Kashif Hafeez Siddiqui

ظلم کی کوئ حد ہے

In Urdu Columns on January 18, 2018 at 3:26 pm

غم زدہ باپ کہتا ہے کہ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ اکلوتے بیٹے نے عصر کی نماز پڑھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چائے پی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ماتھا چوما اور بولا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دوستوں کے ساتھ کھانا وغیرہ کھا کر آتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پھر ہوا یوں کہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کسی موڑ پہ پولیس کے رکنے کا اشارہ بقول پولیس اس نے نہ جانے کیوں اگنور کردیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مستعد پولیس اہلکار جو ہر قاتل و ظالم کو پکڑ لیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فورا ایکشن میں آکر۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گاڑی پہ فائرنگ کر دیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ براہ راست گاڑی پہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ براہ راست ڈرائیور پہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نہ کسی ٹائر پہ اور نہ ہی کوئ Chase ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بس ٹھائیں ٹھائیں ٹھائیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ پولیس والے سادہ لباس میں تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پھر ۲۲ سالہ انتظار کی لاش ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بلکتی ماں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دہائیاں دیتا باپ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اکلوتا بیٹا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اب قبر میں آسودہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایف آئ آرنامعلوم افراد کے خلاف ہے

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

w

Connecting to %s

%d bloggers like this: