Kashif Hafeez Siddiqui

Archive for the ‘Books & literature’ Category

کرائسز گروپ کی “اسلامی جماعتوں” پر رپورٹ – حصہ دوم

In America, Anti Ahmadiies, Books & literature, I Hate USA, pakistan, Pakistan History, Pakistan's Ideology on January 21, 2012 at 8:18 pm

My New Book – سیکولر اور لبرل لابی کا نصاب تعلیم پر کاری وار”

In Books & literature, Clsh of Civilizations, Curriculum, Islam - A Study, pakistan, Pakistan History, Pakistan's Ideology on December 16, 2011 at 9:33 am

Alhamdulilah, my latest book with the title of ” سیکولر اور لبرل لابی کا نصاب تعلیم پر کاری وار” has been published & available in 7th Karachi International Book Fair & Academy Book stall in Hall # 01.

This book is based on my series of articles published in December 2010 & January 2011 on Curriculum. Hope you will find it useful 🙂

The reading of this research work is extremely important & vital for teachers & specially the parents who are preferring convent education systems for their children.

after reading this book, you will come to know what is happening at curriculum front by secular & liberal lobby.

اب ایسی اردو کہاںسے لاءیں

In Books & literature, Curriculum, pakistan, Urdu Columns on June 13, 2011 at 2:02 am

فیض احمد فیض، جنہیں میں نے جانا

In Books & literature, Clsh of Civilizations on February 23, 2011 at 2:48 am

Book Exhibition at Karachi Expo – December 24th to 28th

In Books & literature on December 21, 2010 at 12:38 pm

The Annual Book Exhibition –  Karachi Expo – From December 24th – 28th 2010

My All Seven books are available at discounted Price

Stall Name : Academy Book Center , Hall No 3 –  Stall No 20-21

Jinnah: Secular Or Islamist?

In Books & literature, Pakistan's Ideology on May 7, 2010 at 6:29 am

By Talha Muhiuddin

A man who spoke in English and lived a westernized life, did seek a modern Muslim Pakistan.  Why deny Pakistan’s religious [not extremist] identity?

Interview with Saleena Karim, author of a most important book on Quaid-e-Azam, “Secular Jinnah: Munir’s Big Hoax Exposed”.  Saleena Karim is also the founder and director of Jinnah Archive, world’s first comprehensive digital library on Quaid-e-Azam. This is a must read interview.

One of the most famous books in Pakistan, the late Chief Justice Muhammad Munir’s From Jinnah to Zia (1979) has finally received the ultimate rebuttal from a British-born Asian – using only one piece of evidence. Saleena Karim tells the story of how a point of curiosity – based on little more than an issue of grammar – led her to the startling discovery that a quote used by Munir and attributed to Jinnah is in fact a fake. Furthermore this quote has also been used by a number of Pakistani professional writers and scholars, none of whom have thought to check the original transcript of the interview Munir supposedly quoted from.

Over twenty-five years after the release of From Jinnah to Zia, the author shows us how much damage the ‘Munir quote’ has done – not only in terms of twisting the facts of history, but now in exposing the intellectual dishonesty of Pakistani scholarship. Saleena Karim names those who have quoted Munir, as well as discussing the other myths about the founder of Pakistan, Mohammad Ali Jinnah, and sets the record straight.

“The new state would be a modern democratic state with sovereignty resting in the people and the members of the new nation having equal rights of citizenship regardless of religion, caste or creed.” Mr. Munir claims that these are the words of the Quaid from an interview to Reuters’ Doon Campbell. In reality these words appear nowhere in that particular interview, and in fact they appear nowhere at all (I spent years checking)”

Q) Please tell us briefly about yourself, your education and background.

A) I am a writer born and brought up in the UK. Almost as soon I learned to read, I wanted to write. When I went to Loughborough University I wanted to take a degree in publishing, but for reasons that are not worth mentioning here, I ended up studying Human Biology and obtained a BSc. I had no interest in pursuing a career in my subject area, so I followed my instinct and began writing part-time. At first I was mostly translating short articles mostly on Islam (Urdu-English), and also started a work of fiction, but I became a full-time writer after I wrote Secular Jinnah: Munir’s Big Hoax Exposed in 2005. As a child I was brought up with religious values and always considered myself a spiritual individual. As I grew older I began to question some of our traditional religious teachings and began to study Quranic principles in depth. I became very interested in Islamic philosophy and in particular, ethics, and this study helped me in ways I cannot even begin to describe.

Q) How did you get interested in the life of Quaid-e-Azam, and what inspired you?

A) Until a few years ago I knew relatively little about the Quaid-i-Azam but accepted he was a hero of Islamic history by default. My father got me interested in his life originally, but I only learned about him in detail after I began work on Secular Jinnah. I was inspired in the first instance by Mr. Jinnah’s speeches, which I later referred to as a first-hand resource on his thinking.

Q) The readers want to know what is it that Justice Munir has said in his book that is either wrong or controversial about Quaid-e-Azam?

A) In short, there is a statement that the late Chief Justice Munir quoted in his book From Jinnah to Zia. It reads:

“The new state would be a modern democratic state with sovereignty resting in the people and the members of the new nation having equal rights of citizenship regardless of religion, caste or creed.” Mr. Munir claims that these are the words of the Quaid from an interview to Reuters’ Doon Campbell. In reality these words appear nowhere in that particular interview, and in fact they appear nowhere at all (I spent years checking). In the first edition of my book I explained that since 1979 (when Mr. Munir’s book was released) right up until the present no one had spotted that the quote was a fake. Since then I have learned that the quote has its origins not in 1979, but in the famous Munir Report of 1953. That’s the short story, but in my book I went into much more detail about how this quote has became the favourite amongst even the best-known commentators on Mr. Jinnah to try and undermine his stated cause.

Q) What inspired you to write a rebuttal to Munir’s book?

A) It may sound trivial to go after just one fake quote, but I was inspired to write my rebuttal because of it. When I first encountered the Munir quote in From Jinnah to Zia, I did for a short time wonder whether the Quaid was a true secularist after all. I pursued the original source of the Munir quote purely to find out the truth. But this was before I obtained the original transcript of the interview. If the Munir quote had turned out to be real, I would definitely have accepted and argued that Mr. Jinnah was a secularist – but that would still have had no bearing on my personal thoughts regarding the Pakistan idea. In the beginning I intended to write just a short article detailing the finding, but my research soon showed that Mr. Munir’s quote (which I now call the ‘Munir quote’) has had an astonishing impact on scholarship. Admittedly, I myself found it difficult to believe at first, but I knew I had to write a book.

Q) Tell us about your book. How come it got such high praise from various sections of the readers’ community?

A) Other than exposing the damage done by the Munir quote, my book argued in favour of a ‘Muslim’ rather than a ‘secular’ Jinnah. I have put quotes around these words because I’m aware that they tend to mean different things to different people. The biggest problem in fact, is the meaning and use of words like ‘secularism’, ‘Islam’, ‘sovereignty’, ‘ideology’, etc. But insofar as there are two broad camps arguing over Mr. Jinnah, my research convinced me to side with the much-misunderstood ‘Muslim Jinnah’ camp. To my mind Quaid-i-Azam does not fit into the ‘secular’ category, and I explained why in the first book. I also discussed some of the myths surrounding Mr. Jinnah. The number of people actively backing the ‘Muslim Jinnah’ argument is currently dwindling. This I suspect is part of the reason that my book was well-received by the readership, who probably felt that a new entry from this side was long overdue.

Q) Did Quaid-e-Azam want to create a secular Pakistan or a Pakistan based on Islamic principles?

A) This is the big question. Mr. Jinnah certainly did not tire of talking about Islamic democracy and Islamic socialism. In my book I showed that there are literally hundreds of references to Islamic terminology and principles in Mr. Jinnah’s speeches. Additionally, whilst he stressed the absolute equality of non-Muslim citizens in Pakistan, he never once used the word ‘secular’ to describe the country. There is also some evidence lying around which shows that there were non-Muslims who properly understood Mr. Jinnah’s view of Islam, if you know where to look. These facts should really speak for themselves. People arguing for ‘secular Jinnah’ tend to get upset by this argument because they assume that I, or whoever else, is trying to imply that the Quaid was pro-theocracy. They think for instance that we support a class distinction between religious minorities and majorities, or that we advocate the idea of legislation either being written or authorised by ulema. Yet, as every sensible Muslim and especially Pakistani Muslim knows, a state truly guided by Islamic principles is as far removed from theocracy as is an ideal secular state (I might add that there is not one example of either of these states in existence today). The Quaid himself made this point about theocracy versus Islam, which again I showed in my book. The few people who do support such ideas – taken, unfortunately, from fundamentalist literature, rather than the Quran – usually belong to parties that historically were opposed to Partition and Pakistan. So why give their views special attention, and why assume that every ‘non-secularist’ agrees with them?

Q) How would you describe Quaid-e-Azam’s Pakistan? How far are we today as a nation from Quaid’s Pakistan?

A) ‘Quaid-i-Azam’s Pakistan’ as such never had a chance to establish itself. At any rate, it is not right to speak of ‘Quaid’s Pakistan’ when Mr. Jinnah said that it was up to the people and the Constituent Assembly to decide the form of their constitution. But we can safely say that the main difference between Mr. Jinnah’s time and now is that back then, a majority of people truly believed that they would rise out of poverty, be given the chance to educate themselves and then make a positive contribution to the international community, in the name of Islam. Pakistan appeared on the map at a time when the Muslim world was facing a political identity crisis, following the abolition of the Caliphate in Turkey. The end of the Caliphate was necessary, but this left the Muslim world in a void. Many people saw the creation of this new Muslim country as a laboratory where Islam would be established afresh, so to speak, taking account of contemporary political and sociological conditions. For this reason Islam in Pakistan was described as the ‘third way’, representing neither capitalism nor communism, but a form of socialist democracy conforming to Islamic (and thus universal) principles of liberty and justice. There was no question therefore, of recreating an early form of Islamic state which may have had merits in its time but could not be made to work in the twentieth century. Again, exactly how this would work was left up to the people and the Constituent Assembly. The Quaid’s sheer integrity and strength of personality was enough to keep the early leaders of Pakistan together – just. Within a few years of his death however, personal rivalries and a lack of intellectual unity between these same politicians came out into the open, marking the end of ‘Quaid’s Pakistan’ practically before it had begun. Today we see nepotism, despotism, jobbery, and discrimination running rampant in Pakistan – all qualities of the worst type of secular state (not to mention the worst of a theocracy). To even begin to undo all of this, will require first and foremost that the people look within themselves and make a concerted demand that they want things to change. Unity must come first.

Q) What do you think about the new book on Jinnah that Jaswant Singh has just written? Have you read that?

A) I have not read the book, but I have seen the interview in which Mr. Singh described its contents. From what he said there seems to be nothing remarkable or new that hasn’t been said by someone else already. There was an interesting article on this subject by Dr. Waheed Ahmad in Pakistan’s News International recently. He suggests on the one hand that Mr. Singh had courage for challenging the wisdom of certain Congress leaders before Partition. On the other, he mentions that some cynics might question the motives of the author, who is after all a veteran member of a far-right political party. Whom does it suit to be told that Mr. Jinnah never really wanted Partition? Is it not suggestive of a wish to see the two countries reunited as one India? I admit to being one of the cynics.

Q) What is the Jinnah Archive? Is it just a website or some project?

A) The idea behind the Jinnah Archive is to make the speeches of the Quaid-i-Azam easily available online. Most collections of speeches have short print runs and they end up in a few university libraries in random places across the globe. My own difficulty in obtaining collections of speeches when researching Secular Jinnah gave me the idea to try and create a searchable database on the Net. Thereafter I began tracking down and purchasing all the printed collections that I could find, and then I built the website. Some distinguished academics kindly helped by giving permission to make full use of their collections. The whole project is privately funded, is non-profit, and is entirely free to the public. Unfortunately it has been neglected of late because I was working almost completely on my own from the beginning, and other unrelated projects have taken up my time in between. This is however, something I will rectify in the very near future.

Q) How do you want to contribute to Jinnah’s Pakistan?

A) That’s an interesting question. We all should utilise our individual talents to the best of our ability. Mine is writing. I hope that my use of the pen will at least get people to think about the Pakistan idea, and not to give up on it.

Q) How would you describe Jinnah?

A) How does anyone describe an awesome personality such as Mr. Jinnah? He was evidently a man of unswerving integrity, high intelligence, pride, conviction, strength, and with more than a smidgen of dry humour. A true example of a Muslim leader, certainly one of the finest of the twentieth century, if not the finest.

Q) When is the second edition of your book coming out?

A) Soon, though I can’t promise a particular date. It’s close to completion and has already been picked up by a publisher. Unlike the first edition, this one should be made available in Pakistan as well as internationally, in both Urdu and in English languages. It contains much more on the story of Mr. Munir’s literary legacy, and in it I reveal one or two other surprises as well. But I can say no more for now.

This interview is originally posted at PakistanKaKhudaHafiz.com

The 11 Keys to Success

In Books & literature on April 26, 2010 at 11:58 am

By Julie Jansen,

Author of “I Don’t Know What I Want, But I Know It’s Not This”

n his best-selling book “Emotional Intelligence,” Daniel Goleman writes, “There are widespread exceptions to the rule that IQ predicts  success … at best, IQ contributes about 20 percent to the factors that determine life success, which leaves 80 percent to other forces.”

Goleman goes on to explain, “These other characteristics are called emotional intelligence: abilities such as being able to motivate oneself and persist in the face of frustrations; to control impulse and delay gratification; to regulate one’s moods and keep distress from swamping the ability to think; to empathize and to hope.”

This book is full of assessments, tools, resources and how-tos to help guide you in finding new work that will better meet your personal and financial needs. No matter which category you fit in, however, unless you are able to demonstrate and master a specific set of life skills and traits, you will find it difficult to find the work you want.

Observing people in the workplace has yielded 11 keys to success. Time and again, it is apparent that those individuals who exhibit these 11 keys and use them most productively are consistently the most successful and well-liked individuals overall. The good news is that most people are born with at least some of these keys or learned them at a very young age, and all of these keys can be developed or learned later in life.

These are the 11 keys to  success:

1. Confidence: an unshakable belief in oneself based on a realistic understanding of one’s circumstances; a trait that most people admire in others and strive to acquire themselves.

2. Curiosity: being eager to know and learn; always showing interest and giving special attention to the less obvious; always being the person who says, “I want to know more about . . . .”

3. Decisiveness: arriving at a final conclusion or making a choice and taking action; making decisions with determination even when you don’t have all the information you think you need.

4. Empathy: demonstrating caring and understanding of someone else’s situation, feelings and motives; always thinking about what it’s like to walk in someone else’s shoes.

5. Flexibility: being capable of change; responding positively to change; being pliable, adaptable, nonrigid and able to deal with ambiguity.

6. Humor: viewing yourself and the world with enjoyment; not taking life or yourself too seriously; being amusing, amused and, at times, even comical.

7. Intelligence: thinking and working smartly and cleverly; being sharp in your dealings; “not reinventing the wheel”; planning before acting; working efficiently and focusing on quality over quantity. (Important note: This is different from IQ, the common abbreviation for intelligence quotient.)

8. Optimism: expecting the best possible outcome and dwelling on the most hopeful or positive aspects of a situation; believing that the glass is half full rather than half empty.

9. Perseverance: having passion, energy, focus and the desire to get results. Motivation, persistence and hard work are all aspects of  perseverance.

10. Respect: remembering that it is just as easy to be nice; protecting another person’s self-esteem; treating others in a considerate and courteous manner.

11. Self-awareness: a sophisticated form of consciousness that enables you to regulate yourself by  monitoring yourself, observing yourself and changing your thought processes and behaviors.

Which of these keys are among your strengths? Which of the 11 are among your weaknesses? Self-awareness, the 11th key, is really the foundation for understanding yourself. If you are not sure how self-aware you are, ask several people whom you trust which of these 11 keys they believe are your strengths and which are not. Again, while no one person possesses all of these keys in equal amounts, each of them can be developed and improved.

Julie Jansen is the author of “I Don’t Know What I Want, But I Know It’s Not This.” She is a career coach and consultant who is also a frequent speaker at both nonprofit groups and corporations through the United  States.

Source : http://msn.careerbuilder.com

محمدی انقلاب ﷺ

In Books & literature on March 1, 2010 at 11:33 am

حضور نبی پاک محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم کی سیرت کوئی قصہ کہانی نہیں ہے،وہ محض ایک فرد کی داستان بھی نہیں ہے، بلکہ وہ فی الحقیقت ایک ایسے عظیم اور پاکیزہ انقلاب کی کہانی ہے جس کی کوئی مثال تاریخِ انسانی میں نہیں ملتی۔ اس انقلاب کی روداد کا مرکزی کردار نبی اکرم ﷺ کی شخصیت ہے۔ باقی تمام کردار، خواہ وہ ابوبکر و عمر ہوں یا عثمان و علی، جعفر طیار ہوں یا سیدالشہدا جنابِ حمزہ، وہ حضرت بلال ہوں یا یاسرو عمار، اور اسی طرح دوسرے محاذ پر ابوجہل ہو یا ابولہب، عبداللہ بن اُبی ہو یا کعب بن اشرف، خواتین میں سے حضرت خدیجہ ہوں یا جنابِ فاطمہ، حضرت عائشہ ہوں یا جنابِ اُم المساکین اور ان کے مقابل میں زوجۂ ابولہب ہو یا ہندہ جگرخوار___ یہ سب کے سب مرکزی کردار کے یا تو معاون کردار ہیں، یا مخالف۔ ان مختلف کرداروں کے تعاون اور کش مکش کے نتیجے میں تاریخ کا وہ سنہری باب لکھا گیا جس کے ایک سرے سے دوسرے سرے تک آنحضورﷺ کی سیرتِ پاک رچی بسی ہوئی ہے اور مہاجرین و انصار میں اسی کا انعکاس دکھائی دیتا ہے۔ حضورﷺ کی سیرت کو اس کش مکش سے الگ کر کے سمجھا ہی نہیں جاسکتا۔

نعوذ باللہ حضورﷺ نہ تو تارک الدنیا راہب تھے اور نہ ایک محدود اور بے ضرر سا دھرم یا مَت سکھانے آئے تھے۔ آپ کے ذمّے محض پوجا پاٹ کے طریقے بتانے اور چند اخلاقی نصیحتیں اور سفارشیں کرنے کا کام نہ تھا، بلکہ قرآن کی توضیحات کے مطابق آپ کی بعثت کا مقصد یہ تھا کہ خداپرستانہ حکمت اور پاکیزہ اخلاق سے آراستہ کرکے آپ ایک ایسی جماعت کھڑی کریں جو آپ  کی قیادت میں بھرپور جدوجہد کر کے دینِ برحق کو ہر دوسرے نظریے اور فلسفے اور مذہب کے مقابلے میں پوری انسانی زندگی پر غالب کردے: ویکون الدّین کلہ للّٰہِ!

بات کو سمجھنے کے لیے دو تین مواقع پر رسولِ برحق کے فرمائے ہوئے کلمات پر ہم نگاہ ڈالتے ہیں۔ ان کلمات کی شہادت یہ ہے کہ حضورﷺ کو اپنے کام کے حوصلہ شکن ابتدائی دور میں پورا شعور تھا کہ کیا کرنے چلے ہیں۔ دعوت کا کام شروع کرنے کے جلد ہی بعد خاندانِ بنوہاشم کو کھانے پر جمع کیا اور اس موقع پر تقریر کرتے ہوئے فرمایا: جو پیغام میں تم تک لایا ہوں اسے اگر تم قبول کرلو تو اس میں تمھاری دنیا کی بہتری بھی ہے اور آخرت کی بھلائی بھی‘‘۔ پھر ابتدائی دورِ کش مکش میں مخالفین سے آپ نے فرمایا کہ ’’بس یہ ایک کلمہ ہے‘‘، اسے اگر مجھ سے قبول کرلو تو اس کے ذریعے تم سارے عرب کو زیرنگین کرلو گے اور سارے عجم تمھارے پیچھے چلے گا‘‘۔ پھر ایک موقع پر رسولِ بشیرونذیر کعبے کی دیوار سے ٹیک لگائے بیٹھے تھے، خباب ابن الارت نے جو قریش کے تشدد کا نشانہ بن رہے تھے، عرض کیا: حضورﷺ، ہمارے لیے خدا کی مدد کی دعا نہیں فرمائیں گے؟ حضورﷺ نے جواب دیا کہ تم سے پہلے ایسے لوگ ہو گزرے ہیں کہ گڑھے کھود کر ان کے دھڑ مٹی میں داب دیے جاتے اور پھر ان کے سروں پر آرے چلا کر ان کو دوٹکڑے کر دیا جاتا۔ تیز لوہے کی بڑی بڑی کنگھیوں سے بحالتِ زندگی ان کے گوشت اور کھالوں کی کترنیں ہڈیوں سے نوچ لی جاتیں لیکن یہ چیزیں ان کو دین و ایمان سے نہ پھیر سکیں۔ پھر فرمایا کہ ’’خدا کی قسم! اس کام کو اللہ تعالیٰ ایسی تکمیلِ منزل تک پہنچائے گا کہ ایک سوار صنعاء سے حضرموت تک تنہا سفر کرے گا، اور اسے سواے خدا کے کسی کا خوف لاحق نہیں ہوگا‘‘۔ مدنی دور میں عدی بن حاتم سے فرمایا کہ ’’بخدا وہ وقت قریب آرہا ہے جب تو سن لے گا کہ اکیلی عورت قادسیہ سے چلے گی اور مکہ کا حج کرے گی اور اسے کسی کا خوف ڈر نہ ہوگا‘‘۔ ان کلمات سے صاف ظاہر ہے کہ آپ کے سامنے اخوت و مساوات، عدل و انصاف اور امن وسلامتی کے ایک ایسے نظام کا نقشہ تھا جس میں کمزور اور تنہا فرد بھی ہر ضرر اور ظلم سے محفوظ ہوگا۔

یہ تھی منزل جہاں تک پوری انسانیت کے قائد صلی اللہ علیہ وسلم نے عرب کے اس معاشرے کو پہنچانے کے لیے عمربھر جان ماری کی جو جہالت کی تاریکیوں میں ڈوبا ہوا تھا، نظم سے محروم تھا، جرائم کی جولاں گاہ تھا، اور جس کے اُجڈ اور اکھڑ لوگ آپس میں لڑبھڑ کر قوتیں برباد کررہے تھے۔
محمدی انقلاب کی اساس کلمہ طیبہ پر تھی، یعنی اس کائنات کا اور تمام نوعِ انسانی کا ایک ہی الٰہ ہے(البقرہ ۲:۱۶۳) اور وہ اللہ تعالیٰ ہے۔ پوجا صرف اُس کی ہوگی، حکم اور قانون صرف اس کا چلے گا (البقرہ ۲:۱۲۹)۔ حاجات اس سے مانگی جائیں گی، دعائیں اس سے کی جائیں گی، نذریں اس کے سامنے پیش کی جائیں گی، اعمال کا حساب کتاب لینے والا اور جزا سزا دینے والا وہ ہے۔ زندگی، موت اور صحت اور رزق اور امن اور عزت، سب کچھ اس کی طرف سے ہے۔ زندگی میں اور کوئی اِلٰہ نہیں ہوگا، کسی بادشاہ کی، کسی حکمران کی، کسی خاندان کی، کسی دولت مند کی، کسی پروہت اور پادری کی، کسی نمبردار اور چودھری کی اور خود کسی شخص کے اپنے نفس کی خدائی بھی نہ چلے گی۔ اللہ کے سوا دوسرا جو کوئی بھی خدا بنتا ہے یا اپنی مرضی ٹھونستا اور اپنا قانون چلاتا ہے، یا دوسروں کے سر اپنے سامنے یا کسی اور کے سامنے جھکواتا ہے، یا جو لوگوں کی حاجات پوری کرنے کا مدعی بنتا ہے، وہ طاغوت کا پارٹ ادا کرتا ہے۔

اس انقلابی کلمے کا دوسرا جز یہ بتاتا ہے کہ محمد صلی اللہ علیہ وسلم کو خدا نے اپنا رسول مقرر کیا ہے۔ ان کو وحی کے ذریعے ہدایت اور ضلالت، نیکی اور بدی، حلال اور حرام کا علم عطا کیا ہے۔ آپ خدا کی طرف سے قیامت تک تمام مسلمانوں کے پیشوا اور قائد، معلم اور مزکّی اور اسوہ اور نمونہ قرار دیے گئے ہیں۔

اس انقلابی کلمے کے بیج سے نظامِ عدل و رحمت کا وہ شجرۂ طیبہ ظہور میں آیا جس کی شاخیں فضاؤں میں پھیل گئیں اور جڑیں زمین میں اُتر گئیں۔ جس کی چھاؤں دُور دُور تک پھیل گئی اور جس کے فکری، تہذیبی اور اخلاقی برگ و بار کا کچھ حصہ ہرقوم اور معاشرے تک پہنچا۔

محمدی انقلاب کے حیرت انگیز پہلوؤں میں سے ایک یہ ہے کہ جس نے آپ کے پیغام کو قبول کیا اس کی ساری ہستی بدل گئی۔ اس کے ذہن کی ساخت، اس کے افکاروجذبات، اس کے ذوق اور دل چسپیاں، اس کی دوستیاں اور دُشمنیاں، اس کے اخلاقی معیارات سب کے سب بدل گئے۔ چور اور ڈاکو آئے اور دوسرے لوگوں کے اموال کے نگہبان بن گئے۔ زانی آئے اور دوسروں کی عصمتوں کے رکھوالے بن گئے۔ سود کھانے والے آئے اور وہ اپنی کمائیاں خدا کے دین اور بندوں کی خدمت کے لیے لٹانے لگ گئے۔ کبِر کے مجسمّے آئے اور عاجزی کا نمونہ بن گئے۔ خواہشوں کے غلام آئے اور پَل بھر میں دنیا نے دیکھا کہ وہ اپنی خواہشوں کو روندتے ہوئے ایک اعلیٰ نصب العین کی طرف لپکے جا رہے ہیں۔ جاہل آئے اور آسمانِ علم پر اُنھوں نے اس طرح کمندیں ڈالیں کہ دنیا حیرت زدہ رہ گئی۔ اُونٹوں کے چرواہے انسانوں کے شفیق گلّہ بان بن گئے۔ لونڈیوں، غلاموں کے پسے ہوئے طبقے سے وہ شجاع اور غیور ہستیاں نمودار ہوئیں جن پر دشمنوں نے ظلم و ستم کے سارے حربے آزما ڈالے، مگر ان کے ضمیروں کو بدلنے اور ان کے ایمان کو شکست دینے میں کامیاب نہ ہوئے۔

محمدی انقلاب کے ان رضاکار سپاہیوں میں ڈسپلن اور ضبط و نظم ایسا بے مثال تھا کہ حالتِ نماز میں اُن کو تحویلِ قبلہ کا حکم ملا تو اُنھوں نے فوراً اپنے رُخ بیت المقدس سے کعبے کی طرف پھیر لیے، اُن کے لیے شراب حرام کی گئی تواُنھوں نے منہ کے ساتھ لگے ہوئے پیالے تک الگ کرکے پھینک دیے، ان کی خواتین نے جب رسولِ پاک کی زبان سے حکمِ حجاب سنا تو اس میں مین میخ نکالنے کے بجاے فوراً اپنے سروں اور سینوں اور زینتوں کو ڈھانپ لیا۔ ان میں سے اگرکسی مرد یا عورت سے خدا ورسول کے احکام کے خلاف کوئی جرم سرزد ہوگیا تو اپنے جرم کے اقراری بن کر خود پیش ہوئے اور اصرار کیا کہ ان پر سزا نافذ کر کے انھیں حضور پاکﷺ کر دیں۔ اُن سے چندہ طلب کیا گیا تو کسی نے گھر کا سارا سامان لا کے مسجد میں ڈھیر کر دیا، کسی نے سامان سے لدے ہوئے اُونٹوں کی قطاریں کھڑی کر دیں، اور کسی مزدور نے دن بھر کی محنت کی کمائی ہوئی چند کھجوریں پیش کردیں۔
پیغمبر آخر الزمان صلی اللہ علیہ وسلم کا ایک بڑا احسان تہذیبِ انسانی پر یہ ہے کہ آپؐ نے انسانوں کے تمام رشتوں اور رابطوں کو محکم بنیادوں پر استوار کیا، ایک دوسرے کی باہمی ذمہ داریاں واضح کیں، سب کے حقوق و فرائض متعین کیے، اور اپنے نمونے کے معاشرے میں والدین اور اولاد، بھائی بہنوں، میاں بیوی، استاد اور شاگرد، امیر اور غریب، پڑوسی اور ہم سفر، حاکم اور رعیت کے ربط و تعلق کو احسن شکل دی۔

افراد کے اندر واقع ہونے والے اس انقلاب کے نتیجے میں عرب کے معاشرے میں جو انقلاب واقع ہوا، وہ حیرت انگیز ہے۔ حضورﷺ نے اسلامی ریاست کی بنیاد جب مدینہ میں رکھی تو زیادہ سے زیادہ وہ علاقہ ۱۰۰ مربع میل ہوگا۔ آٹھ نو سال کے قلیل عرصے میں یہ ریاست پھیل کر ۱۰،۱۲ لاکھ مربع میل تک وسیع ہوگئی جس میں کوئی طبقاتی کش مکش نہ تھی، جس میں نسب کے فخر اور نسل کی عصبیت کا خاتمہ ہوگیا، جس میں امیروغریب اور عالم اور اَن پڑھ بھائی بھائی بن گئے، جس میں جرائم نہ ہونے کے برابر تھے، جس میں لوگ ایک دوسرے پر ظلم کرنے والے، سرکاری مال اور فرائض میں خیانت کرنے والے اور رشوتیں سمیٹنے والے نہ تھے، جس میں ہر کوئی دوسرے کے کام آتا تھا اور اپنے بھائی کو سہارا دیتا تھا۔ یہ بالکل ایک نئی دنیا کی تعمیر کی مہم تھی۔

یہ پاک اور پیارا محمدی انقلاب اس طرح نہیں آیا کہ لوگوں پر جبروتشدد کیا جا رہا ہو۔ اس انقلاب کا پیغام قبول کرانے کے لیے کسی کوقتل نہیں کیا گیا۔ کسی کو جیل میں نہیں ڈالا گیا۔ کسی کی پیٹھ پر تازیانے نہیں برسائے گئے۔ اس کے لیے دہشت نہیں پھیلائی گئی بلکہ اس انقلاب کی روح محبتِ انسانیت تھی اور حضورﷺ نے بڑی شفقت سے معلّمانہ انداز پر پہلے مکہ میں ۱۳ سال تک اور پھر مدینہ میں ۱۰ برس تک کام کیا۔

مکہ کے دور میں آپ نے گالیاں سن کر، طعن و طنز کا ہدف بن کر، مارکھا کر اور تین سال تک شعبِ ابی طالب میں خاندان سمیت نظربند رہنے کے باوجود نرمی اور پیار سے دعوت دی۔ آپ کے رفیق تپتی ریت پر لٹائے گئے، ان کے سینوں پر پتھر رکھے گئے، ان کی پیٹھوں کے نیچے دہکتے انگارے ٹھنڈے ہوگئے، کسی کے گلے میں رسّی ڈال کر گلیوں میں گھسیٹا گیا، کسی کو تازیانے مارمار کر ادھ موا کر دیا گیا اور کسی کو عذاب دے دے کر جان ہی لے لی گئی۔

پھر مدینہ میں آکر یہودیوں کی شرارتوں اور منافقین کی غداریوں کا سامنا کیا۔ یہاں تک کہ بار بار آپ کے قتل کی سازشیں کی گئیں جن سے حضورﷺ بال بال بچ نکلے، مگر یہودیوں اور منافقوں کی ایک بڑی تعداد پوری آزادی کے ساتھ موجود رہی اور شرانگیزی کرتی رہی۔

میدانِ جنگ میں حضورﷺ اگر مسلم قوت کو اُتارنے پر مجبور ہوئے تو اس وجہ سے کہ مخالف جاہلی قوت کے علَم بردار خود بار بار چڑھ کر آئے۔ بدر اور احزاب کی تین بڑی بڑی جنگیں مدینے کے دروازے پر لڑی گئیں۔ صرف ایک آخری جنگ جس کے پہلے مرحلے پر مکہ اور دوسرے میں حنین و طائف مفتوح ہوئے، اس وجہ سے ناگزیر تھی کہ دشمن کی جنگی قوت اور کارروائیوں کے یہ مراکز تھے۔ اگر انھیں قائم رہنے دیا جاتا، تو جنگوں کا یہ سلسلہ نہ جانے کب تک چلتا۔ اسی طرح غزوۂ بنومصطلق اور غزوۂ خیبر کا مقصد خوفناک قسم کی غدارانہ اور سازشی کارروائیوں کا سدِّباب کرنا تھا۔ باقی چھوٹے موٹے معرکے یا تو ڈاکوؤں کی سرکوبی کے لیے تھے یا سرحدی جھڑپوں کی نوعیت رکھتے تھے۔ کمال یہ ہے کہ جنگوں میں نبیِ امن و رحمت نے ایک طرف ایسی تدبیریں اختیار کیں کہ دشمنوں کے کم سے کم افراد کو ہلاک کرنا پڑے، دوسرے عرصۂ پیکار کے لیے بھی اعلیٰ درجے کے ضابطے نافذ کرکے دکھایا کہ خدا پرستوں کے انداز کیا ہوتے ہیں۔ نو سال کی تمام جنگی کارروائیوں میں دشمن کے ۷۵۹افراد ہلاک ہوئے یعنی ۸۴ افراد فی سال،اور جنگوں میں مسلمانوں کا کل جانی نقصان ۲۵۹ ہے۔ ۸، ۹ سال کی مدت میں دو طرفہ جنگی اموات کی میزان ۱۰۱۸ ہے۔

کیا دنیا کا، اور خصوصاً آج کی مہذب دنیا کا کوئی انقلاب اتنے کم جانی نقصان کے ساتھ اتنے بڑے تغیر کی مثال پیش کرسکتا ہے؟ اس نام نہاد مہذب دنیا میں تو انقلاب ایک عفریت کی طرح آتا ہے اور ہزارہا انسانوں کو لقمہ بناتا ہے۔ پھر انقلابی حکومتیں جبریت کے تخت پر بیٹھ کر لوگوں کو مسلسل قتل کرتی رہتی ہیں، جیلوں میں ڈالتی ہیں، ان کو عذاب دیتی ہیں اور برسوں خوف اور دہشت کی فضا طاری رہتی ہے۔ ان جبری اور خون ریز انقلابوں نے تو انسان کی فطرت کو بالکل مسخ کردیا ہے۔

محمدی انقلاب کی رحمت و برکت کو سامنے رکھ کر جب ہم دوسرے انقلابی نظریوں اور فلسفوں کو دیکھتے ہیں تو صاف معلوم ہوتا ہے کہ وہ باطل کے مختلف روپ ہیں۔

پس مطالعۂ سیرتِ نبوی سے ہمارا مقصود یہ ہونا چاہیے کہ ہم حضورﷺ کے پیغام، حضورﷺ کے ذکروعبادت، حضورﷺ کے اخلاق، حضورﷺ کی تنظیم، حضورﷺ کے کارنامے، حضورﷺ کے طریق کار اور حضورﷺ کی حکمت عملی کو سمجھ کر اپنے آپ کو اس امر کے لیے تیار کریں کہ پہلے ہمارے اپنے اندر محمدی انقلاب کا آغاز ہو اور پھر ہم نہ صرف اپنے ملک اور معاشرے کو، بلکہ پوری نوعِ انسانی کو محمدی انقلاب کی برکتوں اور سعادتوں سے بہرہ مند کریں۔ ہمارے لیے حق کی راہ صرف یہ ہے کہ حضورﷺ کو اپنی ساری انفرادی اور اجتماعی زندگی کے لیے پیشوا، قائد اور اسوہ اور نمونہ تسلیم کریں اور کسی دوسرے فلسفی یا انقلابی یا مصلح یا سیاست کار یا قانون ساز کو اپنا مستقل رہنما بناکر اس کی پیروی نہ کرنے لگیں، ورنہ تمام زندگی خدا کے ہاں رائیگاں شمار ہوگی۔(سیدِ انسانیت، ص ۷۔۱۳)

______________

 
   
 

اسلام جواں مردوں کاراستہ

In Books & literature on September 23, 2009 at 4:39 am

September 22 is the  death anniversary of Maulana Abul Aala Maududu (RA).  Kindly read an exceptionally extract from his book “Tanqeehat”

ہمارے روشن خیال اور”تجدد پسند”حضرات جب کسی مسئلہ پر گفتگو فرماتے ہیں تو ان کی آخری حجت، جو ان کے نزدیک سب سے قوی حجت ہے، یہ ہوتی ہے کہ زمانے کاMM رنگ یہی ہے، ہوا کا رخ اسی طرف ہے، دنیا میں ایسا ہی ہورہا ہے۔ پھر ہم اس کی مخالفت کیسے کرسکتے ہیں اور مخالفت کرکے زندہ کیسے رہ سکتے ہیں! اخلاق کا سوال ہو۔ وہ کہیں گے کہ دنیا کا معیار اخلاق بدل چکا ہے۔ مطلب یہ نکلا کہ مسلمان اس پرانے معیار اخلاق پر کیسے قائم رہیں؟ پردے پر بحث ہو۔ارشاد ہوگا کہ دنیا سے پردہ اٹھ چکا ہے۔ مراد یہ ہوئی کہ جو چیز دنیا سے اٹھ چکی ہے اس کو مسلمان کیسے نہ اٹھائیں! تعلیم پر گفتگو ہو۔ ان کی آخری دلیل یہ ہوگی کہ دنیا میں اسلامی تعلیم کی مانگ ہی نہیں۔ مدعا یہ کھلا کہ مسلمان بچے وہ جنس بن کر کیسے نکلیں جن کی مانگ نہیں ہے اور وہ مال کیوں نہ بنیں جس کی مانگ ہے! سود پر تقریر ہو۔ ٹیپ کا بند یہ ہوگا کہ اب دنیا کا کام اس کے بغیر نہیں چل سکتا۔ گویا مسلمان کسی ایسی چیز سے احتراز کیسے کرسکتے ہیں جو اب دنیا کاکام چلانے کے لیے ضروری ہوگئی ہے غرض یہ کہ تمدن، معاشرت، اخلاق، تعلیم، معیشت،قانون،سیاست اور زندگی کے دوسرے شعبوں میں سے جس شعبے میں بھی وہ اصول اسلام سے ہٹ کر فرنگیت کا اتباع کرنا چاہتے ہیں،اس کے لیے زمانے کا رنگ اور ہوا کارخ اور دنیا کی رفتار وہ آخری حجت ہوتی ہے جو اس تقلید مغربی یا درحقیقت اس جزوی ارتداد کے جواز پر برہان قاطع سمجھ کر پیش کی جاتی ہے، اور خیال کیا جاتا ہے کہ عمارت اسلامی کے اجزائ میں سے ہر اس جز کو ساقط کردینا فرض ہے جس پر اس دلیل سے حملہ کیا جائے۔

ہم کہتے ہیں کہ شکست وریخت کی یہ تجویزیں جن کو متفرق طور پر پیش کرتے ہو، ان سب کو ملاکر ایک جامع تجویز کیوں نہیں بنالیتے؟ مکان کی ایک ایک دیوار۔ ایک ایک کمرے اور ایک ایک دالان کو گرانے کی علیحدہ علیحدہ تجوزیں پیش کرنے، اور ہر ایک پرفرداً فرداً بحث کرنے میں فضول وقت ضائع ہوتا ہے۔ کیوں نہیں کہتے کہ یہ پورا مکان گرادینے کی ضرورت ہے کیونکہ اس کا رنگ زمانے کے رنگ سے مختلف ہے، اس کا رخ ہوا کے رخ سے پھرا ہو ہے اور اسکی وضع ان مکانوں سے کسی طرف نہیں ملتی جو اب دنیا میں بن رہے ہیں۔

جن لوگوں کے حقیقی خیالات یہی ہیں ان سے تو بحث کرنا فضول ہے، ان کے لیے توصاف اور سیدھا سا جواب یہی ہے کہ اس مکان کو گرانے اور اس کی جگہ دوسرا Maududiمکان بنانے کی زحمت آپ کیوں اٹھاتے ہیں؟ جو دوسرا خوش وضع، خوشنما، خوش رنگ مکان آپ کو پسند آئے اس میں تشریف لے جائیے۔

اگر دریا کے دھارے پر بہنے کا شوق ہے تو اس کشتی کا لیبل کھرچنے کی تکلیف بھی کیوں اٹھائیے؟ جو کشتیاں پہلے سے بہہ رہی ہیں، انہی میں سے کسی میں نقل مقام فرما لیجئے۔ جو لوگ اپنے خیالات، اپنے اخلاق، اپنی معاشرت، اپنی معیشت ، اپنی تعلیم، غرض اپنی کسی چیز میں بھی مسلمان نہیں ہیں اور مسلمان رہنا نہیں چاہتے  ان کے برائے نام مسلمان رہنے سے اسلام کا قطعاً کوئی فائدہ نہیں بلکہ سرا سر نقصان ہے۔ وہ خدا پرست نہیں، ہوا پرست ہیں، اگر دنیا میں بت پرستی کا غلبہ ہوجائے تو یقیناً وہ بتوں کو پوجیں گے۔ اگر دنیا میں برہنگی کا رواج ہوجائے تو یقیناً وہ اپنے کپڑے اتار پھینکیں گے۔ اگر دنیا نجاستیں کھانے لگےتو یقیناً وہ کہیں گے کہ نجاست ہی پاکیزگی ہے اور پاکیزگی تو سراسر نجاست ہے۔ ان کے دل اور دماغ غلام ہیں اور غلامی ہی کے لیے گھڑے گئے ہیں۔ آج فرنگیت کا غلبہ ہے، اس لیے اپنےباطن سے لے کر ظاہر کے ایک ایک گوشے تک وہ فرنگی بننا چاہتے ہیں۔ کل اگر حبشیوں کا غلبہ ہوجائے تو یقیناً وہ حبشی بنیں گے۔ اپنے چہروں پر سیاہیاں پھیرں گے، اپنے ہونٹ موٹے کریں گے، اپنے بالوں میں حبشیوں کے سے گھونگھر پیدا کریں گے، ہر اس شے کی پوجا کرنے لگیں گے جو حبش سے ان کو پہنچے گی۔ ایسے غلاموں کی اسلام کو قطعاً ضرورت نہیں ہے، بخدا اگر کروڑوں کی مردم شماری میں سے ان سب منافقوں اور غلام فطرت لوگوں کے نام کٹ جائیں اور دنیا میں صرف چند ہزار وہ مسلمان رہ جائیں جن کی تعریف یہ ہو کہ ﴿وہ اللہ کے محبوب ہوں اور اللہ ان کا محبوب ہو، مسلمانوں کے لیے نرم اور کافروں کے لیے سخت ہوں، اللہ کی راہ میں جہاد کرنے والے ہوں اور کسی ملامت کرنے والے کا انہیں خوف نہ ہو﴾﴿المائدہ84﴾تو اسلام اب سے بدرجہا زیادہ طاقتور ہوگا اور ان کروڑوں کا نکل جانا اس کے حق میں ایسا ہوگا جیسے کسی مریض کے جسم سے پیپ اور کچ لہو نکل جائے۔

Quranیہ شریعت بزدلوں اور نامردوں کے لیے نہیں اتری ے۔

 نفس کے بندوں اور دنیا کے غلاموں کے لیے نہیں اتری ہے۔

ہوا کے رخ پر اڑنے والے خش و خاشاک، اور پانی کے بہاؤ پر بہنے والے حشرات الارض اور ہر رنگ میں رنگ جانے والے بے رنگوں کے لیے  نہیں اتری ہے

۔ یہ ان بہادر شیروں کے لیے اتری ہے جو ہوا کا رخ بدل دینے کا عز م رکھتے ہوں، جو دریا کی روانی سے لڑنے اور اس کے بہاؤ کو پھر دینے کی ہمت رکھتے ہوں، جو صبغتہ اللہ کو دنیا کے ہر رنگ سے زیادہ محبوب رکھتے ہوں اور اسی رنگ میں تمام دنیا کو رنگ دینے کا حوصلہ رکھتے ہوں۔

 مگر انقلاب یا ارتقائ ہمیشہ قوت ہی کے اثر سے رونما ہوا ہے، اور قوت ڈھل جانے کا نام نہیں ڈھال دینے کا نام ہے، مڑجانے کو قوت نہیں کہتے، موڑ دینے کو کہتے ہیں۔ دنیا میں کبھی نامردوں اور بزدلوں نے کوئی انقلاب پیدا نہیں کیا، جو لوگ اپنا کوئی اصول، کوئی مقصد حیات، کوئی نصب العین نہ رکھتے ہوں، جو بلند مقصد کے لیے قربانی دینے کا حوصلہ نہ رکھتے ہوں، جو خطرات ومشکلات کے مقابلہ کی ہمت نہ رکھتے ہوں، جن کو دنیا میں محض آسائش اور سہولت ہی مطلوب ہو، جو ہر سانچے میں ڈھل جانے اور ہر دباؤ سے دب جانے والے ہوں، ایسے لوگوں کا کوئی قابل ذکر کارنامہ انسانی تاریخ میں نہیں پایاجاتا۔ تاریخ بنانا صرف بہادر مردوں کا  کام ہے۔ انہی نے اپنے جہاد اور اپنی قربانیوں سے زندگی کے دریا کا رخ پھیرا ہے۔ دنیا کے خیالات بدلے ہیں۔ مناہج عمل میں انقلاب برپا کیا ہے۔زمانے کے رنگ میں رنگ جانے کے بجائے زمانے کو خود اپنے رنگ میں رنگ کر چھوڑا ہے۔

حرف حرف روشنی

In Books & literature on September 1, 2009 at 5:38 am

”حرف حرف روشنی

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا ایک اور معجزہ جو ان کو دیگر انبیائ سے ممتاز کرتا ہے وہ یہ ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم جامع الکلام تھے یعنی نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی مختصر  بات میں معنوں کا ایک سمندر ہوتا ہے جو کہ دراصل خود ایک معجزہ ہے۔

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی احادیث کے بے شمار چھوٹے بڑے نسخے افادات عام کیلئے دستیاب ہیں مگر ”حرف حرف روشنی“نامی کتابچہ ان میں صرف ایک اضافہ ہی نہیں بلکہ ایک مختلف اور منفرد پہلو بھی رکھتا ہے۔

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی احادیث کے مطالعے میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی کئی احادیث ایسی ملتی ہیں جن میں نبی مہربان  صلی اللہ علیہ وسلم نے کبھی تین باتیں، کبھی پانچ باتیں، کبھی سات باتیں اور کبھی 10 باتیں تک بتائیں ہیں یعنی ایک ہی حدیث میں کئی کئی باتیں اور نصیحتیں ملتی ہیں۔

”حرف حرف روشنی“ میں ایسی ہی احادیث کو آسان زبان میں یکجا کرنے کی کوشش کی گئی ہے جس کو خاص وعام نے نہایت پسند کیا۔ گزشتہ دنوں اس کا تیسرا ایڈیشن شائع ہو ا ہے۔

”حرف حرف روشنی“ ایک مختصر کتابچہ ہے جس میں چالیس احادیث جمع کی گئی ہیں جو حسین سرورق کے ساتھ کسی بھی فرد کو تحفہ دینے کیلئے نہایت موزوں ہے اور نہایت کم قیمت پر دستیاب ہے۔

Hurf Hurf Roshni

 اس ماہ مقدس یعنی رمضان المبارک میں آپ اس کتابچہ کو

  • اپنے تعلیمی ادارے ﴿مثلاً اسکول، مدرسہ، کالج، یونیورسٹی﴾ میں تقسیم کرنے کا اہتمام کرسکتے ہیں۔
  • اپنے آفس کے ساتھیوں میں رمضان میں بطور تحفہ کے دے سکتے ہیں۔
  • اپنے محلے اور رشتہ داروں میں تقسیم کرسکتے ہیں۔
  • افطار پارٹیوں میں بطور ہدیہ دے سکتے ہیں۔
  • خاص طور پر اعتکاف میں بیٹھنے والوں کو مطالعہ کیلئے لازمی دے سکتے ہیں۔

زندگی کے روزمرہ پہلوؤں کے لحاظ سے مرتب کردہ اس کتابچہ  ”حرف حرف روشنی“  کو ہر گھر کی زینت ہونا چاہئے تاکہ زندگی اللہ کے احکامات کے سایہ تلے آسانی سے بسر ہوسکے۔

 

ملنے کا پتہ:

اسلامک ریسرچ اکیڈمی

D-35، بلاک۔ 5 ، فیڈرل بی ایریا

رابطہ۔ 6349840 – 6809201

قیمت۔ 20 روپے

﴿100 یا 50 کتابچوں کے آرڈر کی صورت میں آپ کے گھر / آفس تک بھی پہنچایا جاسکتا ہے﴾