsotoo Ilaikum Aidiy-hum Fa Kaffa Aidiyahum Ankum (5:12)–“O ye who believe! remember Allah’s favor upon you when a people intended to stretch out their hands against you, but He withheld their hands from you.” But it is a well-known fact that they had to pass through grievous trials and tribulations. As a matter of fact the reference in the verse (5:111) is to the attempts of the Jews to kill Hadhrat JesusAS on the Cross, from which accursed death God delivered him. Similar protection was promised to the Holy ProphetSAW (in 5:68) but that did not mean that his enemies would not be allowed to do him any physical harm whatsoever. It only means that they would not be permitted to take his life so as to render him unfit for his work.

      ARGUMENT: The Holy Prophet Muhammad (peace and blessings of God be him) is reported to have said: Kaifa Antum Idha Nazala Feekum Ibno Maryama Wa Imaamokum Minkum –“How would it be with you when the son of Mary will descend among you and you will have a leader raised from among you.” (Bukhari, Kitabul-Anbiya, Chapter Nazul Isa bin Maryam) The word Nazul, it is argued, signifies that Hadhrat JesusAS must come down physically from the high heavens, hence, he is physically alive in heaven. Besides, the Holy ProphetSAW said that the son of Mary will come, so it must be Hadhrat JesusAS himself who should come personally.

      REFUTATION: In the first place, there is no word Minas-Samaa from heaven, mentioned in the Tradition. No doubt there are two points which need explanation: One Nazool and the other Ibn Maryam. It should be remembered that the word Nazala may mean “he descended” but it cannot by any stretch of meaning, signify “he descended physically from the heavens”. There is not the slightest justification for this.

      The same word is used about the coming of the Holy ProphetSAW. Says the Holy Quran: Qad Anzalallaho Ilaikum Dhikran Rasoolan Yatloo Alaikum Aayaatillahi–“Allah has indeed sent down to you a Reminder, a Messenger, who recites unto you the clear signs of Allah.” (65:11-12) But No one can say that the Holy ProphetSAW came down from the heavens physically.

      Then God says: Wa Anzalnal Hadeeda–“And We sent down iron” (57:26), and we know that it is not thrown down from the heavens. Likewise the word Nazool has been mentioned about cattle in 39:7; about raiment in 7:27. Even this word had been used for each and every thing in 15:22 where Allah says: Wa In Min Shai-in Illaa Indinna Khazaainohoo Wa Maa Nonazzilohoo Illaa Biqadarin Ma’aloom–“And there is not a thing but with Us are the treasures thereof and We send it not down except in known measure.” Hence, it appears that all things in nature descend from God–are gifted by God–and yet they do not drop from Heaven. Their creation takes place in and on and through this very earth. Therefore, the word Nazool (descend), when used for the coming of the Messiah, can have no other meaning. It can only point to the importance, the blessedness and the spiritual significance of the Promised Messiah. It is not in the least intended to suggest that he would physically drop from Heaven to earth.

  18. please do not mind if i say that you are an idiot 😉

  19. Everyone here has read the article & is commenting accordingly, but what I am further astonished at seeing is this video file about naseeb.com. This is simply atrocious. Completely on a anti-Islam-agenda. Gay/lesbian villages? Promoting homesexuality & then the images being put up there?!! Islamic love??? How can they actually PROMOTE the forbidden concepts by Islam and STILL call themselves a ‘muslim networking site’?

    Did anybody, including Mr.Lutf here, try reading Quran even once with its meaning? Clearly not! ‘Coz if they had, they wouldn’t have forgotten why was ‘qaum-e-luut’ destroyed?

    Moreover, this guy (Mr.Lutf) keeps debating the grave of Hazrat Eessa (A.S.) from HIS OWN books or whatever – but do those books hold higher credibility than Quran itself?? (Refer to the ayah shared by Adnan Siddiqi).

    Lastly, I’d heard about Naseeb but was yet to visit it. Rest assured, that isn’t gonna happen ever now. I am aghast!

    Kashif sahab, Allah aapko jazai-kher de aur humain bhe rah-e-Islam mein apne hisse ka kaam kerne ki taufeeq ata’ fermaye – amen!

  20. For whoever wants to judge Qadiani’s without any bias (including Qadiani’s themselves) I recommend that they read Syed Abul Aala Muadudi’s literatue in this regard. Most of his arguments are compiled in a book titled “Seerat Sawar-e-Aalam” under a separate chapter on Khatam-e-Nabuwwat.

    All those who read it and can clearly see the truth, I advise that they recite the Kalima Shahadat and openly admonish the false prophethood of Mirza Ghulam Ahmed.

    I am sure that Allah Subhan a hu wataala will forgive their past mistakes and open the doors for his hidayat.

    Wama Taufiqee illa billah.

    Naveed

  21. what we call when an idiot tries to become “derh hoshiyar”?
    your post is nothing but the monkey business with the Quran e kareem.
    well known technique to engage opponent in the useless discussion and get some sort of acceptance in ummat e muslima.
    you are a non muslim….face it or embrace islam.
    NOW SOME THING ABOUT MUMBO JUMBO REFUTATIONS.
    the aayat e qurani clearly stating that hazrat eisa niether murdered nor crucified but Allah(swt) raised him to up unto himself and again this physical raising without death is clearified by ayat 61 of sura az zukhruf saying that ”
    “And he [‘Îsa (Jesus), son of Maryam (Mary)] shall be a known sign for (the coming of) the Hour (Day of Resurrection) [i.e. ‘Isa’s (Jesus) descent on the earth]. Therefore have no doubt concerning it”

    this belief which is clearly mentioned in quran e kareem again fortified by sahih ahadith. here is just a few examples from many sahih ahadith:

    Narrated Abu Huraira: Allah’s Apostle said, “By Him in Whose Hands my soul is, son of Mary (jesus) will shortly descend amongst you people (Muslims) as a just ruler and will break the Cross and kill the pig and abolish the Jizya (a tax taken from the non-Muslims, who are in the protection, of the Muslim government). Then there will be abundance of money and no-body will accept charitable gifts.
    (Sahih Bukhari-Book #34, Hadith #425)

    Narrated Abu Huraira: Allah’s Apostle said “How will you be when the son of Mary (i.e. jesus) descends amongst you and he will judge people by the Law of the Quran and not by the law of Gospel (Fateh-ul Bari page 304 and 305 Vol 7)
    (Sahih Bukhari-Book #55, Hadith #658)

    Narrated Abdullah: The Prophet mentioned the Massiah Ad-Dajjal in front of the people saying, Allah is not one eyed while Messsiah, Ad-Dajjal is blind in the right eye and his eye looks like a bulging out grape. While sleeping near the Ka’ba last night, I saw in my dream a man of brown color the best one can see amongst brown color and his hair was long that it fell between his shoulders. His hair was lank and water was dribbling from his head and he was placing his hands on the shoulders of two men while circumambulating the Kaba. I asked, ‘Who is this?’ They replied, ‘This is jesus, son of Mary.’ Behind him I saw a man who had very curly hair and was blind in the right eye, resembling Ibn Qatan (i.e. an infidel) in appearance. He was placing his hands on the shoulders of a person while performing Tawaf around the Ka’ba. I asked, ‘Who is this? ‘They replied, ‘The Masih, Ad-Dajjal.’ ”
    (Sahih Bukhari-Book #55, Hadith #649)

    Narrated AbuHurayrah: The Prophet (peace_be_upon_him) said: There is no prophet between me and him, that is, jesus (peace_be_upon_him). He will descent (to the earth). When you see him, recognise him: a man of medium height, reddish fair, wearing two light yellow garments, looking as if drops were falling down from his head though it will not be wet. He will fight the people for the cause of Islam. He will break the cross, kill swine, and abolish jizyah. Allah will perish all religions except Islam. He will destroy the Antichrist and will live on the earth for forty years and then he will die. The Muslims will pray over him.
    (sunan abu daoud-Book #37, Hadith #4310)

    Jabir b. ‘Abdullah reported: I heard the Messenger of Allah (may peace be upon him) say: A section of my people will not cease fighting for the Truth and will prevail till the Day of Resurrection. He said: jesus son of Mary would then descend and their (Muslims’) commander would invite him to come and lead them in prayer, but he would say: No, some amongst you are commanders over some (amongst you). This is the honour from Allah for this Ummah.
    (Sahih Muslim-Book #001, Hadith #0293)

    Hanzala al-Aslami reported: I heard Abu Huraira (Allah be pleased with him) as narrating from Allah’s Apostle (may peace be upon him) who said: By Him in Whose Hand is my life. Ibn Maryam (jesus Christ) would certainly pronounce Talbiya for Hajj or for Umra or for both (simultaneously as a Qiran) In the valley of Rauha
    (Sahih Muslim-Book #007, Hadith #2877)

    Abu Huraira reported Allah’s Messenger (may peace be upon him) as saying: The Last Hour would not come until the Romans would land at al-A’maq or in Dabiq. An army consisting of the best (soldiers) of the people of the earth at that time will come from Medina (to counteract them). When they will arrange themselves in ranks, the Romans would say: Do not stand between us and those (Muslims) who took prisoners from amongst us. Let us fight with them; and the Muslims would say: Nay, by Allah, we would never get aside from you and from our brethren that you may fight them. They will then fight and a third (part) of the army would run away, whom Allah will never forgive. A third (part of the army). which would be constituted of excellent martyrs in Allah’s eye, would be killed ani the third who would never be put to trial would win and they would be conquerors of Constantinople. And as they would be busy in distributing the spoils of war (amongst themselves) after hanging their swords by the olive trees, the Satan would cry: The Dajjal has taken your place among your family. They would then come out, but it would be of no avail. And when they would come to Syria, he would come out while they would be still preparing themselves for battle drawing up the ranks. Certainly, the time of prayer shall come and then jesus (peace be upon him) son of Mary would descend and would lead them in prayer. When the enemy of Allah would see him, it would (disappear) just as the salt dissolves itself in water and if he (jesus) were not to confront them at all, even then it would dissolve completely, but Allah would kill them by his hand and he would show them their blood on his lance (the lance of jesus Christ).
    (Sahih Muslim-Book #041, Hadith #6924)

    Hudhaifa b. Usaid Ghifari reported: Allah’s Messenger (may peace be upon him) came to us all of a sudden as we were (busy in a discussion). He said: What do you discuss about? They (the Companions) said. We are discussing about the Last Hour. Thereupon he said: It will not cone until you see ten signs before and (in this connection) he made a mention of the smoke, Dajjal, the beast, the rising of the sun from the west, the descent of jesus son of Mary (Allah be pleased with him), the Gog and Magog, and land-slidings in three places, one in the east, one in the west and one in Arabia at the end of which fire would burn forth from the Yemen, and would drive people to the place of their assembly.
    (Sahih Muslim-Book #041, Hadith #6931)

    NOW !!! mr.smart guy….who is the son of mary in these ayat and ahadith ???
    does it mean the mentally retarded son of ghulam mustufa and chiragh bibi?
    i don’t think so……

    • No Mr. زود بحث

      There is always the other side of the story. Pay attention that you may learn.

      کیا حضرت عیسیٰ ء نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے امّتی ہوسکتے ہیں؟

      Close فہرست بند کریں
      کیا حضرت عیسیٰ ء نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے امّتی ہوسکتے ہیں؟
      فہرست مضامین
      حضرت ابراہیمؑ ۔۔ یہودی یا عیسائی؟
      حضرت ابراہیمؑ حضرت نوحؑ کے امّتی
      حضرت موسیٰؑ کی خواہش

      Close فہرست بند کریں
      غیر احمدی علماءکی طرف سے لوگوں کو یہ بتایا جاتا ہے کہ جب حضرت عیسیٰ علیہ السلام نازل ہوں گے تو وہ ایک نبی کی حیثیت سے نہیں بلکہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے اُمّتی کی حیثیت سے نازل ہوں گے اور دینِ اسلام کے مطابق خود بھی عمل کریں گے اور دوسروں سے بھی اسی شریعت پر عمل کروائیں گے۔ اس بارے میں قرآنِ کریم کی آیات اورنبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی احادیث ہماری رہنمائی کرتے ہوئے بتاتی ہیں کہ ایک نبی اپنے سے پہلے آنے والے نبی کا امّتی تو بن سکتا ہے لیکن اپنے سے بعد میں آنے والے نبی کا امّتی نہیں بن سکتا، جیسا کہ مندرجہ ذیل آیتِ کریمہ سے ظاہر ہے۔

      حضرت ابراہیمؑ ۔۔ یہودی یا عیسائی؟
      اے اہل کتاب! تم ابراہیم کے بارے میں کیوں جھگڑتے ہو حالانکہ تورات اور انجیل نہیں اتاری گئیں مگر اس کے بعد۔ پس کیا تم عقل نہیں کرتے؟ (آل عمران3:66)

      اس آیتِ کریمہ میں اللہ تعالیٰ یہود و نصاریٰ کو توجہ دلاتے ہوئے ایک اصول بیان فرماتا ہے کہ امّتیں کتاب کے نزول کے بعد قائم ہوتی ہیں۔ چنانچہ یہودی اور عیسائی امّتیں تورات اور انجیل کے نازل ہونے کے بعد وجود میں آئیں۔ جبکہ حضرت ابراہیم ؑ اُن دونوں کتابوں کے نزول یا بالفاظِ دیگر یہودی و عیسائی امّتوں کے قائم ہونے سے پہلے آچکے تھے۔ لہٰذا وہ ان دونوں امّتوں میں سے کسی ایک کے فرد بھی قرار نہیں دئیے جاسکتے۔

      حضرت ابراہیمؑ حضرت نوحؑ کے امّتی
      اور یقینًا اسی کے گروہ میں سے ابراہیم بھی تھا(الصّٰفٰت37:84)

      چونکہ حضرت موسیٰ اور حضرت عیسیٰ علیہما السلام حضرت ابراہیم ؑکے بعد آئے تھے لہٰذا حضرت ابراہیم ؑ ان کی امتوں کے فرد نہیں بن سکتے لیکن مندرجہ بالا آیتِ کریمہ کے مطابق حضرت ابراہیم ؑ حضرت نوح ؑ کے گروہ میں شامل قرار دئیے گئے ہیں کیونکہ حضرت نوح ؑ حضرت ابراہیم ؑ سے پہلے تھے۔

      حضرت موسیٰؑ کی خواہش
      مندرجہ ذیل حدیث میں حضرت موسیٰ ؑ کی امّتِ محمدیہ میں شامل ہونے کی خواہش کا ذکر فرمایا گیا ہے جس کو اللہ تعالیٰ نے اسی بنیاد پر رد فرمادیا کہ وہ پہلے ہوچکے ہیں اور امّت محمدیہ حضرت موسیٰ ؑ کے تقریبًا دو ہزار سال بعد قرآن کے نزول کے ذریعے قائم ہونے والی تھی۔ غور کرنا چاہئے کہ یہی روک جو حضرت موسیٰ ؑ کے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا امّتی بننے میں ہے، وہی روک حضرت عیسیٰ ؑ کے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا امّتی بننے میں ہے۔

      ابونعیم نے ”حلیہ“ میں حضرت انسؓ سے روایت کی کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا بنی اسرائیل کے نبی حضرت موسیٰ علیہ السلام کو وحی فرمائی کہ جو شخص مجھ سے اس حال میں ملے کہ وہ احمد مجتبیٰ کا منکر ہے تو میں اسے جہنم میں داخل کرونگا۔ موسیٰ علیہ السلام نے کہا اے رب! احمد کون ہیں؟ فرمایا:۔ ”میں نے کسی مخلوق کو ان سے بڑھ کر مکرم نہیں بنایا۔ اور میں نے ان کا نام تخلیق زمین و آسمان سے پہلے عرش پر لکھا۔ بلاشبہ میری تمام مخلوق پر جنت حرام ہے جب تک وہ ان کی امت میں داخل نہ ہو۔“ …موسیٰ ؑنے عرض کیا اس امت کا نبی مجھے بنادے! فرمایا اس امت کا نبی انہیں میں سے ہوگا۔ عرض کیا مجھے اس امت میں سے بنادے! فرمایا تمہارا زمانہ پہلے ہے اور ان کا زمانہ آخر میں، لیکن بہت جلد میں تم کو اور ان کو دارالجلال میں جمع کردونگا۔“ (علامہ جلال الدین سیوطیؒ الخصائص الکبریٰ جلد ۱ صفحہ ۱۲، اشرف علی تھانوی النشر الطیب فی ذکر النبی الحبیب)

    • امت محمدیہ میں آنے والے مہدی و مسیح کی علامات

      Close فہرست بند کریں
      امت محمدیہ میں آنے والے مہدی و مسیح کی علامات
      فہرست مضامین
      مسیح موعود و مہدی معہود کی ذاتی علامات
      خاندان
      آنے والے موعود کا نام
      آنے والے موعود کا حلیہ
      شادی اور اولاد
      آنیوالے موعود کی عمر
      مقام ظہور
      مسیح موعود کے زمانہ کی علامات
      (۱) دابۃ الارض
      (۲)۔ یاجوج ماجوج کا خروج
      (۳) غیر معمولی زلازل کا آنا
      (۴) جدید سواریوں کی ایجاد
      مسیح موعود اور مہدی معہود کے کام
      (۱) حکم عدل
      (۲) کسر صلیب
      (۳) قتلِ خنزیر
      (۴) التواءقتال
      (۵) تقسیم اموال
      (۶) قتلِ دجال
      (۷) مسیح موعود کا حج
      مہدی کی سچائی کے دو نشانات

      Close فہرست بند کریں
      آخری زمانہ میں جہاں فرقہ بندی، فتنہ و فساد، دجالوں و کذابوں کے ظہور اور ان کے ذریعہ ہونے والی تباہی و بربادی کی خبر دی گئی ہے وہاں اس امت مرحومہ کو ہلاکت سے بچانے کے لئے عیسیٰ بن مریم جیسے عظیم الشان وجود کے نجات دہندہ بن کر ظاہر ہونے کی بھی بشارت دی گئی ہے جسے امام مہدی کے لقب سے بھی نوازا گیا ہے جیسے آنحضرت ﷺ نے فرمایا :۔

      لا المھدی الا عیسی بن مریم (ابن ماجہ کتاب الفتن باب شدة الزمان)

      یعنی عیسیٰ ہی مہدی ہوں گے۔ اس آنے والے موعود کی غیر معمولی اہمیت کے پیش نظر اس کی علامات و نشانات، ظہور کا مقام اور ملک تک بیان کر دئیے گئے ہیں جن کا اجمالی تذکرہ پیش ہے۔

      مسیح موعود و مہدی معہود کی ذاتی علامات

      خاندان
      احادیث نبویہ سے معلوم ہوتا ہے کہ آنے والا موعود فارسی الاصل ہو گا۔ چنانچہ جب آیت و اخرین منھم لما یلحقوا بھم (الجمعہ:62:4) نازل ہوئی تو نبی کریم ﷺ سے یہ سوال کیا گیا کہ آخرین کون لوگ ہیں۔ اس پر آپ نے مجلس میں موجود حضرت سلمان فارسیؓ کے کندھے پر ہاتھ رکھ کر فرمایا:۔

      ”اگر ایمان ثریا پر بھی چلا جائے گا تو ضرور اہل فارس میں سے کچھ اشخاص یا ایک شخص اسے واپس لے آئے گا“(بخاری کتاب التفسیر زیر آیت و آخرین منھم)

      حضرت بانی جماعت احمدیہ کا خاندان اس پیشگوئی کے عین مطابق فارسی الاصل ہے اور آپ کے شدید مخالف مولوی محمد حسین صاحب بٹالوی نے بھی آپ کا فارسی الاصل ہونا تسلیم کیا ۔(اشاعۃ السنہ نمبر۷ صفحہ۱۹۳)

      آنے والے موعود کا نام
      آنحضرت ﷺ نے فرمایا:۔

      ”اللہ تعالیٰ اہل بیت میں سے ایک شخص کو بھیجے گا جس کا نام میرا نام اور اس کے باپ کا نام میرے باپ کا نام ہوگا“ (ابو داؤد کتاب المہدی)

      اس حدیث میں آنے والے موعود کی آنحضرت ﷺ کے ساتھ کامل موافقت کا ذکر کیا گیا ہے اور مراد یہ ہے کہ مہدی کی صفات آنحضرت ﷺ جیسی ہوں گی اور وہ آنحضرت ﷺ کی سیرت کے مطابق لوگوں کو ہدایت دے گا۔(مرقاۃ المفاتیح شرح مشکوٰۃ المصابیح کتاب الفتن جلد۹ حدیث ۵۴۵۲)

      علاوہ ازیں اس حدیث سے یہ بھی پتہ چلتا ہے کہ مہدی کی ظاہری نام کے لحاظ سے بھی آنحضرت ﷺ سے موافقت ہوگی۔ چنانچہ احادیث میں مہدی کا نام ”احمد“ بھی لکھا ہے۔

      (کتاب الفتن باب فی سیرۃ المہدی صفحہ ۹۸ از حافظ ابو عبداللہ نعیم بن حماد)

      قرآن کریم اور احادیث سے پتہ چلتا ہے کہ نبی اکرم ﷺ کا ایک نام احمد بھی تھا۔ چنانچہ حضرت بانی جماعت احمدیہ مرزا غلام احمد قادیانی کا اصل نام احمد ہی ہے جیسا کہ الہامات میں بھی بار بار اللہ تعالیٰ نے آپ کو احمد کے نام سے خطاب فرمایا ہے جیسا کہ فرمایا یَا اَحمَدُ بَارَکَ اللّٰہُ فِیکَ(آئینہ کمالات اسلام روحانی خزائن جلد نمبر۵ صفحہ۵۵۰)

      آنے والے موعود کا حلیہ
      آنحضرت ﷺ نے بنی اسرائیل کی طرف مبعوث ہونے والے مسیح کا حلیہ یہ بیان فرمایا کہ:۔

      ”وہ سرخ رنگ کے گھنگریالے بال اور چوڑے سینے والے تھے“(بخاری کتاب الانبیاءباب واذکر فی الکتاب مریم)

      لیکن آپ نے امت محمدیہ میں دجال کے بالمقابل ظاہر ہونے والے مسیح کا حلیہ بیان کرتے ہوئے فرمایا کہ:۔

      ”اس کے بال لمبے اور رنگ گندمی ہوگا“ (بخاری کتاب اللباس باب الجعد)

      دونوں مسیحوں کے الگ الگ حلیے بیان کرنے سے صاف ظاہر ہے کہ آنے والا مسیح اور مسیح ناصری علیہ السلام جدا جدا وجود ہیں۔ آنے والے موعود کے حلیہ کے متعلق یہ بھی ذکر ہے کہ :۔

      ”مہدی کی پیشانی کشادہ اور ناک اونچی ہوگی“(ابو داؤد کتاب المہدی حدیث نمبر۷)

      حضرت بانی جماعت احمدیہ کا حلیہ بعینہ اس کے مطابق ہے۔

      شادی اور اولاد
      مسیح موعود کی ایک علامت یہ بیان ہوئی ہے کہ :۔

      ”وہ شادی کریں گے اور ان کی اولاد ہوگی“(مشکوٰة کتاب الفتن باب نزول عیسیٰ)

      جہاں تک حضرت مسیح موعود کی اس علامت کا تعلق ہے کہ وہ شادی کریں گے اور ان کے ہاں اولاد ہو گی اس سے مراد یہ ہے کہ مسیح موعود مجرد نہیں رہیں گے بلکہ شادی کریں گے اور مبشر اولاد پائیں گے جو ان کا مشن اور کام جاری رکھنے والی ہوگی۔ چنانچہ حضرت مرزا غلام احمد مسیح موعود کی شادی بھی ہوئی اور آپ کو خدا نے دین کی عظیم الشان خدمات بجا لانے والی اولاد بھی عطا فرمائی۔

      آنیوالے موعود کی عمر
      زیادہ تر ثقہ روایات میں مسیح موعود کی مدت قیام چالیس سال بیان کی گئی ہے اور حضرت مرزا صاحب نے قمری لحاظ سے 76 سال عمر پائی ہے۔ 40 سال کی عمر میں آپ پر الہام کا آغاز ہوا اور الہام کے بعد بھی اسی کے لگ بھگ آپ نے زمانہ پایا۔

      مقام ظہور
      آنحضرت ﷺ نے مسیح موعود کا مقام ظہور دمشق سے مشرقی جانب بیان فرمایا ہے۔ (مسلم کتاب الفتن باب ذکر الدجال)

      اسی طرح مہدی کی راہ ہموار کرنے والی جماعت کا تعلق بھی مشرق ہی سے بیان کیا گےا ہے۔ (ابن ماجہ کتاب الفتن باب خروج المہدی)

      مندرجہ بالا احادیث میں آنے والے موعود کا مقام ظہور دمشق سے مشرق (یعنی ہندوستان) بتایا گیا ہے اور حضرت بانی جماعت احمدیہ مدعی مسیحیت و مہدویت کا مقام ظہور قادیان ہندوستان دمشق سے مشرق کی جانب واقع ہے۔

      مسیح موعود کے زمانہ کی علامات

      (۱) دابۃ الارض
      امام مہدی کے زمانہ کی ایک علامت دابۃ الارض بیان کی گئی ہے۔(مسلم کتاب الفتن باب فی الاٰیات التی تکون قبل الساعۃ)

      دابۃ کے معنی جانور یا کیڑا کے ہوتے ہیں علامہ توربشتی متوفی ۶۳۰ھ نے اس سے طاعون کا کیڑا مراد لیا ہے۔(عقائد مجددیہ الصراط السوی ترجمہ عقائد توربشتی از علامہ شہاب الدین توربشتی منزل نقشبندیہ کشمیری بازار لاہور)

      اس زمانہ میں حضرت مرزا صاحب نے اللہ سے علم پاکر طاعون کی پیشگوئی فرمائی جس کے مطابق طاعون سے ایک ایک ہفتہ میں تیس تیس ہزار آدمی لقمہء اجل بن گئے اور لاکھوں افراد طاعون کا شکار ہوئے۔

      (۲)۔ یاجوج ماجوج کا خروج
      مسیح موعود کے زمانہ کی ایک علامت یاجوج ماجوج کا خروج ہے۔ (مسلم کتاب الفتن باب ذکر الدجال)

      یاجوج ماجوج دجال کا سیاسی بہروپ ہے جس کے معنی آگ سے کام لینے والی طاقتوں کے ہیں۔ آج کی طاقت ور اور ترقی یافتہ مغربی اقوام ہی یاجوج ماجوج ہیں۔ چنانچہ شاعرِ مشرق علامہ محمد اقبال نے لکھا۔

      کھل گئے یاجوج اور ماجوج کے لشکر تمام

      چشم مسلم دیکھ لے تفسیر حدب ینسلون

      (۳) غیر معمولی زلازل کا آنا
      اسی طرح حدیث میں آخری زمانہ کی علامت میں مشرق اور مغرب اور عرب میں خسف ہونا بیان کیا گیا ہے۔ (مسلم کتاب الفتن باب فی الایات التی تکون قبل الساعۃ)

      یہاں خسف سے مراد خوفناک زلزوں کا آناہے اور حضرت بانی جماعت احمدیہ کے زمانہ میں یہ علامت بھی پوری ہوئی اور آپ کی بیان کردہ پیشگوئیوں کے عین مطابق ایسے ایسے خوفناک زلزلے آئے کہ زمین تہہ و بالا ہو گئی اور ہزاروں افراد ہلاک ہوئے۔

      (۴) جدید سواریوں کی ایجاد
      قرآن کریم میں آخری زمانہ کی ایک علامت اونٹنیوں کا متروک ہونا بھی بیان کی گئی ہے۔ (التکویر:81:5)

      اسی طرح حدیث میں مسیح موعود کے زمانہ کی ایک علامت یہ بیان کی کہ اونٹوں کا استعمال (تیز رفتاری کے لئے) متروک ہو جائے گا۔(مسلم کتاب الایمان باب نزول عیسیٰ بن مریم)

      مسیح موعود کے زمانہ میں یہ علامت بھی پوری ہو چکی ہے اور گزشتہ ایک صدی سے جدید سواریاں‘ موٹریں ریل اور جہاز وغیرہ ایجاد ہوئے۔ اور مسیح موعود کے زمانہ میں ظاہر ہونے والے دجال کے گدھے سے بھی یہی سواریاں مراد ہیں جیسا کہ احادیث میں بیان فرمودہ تفصیلی علامات سے ظاہر ہے۔

      مسیح موعود اور مہدی معہود کے کام
      احادیث میں مسیح اور مہدی کے کام بھی ایک جیسے بتائے گئے ہیں جس سے معلوم ہوتا ہے کہ مسیح اور مہدی ایک ہی شخص کے دو لقب ہیں۔

      (۱) حکم عدل
      بخاری کتاب الانبیاءباب نزول عیسیٰ میں روایت ہے کہ :مسیح موعود حکم اور عدل بن کر آئے گا۔ مراد یہ ہے کہ وہ انصاف کے ساتھ امت کے مذہبی اختلافات کا فیصلہ کرے گا۔چنانچہ حضرت بانی جماعت احمدیہ نے امت مسلمہ میں موجود اختلافات کا حل پیش فرمایا اور ایسی جماعت تیار کر دی جس نے تمام اختلافات ختم کر کے اتحاد و یگانگت کا بے مثال نمونہ پیش کیا۔

      (۲) کسر صلیب
      وہ کسر صلیب کرے گا۔ یعنی عیسائی مذہب کا جھوٹ ظاہر کر دے گا۔ اس سے یہ بھی پتہ چلتا ہے کہ الٰہی تقدیر میں مسیح موعود کی آمد عیسائیت کے غلبہ کے زمانہ میں مقدر تھی اسلام کو مسیح موعود نے دلائل و براہین سے عیسائیت پر غالب کر دکھانا تھا۔ چنانچہ حضرت مرزا غلام احمد قادیانی مسیح موعود و مہدی معہود نے عیسائیت کے خلاف ایسی عظیم الشان خدمات سر انجام دیں جن کا اعتراف کرتے ہوئے مولوی نور محمد صاحب نقشبندی نے یہاں تک لکھا کہ حضرت مرزا صاحب نے عیسائیت کے خلاف ایسے عظیم الشان دلائل پیش کئے کہ ہندوستان سے لے کر ولایت تک کے پادریوں کو شکست دی۔(دیباچہ از مولوی نور محمد نقشبندی قرآن شریف مترجم۔ نور محمد آرام باغ کراچی)

      (۳) قتلِ خنزیر
      خنزیر کو قتل کرے گا۔ یعنی دشمنانِ اسلام کو علمی میدان میں شکست دے کر غلبہ حاصل کرے گا۔ کیونکہ حدیث میں آخری زمانہ کے علماءسوءکو بھی ان کے بد خصائل‘ نقالی‘ بد عملی اور جھوٹ کے باعث بندر اور سؤر کے الفاظ سے یاد کیا گیا ہے۔(کنز العمال جلد نمبر۷ صفحہ۲۸۰ حدیث۳۸۷۳۷ حلب)

      یہ کارنامہ بھی حضرت بانی جماعت احمدیہ نے سر انجام دیا اور تمام مذاہب کے بڑے بڑے لیڈروں کو علمی اور روحانی میدان میں اسلام کا مقابلہ کرنے کی دعوت دی اور اسلام کی فوقیت کو ظاہر کیا۔

      (۴) التواءقتال
      مسیح موعود کا ایک کام یضع الحرب لکھا ہے۔(بخاری کتاب الانبیاءباب نزول عیسیٰ)

      یعنی وہ جنگ کو موقوف کردے گا جس سے مراد یہ ہے کہ مسیح موعود مذہب کی خاطر جنگ نہیں کرے گا۔ حضرت بانی جماعت احمدیہ کے زمانہ میں چونکہ اسلام کے خلاف تلوار کی بجائے قلم اور دلائل سے حملے کئے جارہے تھے اس لئے آپ نے اسلام کے دفاع اور اس کی برتری کے لئے بالمقابل قلمی جہاد کیا اور جہاد بالسیف کی شرائط مفقود ہونے کی وجہ سے حدیث کے عین مطابق اس کے التواءکا اعلان فرمایا۔

      (۵) تقسیم اموال
      وہ مال تقسیم کرے گا مگر کوئی اسے قبول نہیں کرے گا۔(بخاری کتاب الانبیاءباب نزول عیسیٰ)

      مراد یہ ہے کہ وہ قرآنی معارف اور دین کے حقائق کو بیان کرے گا مگر دنیا انہیں قبول نہیں کرے گی۔ چنانچہ حضرت بانی جماعت احمدیہ نے قرآنی معارف اور حقائق پر مشتمل 84 سے زائد کتب لکھ کر روحانی خزائن دنیا میں تقسیم کئے لیکن دنیا کے لوگ اس سے دور بھاگتے ہیں۔

      (۶) قتلِ دجال
      مسیح موعود کا ایک کام دجال کا مقابلہ کر کے اسے ہلاک کرنا تھا۔ (مسلم کتاب الفتن باب ذکر الدجال)

      دجال سب سے زیادہ جھوٹ بولنے والے کو کہتے ہیں اور اپنی کثرت سے ساری زمین پر پھیل جانے والے اور سامانِ تجارت سے روئے زمین کو ڈھانک دینے والے گروہ کو بھی دجال کہا گیا ہے۔ (لسان العرب)

      یہ صفات عیسائی قوم کے دینی علماءمیں بدرجہ اتم موجود ہیں جنہوں نے حضرت عیسیٰ کو خدا بنا کر سب سے بڑے جھوٹ کا ارتکاب کیا اور اپنے دجل کا جال ساری دنیا میں پھیلا دیا۔ چنانچہ حضرت بانی جماعت احمدیہ نے اس دجال کا خوب مقابلہ کیا اور اسے شکستِ فاش دی۔

      (۷) مسیح موعود کا حج
      حدیث میں مسیح موعود کے حج کرنے کی پیشگوئی بھی موجود ہے ۔(بخاری کتاب الانبیاءباب واذکر فی الکتاب مریم)

      جس سے مراد کعبہ کی عظمت کا قیام اور اسلام کی حفاظت ہے جیسا کہ آنحضرت ﷺ نے رویاءمیں مسیح کو دجال کے ساتھ طوافِ کعبہ کرتے دیکھا جس کی تعبیر یہ کی گئی کہ مسیح موعود کی بعثت کی غرض کعبہ کی عظمت اور اسلام کی حفاظت ہوگی۔(مظاہر الحق شرح مشکوٰۃ المصابیح جلد۵ کتاب الفتن باب علامات القیامۃ)

      چنانچہ مسیح موعود علیہ السلام کو اسلام کی خدمت کی یہ توفیق بھی خوب عطا ہوئی۔

      مہدی کی سچائی کے دو نشانات
      حدیث میں مہدی کی سچائی کے دو نشانات رمضان کے مہینہ میں خاص تاریخوں پر چاند اور سورج کو گرہن لگنا تھا۔(دار قطنی کتاب العیدین باب صفۃ الخسوف والکسوف)

      چنانچہ مشہور اہل حدیث عالم حافظ محمد لکھو کے والے ان نشانات کی تاریخوں کا یوں ذکر کرتے ہیں۔

      ”تیرھویں چن ستیویں سورج گرہن ہوسی اس سالے“ (احوال الاخرت منظوم پنجابی مصنفہ ۱۳۰۵ھ صفحہ۲۳ زیر عنوان علامات قیامت کبریٰ)

      چنانچہ یہ نشان اس حدیث کے عین مطابق رمضان ۱۳۱۱ھ بمطابق ۱۸۹۴ءمیں معینہ تاریخوں پر ظاہر ہوا اور حضرت مرزا صاحب نے بڑی شان اور تحدی سے اسے اپنے حق میں پیش کرتے ہوئے لکھا:۔

      ”ان تیرہ سو برسوں میں بہتیرے لوگوں نے مہدی ہونے کا دعویٰ کیا مگر کسی کے لئے یہ آسمانی نشان ظاہر نہ ہوا …. مجھے اس خدا کی قسم ہے جس کے ہاتھ میں میری جان ہے کہ اس نے میری تصدیق کے لئے آسمان پر یہ نشان ظاہر کیا ہے“۔ (تحفہ گولڑویہ روحانی خزائن جلد۱۷ صفحہ۱۴۲۔۱۴۳)

  22. NOW return back to the mirza ghulam ahmed qadiyani……
    the whole denial of the greatness of an exalted prophet(pbuh) is based on one thing….Mirza claimed that he is the promissed messiah……
    this claim is such a ridiculous and disgusting that it can’t even attaract a moron.
    was he really a prophet( nauzu billah)? AND THE ANSWER IS VERY INTERESTING AND MORE FUNNY.
    we need to search through his own writing….
    we have discussed the prophecies(ahadith) of Nabi e Kareem(saww) NOW LET’S DISCUSS SOME PROPHECIES OF mirza ghulam ahmed qadiyani:

    mirza was very found of debating cristians To support his claim of being the Promised Messiah, Mirza Ghulam often engaged in debates with little known Christians. In 1893, Mirza Ghulam challenged Mr. Abdullah Khan Atham, a retired deputy commissioner and a Christian, to a debate to prove the truthfulness of either religion. In his challenge to Mr. Atham, Mirza Ghulam boasted:
    “I agree that if the signs of my truthfulness are not shown, I will admit that I am not from God and will give up Islamic faith or will surrender half of my wealth for propagation of Christianity.”
    (Roohany Khazaen, Vol. 6, P. 48-49)
    “I swear upon God that God told me ‘Whatever was given to the Messiah (Jesus) has been given to you and you are the Promised Messiah’.”
    (Roohany Khazaen, Vol. 6, P. 49)

    The debate between Mirza Ghulam and Mr. Atham commenced on May 22, 1893 and went on till June 5, 1893. Toward the end of the debate, Christians brought one blind, one deaf, and one paralyzed individual to the debate and challenged Mirza Ghulam to cure them as Jesus(pbuh) had done! Naturally, Mirza was not able to cure any of them.
    (Roohany Khazaen, Vol. 6, P. 291)

    Mirza Ghulam Qadiani offered such a weak argument against Mr. Atham and was so badly humiliated that both Muslims and Christians were openly admitting the failure of Mirza to prove the truthfulness of Islam. (Roohany Khazaen, Vol. 9, P. 25) Several Qadianis were even reported to have converted to Christianity, as the result of Mirza Ghulam’s loss.
    (Roohany Khazaen, Vol. 9, P. 28, footnote)

    Having been so badly defeated, Mirza Ghulam resorted to one of his old tricks. On June 5, 1893, he announced that the night before he has received a Grand Prophecy from Allah(SWT). He said:

    “When I humbly entreated and implored God Almighty and prayed to Him to show me the details of the matter, He indicated to me that the liar will die within 15 months (before September 5, 1894), provided he does not return to the truth (Islam); and he who is on the truth and believes in true God, his honor will be restored and when this prophecy is fulfilled some blind man will start seeing, paralyzed start walking, and deaf start hearing. I admit that if this prophecy proves to be False, I am prepared for every punishment. My face should be blackened and I should be hanged. I swear by the Mighty Allah that what I have said will happen. It must happen. It is possible that the earth may be changed for another earth and the sky may be replaced by another sky, but it is not possible for God’s word to change — prepare for me a cross if my falsehood is exposed and curse me more than the Satans and the evil persons are cursed.”
    (Roohany Khazaen, Vol. 6, P. 292-293; Jang-i-Maqaddas, P. 188)
    We need to keep in mind that Mr. Atham was already sixty six (66) years old, at the time of this prophecy. During the next 10 months, several attempts on Mr. Atham’s life were made: someone fired a shot at him, a cobra was found in his house, people tried to break the door to his bedroom, etc. (Roohany Khazaen, Vol. 13, P. 163)
    Yaqub Ali Qadiani in his book titled the Life of the Promised Messiah recounted:

    “When the last day of the period appointed for Atham dawned, the faces of the Qadianis were pale white and their hearts were perturbed. Some of us had laid bets with the opponents on the death of Abdullah Atham. A sense of dismay and depression prevailed….”
    (Sirat-ul-Mehdi, P. 7)

    Yet, the sun rose and Mr. Atham had not died! Many Qadianis were agitated by these failed prophecies, some even gave up on their faith. Mirza Ghulam, once again, gathered his remaining supporters and gave them a sermon on the meaning of tests and trials. Some accepted his explanation and forgot the failure of the prophecies he had attributed to Allah(SWT). On the other hand, the Christians celebrated the failure of Mirza Ghulam in Amristar (a city in India) and carried Mr. Atham around in a victory march. To them, Mirza Ghulam’s loss equated the loss of Islam. (Al-Hukam of Qadian, September 7, 1923, by Rahim Buksh Qadiani)

    In a last attempt to save face, Mirza Ghulam and some of his close associates suggested that, since the prophecies had not come to pass, Mr. Atham must have turned his back on Christianity and become a Muslim! (Roohany Khazaen, Vol. 9, P. 2)

    WHILE In an announcement published in the newspaper Wadadar on September 15, 1894, Mr Atham declared:

    “I invite your attention to the prophecy of Ghulam Ahmad about my death. I inform you that, by the grace of God, I am safe and sound. I have heard Ghulam Ahmad alleging that I have turned my back on Christianity. I proclaim that this is a lie. I was a Christian and I ever remained a Christian and I thank God that He made me a Christian…”
    (Wafadar, Lahor, September 15, 1894 – not a Qadiani
    paper)

    Muhammad Ali Khan, the son-in-law of Mirza Ghulam, in a letter to Mirza Ghulam expressed his dismay and concern for the clear loss and failure of all the prophecies:

    “Respected Maulana, May God keep you safe!
    Peace and Mercy of Allah on you.

    Today, is the 7th of September, while the last day of the fulfillment of the grand prophecy was the 5th of September. I shall not repeat the words of the prophecy. I shall, however, mention the words of your revelation – ‘Now I promise before God that if my prophecy is proved to be a false one and the liar does not die within the period of fifteen months and is not plunged into Hell, I am prepared for my punishment By God, it will so happen. The earth and the heavens might be shaken from their place but the promise of God is unshakable.’ Was this prophecy fulfilled according to Mirza Sahib’s description? No – Never. Abdullah Atham is safe, sound, and alive and is not punished by dead to be flung into Hell. I do not consider any other interpretation is possible for this prophecy than what it clearly meant to be. It, however, sounds very ugly that every prophecy is misunderstood and had to be elaborately interpreted to be rightly understood. At the birth of a child, for instance, it was named Bashir (harbinger of good tidings) for good omen, and when it died, you said the matter was misunderstood. As for the prophecy concerning Atham, it has given birth to the very master piece of distortion and interpretation.”
    (Aina-e-Haq Numa, P. 100-101, Published by Yaqub Ali Qadiani)

    Once more, let’s review the failed prophecies which Mirza Ghulam attributed to Allah(SWT), in regard to Mr. Atham:

    Mr. Atham will accept Islam;
    Mirza Ghulam has been given all the capabilities given to Jesus(pbuh);
    Mr. Atham will die by September 5, 1894;
    A blind man will start seeing, a paralyzed person will start walking, and deaf individual will start hearing;
    The sun on the last day of the 15th month (September 5, 1894) will not set until Atham dies;
    The sun will not rise and Atham will be dead.
    It is unfortunate that Mirza Ghulam has already died. If he were alive now in an Islamic state (not protected by British forces), Muslims would have done as he suggested. They would have blackened his face and hung him as he had requested.

    Do you have any doubt that Mirza Ghulam Qadiani was a grand fabricator?

  23. Asslamualaikum Manittaba’al Huda

    It was indeed an absurd act on the part of the government to declare Qadiyani’s as non-muslims, they should have remained captioned as murtideen, Muslims might have finished them off already by now :)……. These wanna-be Muslims fail to understand this repercussion of being declared a Muslim, once you enter the territory, you will be judged by Muslim Laws, i.e. Death

    I think Lutf of YLH must have forgotten this…..

    Anyways…..
    @ all other People: leave the Qadiyanis be…. May Allah grant them hidayah

    @ Kashif Hafeez

    The article is well written, congrats on that but

    “Great minds discuss ideas. Average minds discuss events. Small minds discuss people” – Anonymous

    People want you to represent them, represent yourself sometime later, we need leaders here brother, and we need solutions to problems you have identified.

    This media war will never end, it is taking alot of your precious time….. think about it!

    A clear indication of the waste of your time and space is Lutf / YLH’s lengthy comments(writing nested articles, is one of YLH’s favorite past time), which are directed to make a non-issue an issue! …… I hope you understand my point

  24. SOME MORE FALSE PROPHECIES OF THE FALSE PROPHET:

    On June 14, 1899, Mirza Ghulam’s wife gave birth to a baby boy, whom they called “Mubarak Ahmad”. Within a few days of the birth of this son, Mirza Ghulam declared:

    “This lad is indeed a Spark of the Light of Allah, the promised reformer, the owner of greatness and authority, possessor of healing breath like the Messiah, curer of diseases, a word of God and a lucky person. His fame will spread to the four corners of the world, he will set prisoners free and through him all nations will be blessed.”
    (Tiryaq-ul-Qulub, P. 43)
    In 1907, when he was only eight years old, this boy fell ill. Concerned that all these prophecies were linked to the livelihood of the boy, Mirza Ghulam had the best treatment available administered to the boy. The boy recovered from his illness and, on August 27, 1907, Mirza made the following statement:

    “God has revealed to me that He has accepted the prayer and the illness is cured. It means that God has accepted my prayer and Mubarak Ahmad will get well.”
    (Badr, August 29, 1907)
    No sooner had he attributed this statement to Allah(SWT), that Mubarak Ahmad fell ill again and died, on September 16, 1907. (Sirat-ul-Mehdi, P. 40; Alfadl, October 30, 1940)

    Mirza’s false statements were once more exposed. Obviously, Mirza Ghulam was attributing falsehood to Allah

  25. FALSE PROPHECIES OF THE FALSE PROPHET
    Mirza Ghulam Qadiani’s predictions on Plague & Cholera:

    Regarding the plague which was ravaging in the Indian Province of Punjab, Mirza Ghulam said:

    “He is the truthful God who has sent His Apostle to Qadian. He shall protect and defend Qadian against plague even though it will be on the rampage for seventy years, for Qadian is the dwelling place of His Apostle and in this are signs for nations.”
    (Dafi-ul-Bala, P. 10-11)
    However, even though the cities neighboring Qadian were not affected by the plague, Qadian was ravaged by the plague for almost one year. In a letter to his son-in-law, Muhammad Ali Khan, Mirza Ghulam wrote:

    “Plague here is in its worst form. A person dies within hours after he is infected by it. God alone knows when will this extreme trial end… Please bring with you a big package of phenol nephthaline whose price is about twenty rupees. Also send phenol for your own house.”
    (Maktubat-i-Ahmadiyya, Vol. 5, P. 112-113)
    In another letter to his son-in-law, Mirza admitted that the plague had entered his house:

    “Plague has not spared even our own house. The elderly Ghausan (an elderly woman) was afflicted by it. We expelled her from the house. Ustad Muhammad Din was also struck with plague. We turned him out too. Today, another woman who was visiting us and had come from Delhi was also struck with plague. I also fell seriously ill and I felt that between me and death were only a few seconds.”
    (Maktubat-i-Ahmadiyya, Vol 5, P. 115)
    This is even thought Mirza Ghulam had prophecised about Qadian and his house:

    “And in this is a sign for nations.”
    “Indeed my house is like the Arc of Noah. Whosoever enters it is immune against calamities and misfortunes.”
    (Safina-i-Nooh, P. 26)
    Mirza Ghulam’s prophecy regarding the sanctity of his house, the safety of Qadian, and the plague were all shown to be false. The plague was indeed “a sign for all nations”! It was the sign of Mirza Ghulam’s falsehood and lies against

  26. FALSE PROPHECIES OF THE FALSE PROPHET
    Mirza Ghulam Qadiani’s predictions on Son to a Follower (A REALLY FUNNY STORY)

    Manzoor Muhammad, one of the close followers of Mirza Ghulam, informed him that his wife had conceived. Upon hearing this, Mirza Ghulam stood up and announced:

    “We saw in a dream that a son was born to Manzoor Muhammad. We asked about his name. The state of the dream changed into the state of revelation. It was said: ‘Bashir-ud-Daula’ (the harbinger of kingdom). But, I do not know what is meant by Manzoor Muhammad.”
    (Review of Religions, P. 122, March 1906)
    Obviously, Mirza Ghulam was learning from his prior failed attempts at making prophecies. By suggesting that ‘Manzoor Muhammad’ would have been another individual, he had left room to save face. However, Allah(SWT)’s plan was to expose Mirza Ghulam’s untruthfulness once more and give his followers another sign that they had been diverted from the right path. Only four months later, Mirza Ghulam once again announced:

    “We have been informed that it is this same Manzoor Muhammad specified in the revelation. A son will be born to him from his current wife and he will be named ‘Bashir-ud-Daula’. It is possible that the boy is not born of this pregnancy but from the next. It is, however, inevitable that he will be born, as he is the sign of God…”
    (Review of Religions, June1906)
    “I received revelation that … Manzoor Muhammad and his wife shall have a son whose name shall be ‘Bahir-ud-Daula’.”
    (Roohany Khazaen, Vol. 22, P. 103)

    Once again, Mirza Ghulam had tried to make his prophecy failure proof by suggesting that the boy might be born in a subsequent pregnancy. However, he planned and Allah(SWT) also planned, and Allah(SWT) is the best of planners. Unknowingly, Mirza Ghulam had planted the seed which would expose his falsehood once more.

    In July 1906, Manzoor Muhammad’s wife gave birth to a daughter. Stubbornly, Mirza Ghulam prophecised:

    “Manzoor Muhammad’s wife shall not die unless she gives birth to this noble son and until the prophecy is fulfilled.”
    (Review of Religions, June 1907)
    Once again, he was shown to be fabricating lies against Allah(SWT). Indeed, Manzoor Muhammad’s wife never conceived again and died without ever delivering the prophecised son. Allah(SWT) had made this another sign of Mirza Ghulam’s false claims for those who really believe. But, did most Qadianis revert back to Islam? No! They had closed their minds and Allah(SWT) sealed their hearts for their arrogance. The Qadiani leadership instead declared:

    “God knows when and how will this prophecy come true as his holiness had given the news of its fulfillment through Manzoor Muhammad’s wife who has died…”
    (Al-Bushra, Vol. 2, P. 116)
    Satan is always at work. Isn’t it sad to see unfortunate people abandon faith, arrogantly refute the signs sent to them by Allah(SWT), and try to explain away the repeated failures of Mirza Ghulam?

  27. ohhhh come on man.
    this is not fair.
    you have copied and pasted a huge stuff… why running this time.
    the honor of your prophet is on stake…do not run by giving some god damne links.
    i want here . i want now.
    i want answers of all my allegations…
    NOW

    • i think it is your honour at stake. you have to read the replies to your allegations and then tell me who is lying.

  28. All participants will agreed with me that now the debate is hot & have tilt towards inter religious debate.

    I suggest it should stop now.

    Thanks

    Kashif Hafeez

    • The credit goes to sirkari right wing musalmaans here who have to resort to cheap tricks to divert our attention from the issues of human and civic rights and change it into a religious debate.

      That is where right wing Pakistanis have failed their country.

  29. dear kashif siddiqi sahib!!!!!!
    as you wish.i also do not want to continue this non sense discussion.

  30. Jazak Allah Kashif bhai

    سُوۡرَةُ البَقَرَة
    بِسۡمِ ٱللهِ ٱلرَّحۡمَـٰنِ ٱلرَّحِيمِ

    جو لوگ کافر ہیں انہیں تم نصیحت کرو یا نہ کرو ان کے لیے برابر ہے۔ وہ ایمان نہیں لانے کے (۶) خدا نے ان کے دلوں اور کانوں پر مہر لگا رکھی ہے اور ان کی آنکھوں پر پردہ (پڑا ہوا) ہے اور ان کے لیے بڑا عذاب (تیار) ہے (۷) اور بعض لوگ ایسے ہیں جو کہتے ہیں کہ ہم خدا پر اور روزِ آخرت پر ایمان رکھتے ہیں حالانکہ وہ ایمان نہیں رکھتے (۸) یہ (اپنے پندار میں) خدا کو اور مومنوں کو چکما دیتے ہیں مگر (حقیقت میں) اپنے سوا کسی کو چکما نہیں دیتے اور اس سے بے خبر ہیں (۹) ان کے دلوں میں (کفر کا) مرض تھا۔ خدا نے ان کا مرض اور زیادہ کر دیا اور ان کے جھوٹ بولنے کے سبب ان کو دکھ دینے والا عذاب ہوگا (۱۰)

  31. brothers and sisters. do follow the links. i am sure these valueable sites help you avoidng the deception and forgery of lqadiyanis
    http://www.irshad.org/exposed.php
    http://alhafeez.org

  32. @ Mr Lutf.

    I feel so sorry for you! . get a life ok.
    you are not a muslim and please dont say Qadianis are muslims.
    I cannot belive that in this day and age people like you (Ahmedis) have a pardah in front of their mind and eyes.
    i hope Allah shows you the right path.

  33. I am totally agree with

    Jawwad bhai

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: