Kashif Hafeez Siddiqui

Archive for the ‘Urdu Columns’ Category

آیا صوفیا کی میوزیم سے مسجد میں تبدیلی

In Urdu Columns on July 13, 2020 at 6:40 am

آپ کے سامنے ایک مختلف مطمح نظر رکھنا چاہتا ہوں ۔
امید کرتا ہوں کہ رہنمائی اور اصلاح کیجئیے

جزبات سے ہٹ کر ایک مختلف زاویہ نگاہ

قسطنطنیہ کی اہمیت عیسائیوں ۔ روم/یورپ کے باسیوں اور دنیا بھر کے عیسائیوں کیلئے نہایت محترم تھی اور ہے

آیا صوفیا یقینا صلیبیوں کا روحانی مرکز ہے
اتنا ہی جتنا مسلمانوں کیلئے بیت المقدس یا حرم ۔

اسی لئیے یورپ کے سیاحوں کی بڑی تعداد آیا صوفیا کی سیاحت /زیارت کیلئے ہرسال ترکی آتی ہے

جب قسطنطنیہ، عثمانیوں / مسلمانوں نے ایک خونریز معرکہ کے بعد فتح ہوا ہو گا تو صلیبیوں میں صف ماتم یقینا عالمی پیمانے ہر بچھی ہو گی

فتح مکہ ۔ فتح کسری ۔ فاطمی حکمرانوں کو نیست و نابود کرنے کے بعد فتح قسطنطنیہ مسلمانوں کی شان و شوکت کا علامتی نشان تھا

اس زمانے میں جب قوت کی بنیاد پہ شہر اور ملک فتح ہو رہے تھے تو غالبا مسلمان/ترک فاتح اخلاقی اور مذہبی رواداری کی تربیت کے لحاظ سے قرطبہ کے صلیبی بادشاہوں کی طرح ہی کے تھے اور مختلف نہیں تھے

عثمانیوں کے پاس، مسلمانوں کے قرون اعلی کے فاتحین کے علی الرغم دعوتی اور دینی زہن اس بلند پائے کا نہیں تھا کہ جو مزہبی رواداری کا صلاح الدین ایوبی کی طرح کوئی قابل تقلید مثال قائم کرتا

اسپین کے صلیبی بادشاہوں نے مساجد کو چرچز میں تبدیل کیا اور عثمانیوں نے آیا صوفیا کو مسجد میں تبدیل کر دیا ۔

عین ممکن ہے کہ اتاترک کے زمانے میں آیا صوفیا کی مسجد سے میوزیم میں تبدیلی ۔ یورپ کے دباؤ کا نتیجہ ہو۔ کیونکہ زمانے کے فاتح زمانہ وہی تھے۔ بیت المقدس کی فتح کے بعد فاتح جنرل کا یہ جملہ کہ Now cruised wars has overed
ثابت کرتا ہے کہ انہوں نے ماضی کو کبھی نہیں بھلایا

یہود نے فتح خیبر اور عیسائیوں نے لشکر ابرہہ کو کبھی بھی نہیں بھلایا۔
بلکہ امریکہ کے عراق پر حملے کے دوران خود بش کا صلیبی جنگوں کو یاد کرنا ڈاکیومینٹیڈ ہے۔

اس تناظر میں آیا صوفیا کی مسجد کے طور پر بحالی سیاسی اسٹنٹ زیادہ لگتا ہے۔
دلوں کا حال تو اللہ بہتر جانتا ہے۔

نہیں معلوم کہ اس فیصلے سے ترکی میں اسلام کو کیا فائدہ حاصل ہو گا ۔ مگر میرے نزدیک موجود حالات میں یہ بہت مستحسن فیصلہ نہیں

دنیا آج سے 500 سال پہلے والی نہیں ۔ بیت المقدس ۔ تین مزاہب کا مرکز ہے۔ اسکواسرائیل کیلئے روندنا آسان نہیں

اب آیا صوفیا دو مزاہب کا مرکز ہے۔ بطور مسلمان ہم کو قرون اولی کے مسلمانوں اور فاتحین کی رواداری کی روایت کو قائم رکھنا ضروری ہے۔

حضرت عمر فاروق رضی اللہ اور صلاح الدین ایوبی کے عمل کو صلح اور فتح سے ہٹ کر دیکھئیے تو آج تک دور رس اثرات رکھتے ہیں
دوسری طرف سومنات کے حوالے سے لٹیرے کا طعنہ ابھی تک دیا جاتا ہے۔

آج کی دنیا گلوبل ولیج ہے۔
آیا صوفیا میں نماز کی بحالی کسی گم گشتہ عظمت رفتہ کی بحالی نہیں ہے۔
اسکے مقامی سیاسی اثرات بھی کس حد تک پڑیں گے یہ بھی ابھی سوال ہے۔

Research According To Islamic Principles By – Maulana Maududi

In Urdu Columns on June 23, 2020 at 10:21 am

Translation of Maulana Maudidi speech – عہد حاضر میں اسلامی تحقیق کا طریقہ کار کیا ہونا چاہئے ؟

All the branches of knowledge in the world are divided into two parts: one comprises information which man has about the world and his life; and the other is that which groups of people arrange according to their particular mode of thought.

The food material available in the world is almost the same, but people consume the same things in different ways. Similarly, people have the same information of things in their surroundings. But different civilizations arrange that information differently which makes them stand out. 

The consequence of stagnation

If a nation stops seeking information and creating new things and ways of living, it gradually becomes weak and is ultimately subjugated by some other nation. It is subjugated not just politically and economically, but also intellectually.

Then the subjugated nation starts following the ways of the ruling nation, without even thinking if the new ways it is adopting suit it or not. As a result, its individuality keeps diminishing. Such nations ultimately remain in only history.

When Islam began asserting itself in the world, it did so not just through political and military ventures, but also by seeking new information and arranging it according to its core beliefs. As a result, it created a civilization that was embraced by a large part of the world.

Medical sciences and Muslims

Is it not true that Muslims wrote books on medicine according to their religious beliefs? They began with the praise of God and would choose only those substances for medicine which are Halal. Time and time again in those books, the writers would mention that the effect that medicines have is God’s blessing upon mankind. That these medicines are nothing in themselves. When the Muslim doctors examined patients, they would begin by uttering praise for God and seek His help.

The information that they had was the same as other around the world had. But the Muslim physicians used that information according to their religious beliefs.

I used the example of medicine because people usually say that this science has nothing to do with anyone’s beliefs. We should remember that our beliefs influence everything we do. We mould everything according to our faith.

When Muslim civilization was the model for the world

The result of the work done by the Muslims was that, for centuries, the rest of the world tried to imitate the Muslim civilization despite their religious prejudice against Islam.

Muslims promoted their thought system based on monotheism with such strength that polytheists found it hard to speak of their beliefs with any conviction. They tried to somehow reconcile their faith with monotheism. They said they were also monotheists and the other gods that they worshipped were a means to reach the God. Several monotheistic groups emerged within the polytheist religions.

The physical sciences and the sociological sciences developed by Muslims ruled the world. The Renaissance in the West owed a lot to the sciences developed by Muslims. The key people in that movement were educated in Spain which was the citadel of Muslim civilization for centuries.

There was a time when western scholars took pride in knowing Arabic. Even many of their religious leaders used to write their personal letters in Arabic. Others would complain that their scholars were so overawed by Arabic that they used the language in their private lives and had quit their national language(s).

This was all a result of Muslims’ hard work in research and inquiry. Other nations just followed them. In this manner, their psyche was also influenced by Islamic thoughts. If we read books of a group of Christian scholastics, we will find that they were almost literally copying their Muslim counterparts. There was no difference in those books and Muslims books except that of their belief in trinity of gods.

Then Muslims quit research

But then came a time when Muslim scholars stopped research work and became content with adding footnotes to the works written by their predecessors.

At the same time, the scholars in the West started research. They looked for new facts and came up with new systems.

As a result, Muslims stagnated and the West rose in power. By the 18th century, Western nations became so powerful that they managed to subjugate the Muslim nations.

When a nation becomes complacent and does not strive to move forward it inevitably starts declining in knowledge and power. And the nation which subjugates another does not only overcome its victim militarily and politically. It brings with it its whole civilizational framework and presents it as superior to the subjugated nation’s way of life.

The influence of western civilization

When Islam was the biggest power in the world, people thought only Muslims are civilized, cultured, and educated. Now that Western countries are powerful, people consider only they are civilized, cultured and educated. And we should follow them unquestioningly.

Whatever we say about it, practically it’s the western world’s way of living, way of thinking that we are following. If we want Muslim civilization to be revived, we will have to start research work anew.

What kind of research?

But we must be clear in our minds about what kind of research we need as Muslims. We don’t need research for the sake of research — the kind that Western scholars try to teach us, that seeks to examine texts attributed to some author not to get some ideas out of them but to prove their historical authenticity. It’s helpful in some ways but it’s not what we need. It won’t help us move forward.

We need the kind of research that has helped the West acquire the power that it has over the rest of the world today.

One kind of research is being promoted in our country. It is about Islam. But it is meant to produce an Islam which conforms to the Western ideals, which legitimizes whatever is legitimate in the West and delegitimize whatever is illegitimate in the West. We don’t need this kind of research either.

Research according to Islamic principles

We must challenge through well-argued intellectual criticism the notion that the Western philosophy of life is the best. Whatever facts there are in Western sciences are the whole world’s heritage. We have no problem with those. But the conclusions that they have reached about the universe through their discoveries are entirely wrong.

The social sciences they have developed, the social philosophies they have invented cannot lead to wellbeing of humanity. In fact, it will lead to destruction of humanity.

If we manage to successfully challenge this idea of the superiority of the Western world’s philosophy of life, Muslims will come out of the web that West has spun around us. Unless this is done we can’t expect Muslims to become leaders of the world. They will continue to be followers.

Knowing facts about the material world around us is one thing and forming a philosophy of life based on those facts is another. The facts that the West has discovered through its research work are to be accepted but the philosophy of life that it has developed on the basis of those facts is not acceptable.

Next, we’ll have to reformulate all sciences according to Islamic point of view in order to found the Islamic civilization. Man needs a comforting philosophy about what reality is. We should meet this need while remaining within the limits set by our faith.

To search for reality is in man’s nature. We cannot condemn this curiosity. We have to develop a philosophy according to the principles of Islam to tell the world what the reality of man is, what the reality of the universe is. Only when we have done this can we replace the sciences being taught in our colleges and universities.

When the Russians adopted communist way of thinking they re-formulated all the sciences taught in their educational institutions according to communism. They didn’t tolerate capitalist ideas. They did so because they knew it was not possible to build a true communist system unless they threw the capitalist ideology out of their education system.

Unless we adapt economics, law, psychology, and all other social sciences to the principles of Islam and teach them in our educational institutions, we can’t hope to revive Islamic civilization.

Reforming education system

Even if we tell our children that there is one God, that Muhammad (PBUH) was His prophet, and that Quran is the book of God, our young generation will not really believe in these things because when it goes to college it sees that God is never mentioned in whatever they learn.

Whether they study physical or social sciences they never learn anything about God. They are never told that our prophet gave us an economic system and a legal system.

On the contrary, a lot of things that they are taught are against Islamic teaching which makes them think that Islam is not a practicable religion. For example, they are taught how the interest-based financial system works. Because they have never been introduced to Islam’s economic principles they think that the interest-based financial system is the only system.

Our current education system makes them see Islamic legal system as extremely cruel because it allows for hand amputation and flogging to punish thieves and fornicators, respectively. After such education, how can we expect our young generation to follow Islam wholeheartedly?

People graduating from these institutions then run our government, our judiciary, our economy. Can we expect them to conduct any official business according to Islamic principles?

If you talk to them, very soon you will realize that they consider Islam a thing of past which can’t meet the needs of modern life. They can’t even imagine that there could be any system than that provided by the West.

Constructive work

We must prepare curriculum which teaches our young generation these sciences according to Islamic commandments. Currently we teach books that are written by those of us who consider aping the West the way forward. We must get such books written as could meet the needs of this curriculum.

Communist states have rejected not only the books written by capitalist economists but also the science books written in the capitalist world. They are developing what they call Soviet Science. They have compiled science books according to communist ideology.

If a child studies eight subjects in school and only one of them is about religion, he can’t be prepared for an Islamic way of life. This education system is eroding our individuality by the day. What to talk about the revival of Islam, we can’t even keep what we still have of Islam in our lives if we let this education system continue to be operated.

زندگی احتیاط کے ساتھ

In Urdu Columns on May 30, 2020 at 12:37 pm

اسوقت تمام بازار ، ٹرانسپورٹ ، سب کچھ کھول دیا گیا ہے ۔ عید میں چند روز ہی رہ گئے ہیں ۔
ہر شخص کی خواہش ہوتی ہے کہ کچھ خرید لے ۔ اپنے لیے ، بچوں کے لیے ۔ مہمانوں کی مدارات کے لیے ۔

اتنے عرصے صبر کیا تو اللہ نے سب کو محفوظ رکھا ۔ الحمدللہ

مگر ۔
ابھی مکمل بے فکری کا وقت نہیں آیا

اگر بازار جانا ضروری ہے ، تو انتہائی احتیاط کے ساتھ جائیں ۔

صرف اشد ضرورت کے لئے ۔

کم از کم وقت کیلئے ۔

کسی دوسرے کو ساتھ لے کر نا جائیں ۔ بچوں کو ہرگز ساتھ نہ لیں ۔

ماسک پہن کر نکلیں ۔

ہاتھ کو اپنے منہ ناک آنکھوں کو چھونے سے بچائیں۔عادت بنا لیں ۔

کسی ہجوم والی دوکان پر نہیں جائیں ۔

کہیں بھی ہوں ، یہ دیکھ لیں کہ دوسروں سے تقریباً چھ فیٹ کا فاصلہ ہے ؟

دوکان کے کاؤنٹر ، دروازوں وغیرہ پر ہاتھ نہ لگائیں ۔ اگر لگ گیا تو سینیٹائیزر سے ہاتھ صاف کر لیں ۔

گھر واپس پہنچ کر اچھی طرح صابن سے ہاتھ دھو لیں۔
گھر واپس پہنچ کر سوچیں:

کیا جانا بہت ضروری تھا ؟

جو لے کر آیا ہوں ، اگر اس میں کچھ کمی بیشی رہ گئ ہے تو اس کو تبدیل کروانا اپنی صحت سے زیادہ ضروری ہے؟

دوکانداروں کے لیے:

اپنی جگہ کو کھلا ہوا دار رکھیں اگر ممکن ہو۔

خود اور تمام عملہ پورا وقت ماسک پہنے رکھیں ، روزانہ یا ہر چار چھ گھنٹے بعد نیا پہنیں ۔ کپڑے کر ماسک کو کچھ دیر بعد دھونا ضروری ہے۔

کام کے آغاز پر اور دن میں کئی بار ، کاؤنٹر دروازوں وغیرہ کو صاف کریں (ایک حصہ بلیچ اور نو حصے پانی کے مکسچر سے)

ماسک کے بغیر دوکان میں داخلہ پر پابندی لگا دیں ۔ ہمت کریں ، ماسک کا پیکٹ اپنی دوکان میں رکھ لیں اور بغیر ماسک والے کو خود دے دیں ۔

جگہ کے حساب سے لوگوں کو اندر آنے دیں ، کہ لوگ قریب نہ کھڑے ہوں ۔

سینیٹائیزر سامنے رکھیں ،خود بھی استعمال کریں اور دوسروں کو بھی یاددہانی کرائیں ۔

کم از کم وقت میں لوگوں کو فارغ کریں ۔

ہر شخص اللہ سے حفاظت و عافیت طلب کرے ۔

ان باتوں کو مذاق نہ سمجھے ۔ اگر دوسرے نا سمجھیں، میں خود خیال کروں ۔

زندگی بھر کے لیے یہ سب نہیں کرنا ۔ کچھ عرصہ ضروری ہے ۔ اپنی جان کی حفاظت فرض ہے ۔

اللّٰہ ہم سب کو محفوظ رکھے آمین ۔

حضرت عمر بن عبدالعزیزؓ کی قبر کی بےحرمتی کا معمہ

In Urdu Columns on May 30, 2020 at 12:16 pm

2014

اہل تشیع ۔ مسجد عمار بن یاسر کی شہادت کا الزام داعش پر
اور سنی حضرات خالد بن ولید کی قبر کی تباہی کا زمہ دار بشار نواز ملیشیاء بتاتے ہیں

مگر ادلب میں عمر بن عبدالعزیز کی قبر کی تو شدید بےحرمتی کی گئ ہے ۔ ساتھ ہی انکی بیگم کی قبر کو بھی نہیں بخشا گیا۔ عمر بن عبدالعزیز کا جسم اطہر کہاں گیا کوئی خبر نہیں
یہ واقعہ نہایت ہی المناک اور غم ناک ہی نہیں بلکہ ایک سوہان روح ہے

عرب اور ترکش زرایع ابلاغ نے اس واقعے کی وڈیو اور تصاویر شئیر کی ہیں اور وہی اس کے راوی ہیں

یہ زرایع ابلاغ اس واقعہ کے وقوع ہونے کی کوئی تاریخ بتانے سے قاصر ہیں ۔ یا یوں کہیئے کہ اس واقعے کا راوی جنگ کے فریق ہیں کوئی آزاد ذریعہ نہیں

اس واقعےکا الزام بشارالقصائی کی حمایت یافتہ شیعہ ملیشیاپہ لگایا جارہا ہے۔ جبکہ اہل تشیع اس واقعے کے منکر ہیں اور داعش کو انکی تاریخ کے مطابق اور حوالوں سے زمہ دار گردان رہے ہیں

جنگ میں سب کچھ سیاہ اورسفید میں نہیں ہوتا بہت کچھ گرےائیریا بھی ہوتاہے

میں ‏شام کی لڑائی میں حمس شہر میں واقع مسجد عمار بن یاسر اور اس سے ملحقہ خالد بن ولید کی قبر شدید متاثر ہو گئے۔ یہ ایک المناک اور افسوسناک واقعہ تھا۔ اس سے قبل روضہ بی بی زینب کو بھی تباہ کیا جا چکا تھا

یہ کام کس نے کیا ہے ۔یہ سراسرغیر واضح ہے
داعش کی مزارات کوتباہ کرنےکی یقینا تاریخ موجود ہے مگر بشار ملیشیاء نے بھی بستیوں کے ساتھ ساتھ قبروں کو بھی تاراج کیا ہے
اور یہ کام کوئی تیسری طاقت کرکے بہت بڑا انتشار اور فتنہ بھی پیدا کر سکتی ہے

فرقہ واریت کے شعلوں کو یہ واقعہ شدید بھڑکا سکتا ہے۔

اہل تشیع میں کم از کم اموی خلیفہ جات میں سے عمر بن عبدالعزیز کا احترام بہت ہے۔
امام باقر انکے معاصر تھے جنہوں نے ہمیشہ خلیفہ وقت کو سراہا اور ان سے تعاون کیا۔ پہلے عباسی خلیفہ عبداللہ بن سفاح نے کہ جس نے امویوں کے زندوں کو ہی نہیں مردوں کو بھی نہیں بخشا تھا اس نے بھی عمر بن عبدالعزیز کی قبر کی بےحرمتی سے گریز کیا۔

اس تناظر میں مسلکی بنیاد پہ عمر بن عبدالعزیز کی قبر کی بےحرمتی ہضم نہیں ہوتی۔ یہ معاملہ واضح نہیں۔

خبر ۔ اطلاع اور وڈیو فراہم کرنے والے فریق ہیں ۔ آزاد ذرائع ہرگز نہیں

میری گزارش ہے کہ اس معاملے میں کسی بھی نتیجہ پہ پہنچنے میں جلدی نہ کی جائے۔ کچھ دیر ٹہرا اور دیکھا جائے ۔ انشاءاللہ سچائی سامنے آ ہی جائے گی۔

عمر بن عبدالعزیز رح اور انکی اہلیہ اب جسموں کے محتاج نہیں ۔ وہ سعید روحیں اللہ رب العالمین کے پاس بہت بلند درجے پہ موجود ہیں

اللہ تعالی انکے درجوں کو مذید بلندی عطا فرمائے ۔ آمین

کرونا وائرس ۔مفروضے اورحقائق

In Urdu Columns on May 30, 2020 at 12:10 pm

کان وہی سننا چاہتے ہیں جو اسکو اچھا لگے ۔ مگر کبوتر کی طرح آنکھیں بند کر لینے یا شتر مرغ کی طرح مٹی میں گردن ڈال لینے سے خطرہ ٹلتا نہیں ۔  زندگی مفروضوں کی بنیاد پہ نہیں گزاری جاتی ۔  ہر چیز میں سازشی تھیوریز کی تلاش انسان کو دہوکے میں ڈال دیتی ہے ۔  کوئی  قلم کار اگر یہ چاہے کہ کہ وہ  انٹر نیٹ  پر کچھ مضامین پڑھ کر موٹر مکینک  بن جائے گا تو وہ جنت الحمقاٌ میں ہی رہتا ہے ۔ انسانی جبلت  اور زہن جغرافیہ کا محتاج نہیں ہوتا ۔  حقائق سے منکر لوگ پیٹ بھر کر یورپ اور امریکہ اور دنیا بھرمیں حد درجہ اتم موجود ہیں ۔ اسی سوچ کے لوگ پاکستان میں بھی وافر مقدار میں  موجود ہیں ۔ اپنی تئیں اس عالمگیر وبا سے معلوم نہیں وہ کون کون سے نکات کمپیوٹر اور انٹرنیٹ کی دنیا سے ڈرائینگ روم میں بیٹھ کر نکال لاتے ہیں جن کو پڑھ کر اور سنکر صاحبان علم و دانش دل ہی دل میں  صرف قالو سلاما  کہہ کر خاموش رہنے ہی میں عافیت سمجھتے ہیں ۔

کرونا ایک حقیقت ہے ؛ اسکی تباہ کاری نہایت ظالم ہے ۔ اللہ کی عنایت اور اسکا خاص کرم اس خطہ زمین پہ وارد ہوا ہے کہ اس  کا پھیلاؤ اور اسکے مضر اثرات کافی حد تک محدود ہیں ۔ الحمدللہ ۔ اور ساتھ میں اللہ سے  یہ دعا بھی ہے کہ  تباہ کاریوں کےتمام خدشات غلط ۱۰۰ فیصد ثابت ہوں اور لوگ مامون و محفوظ رہیں ۔ آمین

حقیقت یہی ہے کہ ہم ۔ ہرڈ امیونیٹی کی جانب  غیر اعلانیہ بہت پہلے بڑھ چکے ہیں ۔ پورے پاکستان میں لاگو کیا گیا نہایت  لولا لنگڑا لاک ڈاؤن صرف زیادہ آمدنی، پوش علاقوں  ، کارپوریٹ طبقے، ٹی وہ اشتہارات  اور درمیانی آمدنی کے طبقے تک ہی انکے شعور کی وجہہ سے محدود رہا ۔ ورنہ باقی تو اندرون شہر کی گلیوں میں رونقیں واہ واہ رہیں اور ہیں

لاک ڈاؤن  میں نرمی کے بعد بازاروں میں کھوے سے کھوا چھلتا رش ۔دکانداروں کی بے احتیاطیاں اور ساتھ میں منافع خوریاں اس بات کی غمازی کر رہی ہیں  کہ  کرونا وائیرس کے کسی بھی خطرے کو  بالعموم  عوام  خوف آخرت کی طرح رد کر چکی ہے ۔ وہ تمام نمازی جن کا دعویٰ ہے کہ وہ مساجد میں بہت آرگینائیزڈ کھڑے ہوکر عبادت کررہے ہیں وہ تمام  افراد بازاروں میں مختلف روئیوں کے ساتھ   خاندانوں  سمیت آ موجود ہیں۔ خریداروں کا ہجوم دیکھ کر یہ بھی سوال پیدا ہوتا ہے کہ بھائی وہ بھوکا کون تھا  جو خودکشی کرنے جا رہا تھا ؟

دراصل ابھی تک جہاں کہیں بھی پاکستان میں  جس طبقے کو کرونا وائیرس نے متاثر کیا ہے وہ معاشی طور پہ معاشرے کے بہتراور مستحکم لوگ ہیں ۔ یعنی یہ وہ لوگ ہیں جو یا تو بیرون ملک سے آئے ہیں اور پھر اپنی جیسی ہی کلاس میں انہوں نے موومنٹ کی ہےاور انہی کو متاثر کیا ۔ یہ طبقہ پھر بھی بہت سے احتیاطی تقاضوں کا اہتمام کرتا ہے ، اسی طبقے سے آپ کو کرونا ٹیسٹ اور صحتیابی یا کسی موت کی خبر مل رہی ہے  ، ابھی تک بالعموم  کسی لیبر کلاس ، غریب طبقے سے خبر شازرونادر ہی نظر سے گزری ہوگی ماسوائے خیبرپختونخواہ کے جہاں اب  مشرق وسطیٰ سے لیبر کلاس آرہی ہے ۔ اگر انکی ائیرپورٹس پہ ٹیسٹنگ اور اسکریننگ  مثبت اور موثر انداز میں ہو گئ تو عام شہری بڑی حد تک محفوظ رہے گا

دوسری طرف لاک ڈاؤن کا ایک فائدہ  بہرحال یہ ہوا ہے کہ بڑے  اور وسیع پبلک انٹرایکشن کے نہ ہونے کی وجہہ سے  غالبا اس کا پھیلاؤ بہت حد تک محدود ہی رہا ہے ۔  خاص طور پہ کم آمدنی والے طبقے میں جو تنگ اور محدود گلیوں اور نہایت چھوٹے مکانات میں رہتے ہیں اور غالبا ان کا مدافعاتی نظام بھی  دیگر شہری طبقوں سے بہتر ہوتا ہے

جو چیز سمجھنے کی ہے کہ پاکستانی معاشرہ کمبائینڈ فیملی سسٹم  میں رہتا ہے ۔ یہ ممکن ہے کہ یہ کسی  ۵۵ سال سے کم عمر فرد کو لگا ہو یا خدانا خواستہ لگے ۔ اسکو دو ایک دن بخار رہا ہو  یا خدانا خواستہ رہے اور پھر وہ ٹھیک  بھی ہو چکا ہو ۔ مگر معاشرتی سسٹم کی وجہہ سے اس امر کے ممکنات بہت زیادہ ہوں گے کہ ان کے کسی کے والدین کو یا  گھر میں موجود دیگر بزرگوں کو انہی سے منتقل ہو اور وہ ان بزرگوں کے لئیے مہلک ثابت ہو جائے

یہ بات بھی اب طے شدہ ہے کہ اب ہم کو اس وائرس کے ساتھ ہی رہنا ہے ۔ اسکے ساتھ ہی معاشی ، سماجی اور معاشرتی سرگرمیاں کرنی ہیں ۔ ہم سب کچھ بند کرکے گھروں پہ بیٹھ نہیں سکتے۔مگراب  ایک نیا ضابطہ زندگی بنانا ہو گا جو بہت حد تک بن ہی چکا ہے ۔ بہت کچھ تبدیل ہو جائے گا اور بہت کچھ تبدیل ہو چکا ہے ۔ آہستہ آہستہ سب کچھ ہی نہ کچھ کھل چکا ہے ۔ کون سا کاروبار زندگی ہے جو بند ہے ، جو بند ہیں وہ بھی ۱۵ دن کے اندر اوپن ہو جائے گا ۔ دنیا کے صف اول کے ممالک بھی لاک ڈاؤن برداشت نہیں کر سکتے تو ہم تیسری دنیا کے باسی کس کھیت کی مولی ہیں ؟

اب سوال یہ بھی ہے کہ جب تمام معاشی سرگرمیاں انشااللہ بحال ہو جائیں گی تو  پھر کیا ہو گا ؟ کیا آپ کو کسی بھی سطح کی حکومت سے کسی خیر کی توقع ہے؟   کرپٹ نظام اور کرپٹ زہن کے افراد سے ہم کو نیکی کی امید رکھنی  ہی نہیں چاہئیے ۔ اب ابھرتی ہوئی مسلکی شدت پسندی سب کے سامنے ہے ۔ انتظامیہ اور عدالتیں  تک اس شدت پسندی اور تفرقہ بازی کا حصہ ہیں ۔ اس رو میں اہل دانش بھی بہے ہوئے ہیں کوئی پرسان حال نہیں

یہ  بھی سمجھنا چاہیئے کہ کرونا کا  پرائیوٹ ٹیسٹ  کم از کم بھی ۵۰۰۰ کا ہے  اور سرکاری کروانا جوئے شیر لانے کے مترادف ہے۔ حفاظتی اقدامات کی اپنی ایک قیمت ہے ۔ ان سب کا بوجھ عوام پہ ہی آنا ہے

ہم کو یہ بھی معلوم ہونا چاہیئے کہ ہمارے پاس ہنرمند طبی عملے کی شدید کمی ہے ۔ اگر کوئ ایک بھی اس وائیرس کا شکار ہوتا ہے تو وہ کم ازکم ۱۵ دن کیلیئے فرنٹ لائین سے آؤٹ ہو جاتا ہے ۔ پھر اسکا متبادل کون؟  جتنا ہسپتالوں پہ دباؤ بڑھے گا ۔ ہنرمند طبی عملہ پیچھے ہوتا جائے گا ۔ اور علاج کی عمومی سہولیات بھی خطرے میں پڑسکتی ہیں ۔  پھر کیا ہو رہا ہو گا  کہ جزباتی لوگ ۔ ہسپتال کی کھڑکیاں  اور دروازے توڑ رہے ہوں گے ۔ میڈیکل اسٹاف پہ تشدد ہو رہا ہو گا اور کسی موبائیل کیمرے سے کوئ بھی فرد بغیر جانے بوجھے سمجھے طبیبوں کے ظلم کی کہانی سنا رہا ہوگا اور ہم سب اسکو پھیلا کر خیرکثیر میں شامل ہوں گے ۔ نہ سچ جانتے ہوں گے اور نہ ہی معلوم کرنا چاہ رہے ہوں گے اور ڈاکٹرز کو ڈاکو کہہ رہے ہوں گے  اور بیمار ہو کر پھر اسی کی تلاش میں سرگرداں ہوں گے

یہ الگ بات کہ جو ڈاکٹرز اپنے خدشات بیان کر رہے ہیں ان کی اکثریت کا  تعلیمی اور تجرباتی ٹریک ریکارڈ نہایت   شاندار ہے ، یہ تمام طبیب اپنی اپنی فیلڈز میں ۳۰، ۳۰ سال کا  تجربہ رکھتے ہیں  ، قابلیت میں انکا کوئی ثانی نہیں ۔ ماہر فن ہیں ۔ زمینی حقائق سے آشنا اور اس سے نبرد آزما ہیں ۔ ساتھ میں خوف خدا رکھتے ہیں ؛ کوئی مائی کا لعل ثابت نہیں کرسکتا کہ وہ کرونا سے ممکنہ خطرات کسی دنیاوی لالچ یا حرص زر کی بنیاد پہ  لوگوں کو بتا رہئے ہیں ۔ معاشرے کے معزز ، معتبر اور سنجیدہ لوگ ہیں ۔ مگر مفروضوں کے گرد گھومتا ، نابالغ سوچ کا شکار سازشی زہن وہ بات نکال لایا ہے کہ جس کا کسی فسانے میں زکر نہیں۔کیا کہیں کہ چاند کا تھوکا اسی کے منہ پہ واپس آتا ہے

مگر اب کاروبار زندگی شروع ہو چکا ہے ۔ بازار آباد ہیں ۔ ساتھ ہی تلخ ترین سچ یاحقیقت یہی ہے کہ اب ہم سب کو انتظار کرنا چاہئیے یا توقع رکھنا چاہئیے کہ خاکم بدھن  ہم سب میں سے کوئ نہ کوئ اسکا شکار ہو  سکتا ہے۔ کیونکہ لا محالہ یہ ہونے جا رہا ہے ۔ یہ خطرہ سامنے کھڑا  ہے  اور موجود ہے۔ اسکا مقابلہ اسکے علاوہ کیا ہے کہ اس بات کو تسلیم کریں کہ اس بات کے چانسس بہت ہیں کہ ہم سب کےاس میں مبتلا ہو جانے کے چانسس بڑھتے جا رہے ہیں اور اسکا کوئی تدارک نہیں

سچ یہ ہے کہ اس اندیکھے دشمن کے وار  کے انداز سے ہم سب ناآشنا ہیں ۔ اس بات کو بھی سمجھنے کیلئے کسی راکٹ سائینس کی ضرورت نہیں کہ ہم جتنی بھی احتیاط کرلیں مگر یہ وائیرس  کسی دوسرے کی بداحتیاطی کی وجہہ سے  ہم تک پہنچ سکتا ہے۔

یہ وائرس کہاں اور کیسے وار کرتا ہے ۔ ابھی خود بہت  تحقیقاتی تقاضے مانگتا ہے ۔ اس نے جوانوں کو بھی تین دنوں میں تلپٹ کردیا ہے اور بزرگوں کو بھی ہم سے جدا کردیا ہے ۔ یہ داخل ہونے کے بعد جسم کے کس کس جگہہ پہنچ جاتا ہے  اور کیا کیا حشر سامانیاں کرتا ہےابھی تک حل طلب مسئلہ ہے

زندگی اب اتنی سادہ نہیں رہی  کہ جتنا ہم سمجھ رہے ہیں ؛ بس اب لائیف اسٹائیل  کی تبدیلی ہی حقیقت ہے ۔ عوام کے مزاج میں تبدیلی حکومتی رٹ کے بغیر ممکن نہیں ۔ اگر سرکار چاہے گی تو  عوام کو اچھی طرح ٌسمجھا  سکتی ہے ۔ اگر نہیں تو مضامین کے مضامین لکھ دیں کچھ نہیں ہونے کا ۔ عوام کو سمجھانا اور اس پر عمل پیرا کروانا صاحب اقتدار اور صاحب طاقت لوگوں کا کام ہے

اگر ہم میں سے اکثریت  حقیقت کے ایک زہنی انکار کی کیفیت میں رہنا چاہتی ہے  تو ضرور رہے ۔ مگر   زندگی کی بحالی ضروری ہے ۔ لیکن یہ  اب کسی نئے معاشرتی ضابطوں کے ساتھ  ہی ممکن ہو گا ۔ حکومت نہیں کرے گی تو ازخود ہم کو کرنا ہو گا مگر کرنا ہو گا اور مفروضوں کی بازگشت سے نکل کر حقایق کی دنیا میں رہنے کے ڈھنگ سیکھنے ہوں گے

مشال قتل کیس ۔ کچھ اہم پہلو – حصہ دوئم

In Urdu Columns on February 10, 2018 at 2:54 pm

7 mins · 

مشال قتل کیس کے ایک زاویہ پہ ہم نے گزشتہ قسط میں بات رکھی کہ انتظامیہ اس بات کی زمہ دار ہے کہ اس نے طلبا میں اشتعال انگیزی پیدا کی

مشال کیس اور نقیب اللہ کیس میں کچھ چیزیں بہت یکساں ہیں
ٌ* دونوں کو بہیمانہ طریقے سے قتل کیا گیا
* دونوں ماورائے عدالت ہی قتل کئیے گئے
* دونوں کی فیس بک پہ بہت عمدہ اور خوبصورت تصاویر موجود تھیں ۔ جس نے ایک عام فرد میں اسکی ہمدردی پیدا کی اور اسکا ایک دوسرا امیج پیدا کیا

مگر مشال کے اپنے خیالات کیا تھے ؟ یہ بھی ایک اہم بحث ہے

صوابی ،خیبر پختونخواہ پاکستان سے تعلق رکھنے والا نوجوان مشال خان26 مارچ 1992ء میں ایک پشتون مسلمان گھرانے میں پیدا ہوا۔
آئ سی ایم ایس ایجوکیشن سسٹم پشاور سے 2012ء میں میٹرک پاس کیا۔
بعد ازاں آئ سی ایم ایس کالج سسٹم پشاور سے ایف ایس سی پری انجینئرنگ کا امتحان پاس کر کے
2013ء میں سکالر شپ پر پہلے تاشقند،ازبکستان،پھر سینٹ پیٹرز برگ،روس چلا گیا۔بعد ازاں بلغراد سٹیٹ یونیورسٹی روس۔۔
۔The National Research University “Belgorod State University” ۔۔۔۔میں 2013ء میں سول انجینئرنگ میں داخلہ لیا۔
درمیان میں وہ برلن،بیلاروس اور پولینڈ میں بھی کچھ عرصہ مقیم رہا۔
2014ء میں وہ واپس پاکستان آگیا جہاں اس نے اگست 2014ء میں AWKUM_KP یعنی عبدالولی خان یونیورسٹی مردان میں جرنلزم اور ماس کمیونیکیشن کے شعبے میں داخلہ لیا۔اس کا یہ کورس 10 اگست 2018ء میں مکمل ہونا تھا کہ یہ حادثہ پیش آٓگیا

مشال کی فیس بک پروفائیل ۔ مختلف گروپزمیں انکے کمنٹز ۔ انکی سوچ ۔ ان کے والد صاحب کی شخصیت (جن سے اسکے قطعی خوشگوار تعلقات نہیں تھے) سے یہ بات واضح ہو جاتی ہے کہ انکے خیالات اور افکارات میں مزہب کی حیثیت ثانوی تھی ۔ ان کا اپنا تعلق پختون ایس ایف سے تھا ۔ کمیونزم اور سوشلازم کے حامی تھے
مگر انکے خیالات ملحدانہ تھے یا وہ خود ملحد تھے یا انہوں نے کوئ ایسی بات کی کہ جس میں توہیں رسالت ﷺ کا شائیبہ یا معنی نکلتے تھے ۔ تحقیق طلب بات ہے ۔

ایک آدمی سیکولر یا لبرل ہو سکتا ہے ۔ مزہب کے حوالے سے اشکالات ہو سکتے ہیں مگر کیا وہ کوئ خاص لائین کراس کر چکا تھا ۔ ابھی واضح نہیں ۔ مگر یہ بات ثابت ہے کہ طلبا میں اشتعال نوٹس لگنے والے دن ہی پھیلا اور اسی دن یہ واقعہ ظہور پزیر ہوا

دوسری طرف JIT رپورٹ میں یہ لکھا ہے کہ (دی نیوز کے مطابق)
The report says a particular group incited mob against Mashal over false charges of blasphemy.

The investigating team has found no evidence against Mashal for blasphemy against religion or Prophet Hazrat Muhamamd ﷺ (Peace Be Upon Him). It said propaganda about blasphemy was launched against Mashal with a proper planning as a particular political group was scared of his activities.

یعنی مشعل کے ساتھ تو یہ ہوا کہ
؎ دیکھاجو کھا کے تیر کمیں گاہ کی طرف
اپنے ہی دوستوں سے ملاقات ہو گئ

اسکی اپنی جماعت کے ہی لوگوں نے اسکے خیالات کو متنازعہ بنا دیا۔ مثلا ملزم بلال بخش کے خلاف مردان کے مختلف تھانوں میں آٹھ کے قریب ایف آئی آرز درج تھیں اور یہ تمام مقدمات پارٹی کے لیے ہونے والے جلسوں، گھیراؤ جلاؤ یا پی ایس ایف کے مختلف سرگرمیوں کے دوران درج ہوئی تھیں۔ ان پر مردان کالج کے پرنسپل اور سکینڈری بورڈ مردان کے چیئرمین پر حملہ کرنے کے جرم میں دو مقدمات درج کیے گئے تھے۔

ملزم بلال بخش ویسے تو یونیورسٹی میں ملازم تھے لیکن ملازمت سے زیادہ وہ یونیورسٹی میں پی ایس ایف کے سرگرمیوں میں سرگرم تھے ۔ یونیورسٹی کے طلبہ کے مطابق ملزم بلال بخش پی ایس ایف کے اندر ایک گروپ کے سرغنہ تھے جن میں ان کے ساتھ چند دیگر طلبہ اور ملازمین شامل تھے جن میں تنظیم کے صدر صابر مایار، اجمل مایار، واجد ملنگ اور اسد کاٹلنگ (کلرک) قابل ذکر ہیں۔

اجمل مایار بھی مشال خان قتل کیس میں گرفتار ہیں جبکہ دو دیگر ملزمان صابر مایار اور اسد کاٹلنگ بدستور روپوش ہیں۔

پولیس ذرائع کے مطابق مشال خان کی اس گروپ کے ساتھ کئی مرتبہ تلخ کلامی اور تو تو میں میں ہو چکی تھی، بلکہ یہاں تک کہا جاتا ہے کہ ایک مرتبہ مقتول اور ملزم بلال بخش کے مابین لڑائی ہوئی تھی جس میں ملزم کو معمولی مار پڑی تھی۔

اس کے علاوہ مشال خان بھی پشتون سٹوڈنٹس فیڈریشن کا حصہ تھے اور وہ تنظیم کی سرگرمیوں میں شرکت بھی کرتے تھے جس سے یہ گروپ ان سے خائف تھا۔

اس گروپ کو یہ خدشہ تھا کہ چونکہ مشال خان کا تعلق صوابی سے ہے اور ان میں صلاحیتیں بھی پائی جاتی ہیں، لہٰذا انھیں یہ ڈر تھا کہ ایسا نہ ہو کہ کسی مرحلے پر ان سے پی ایس ایف کی صدارت چھن جائے۔

سرکاری ذرائع کے مطابق ملزم بلال بخش وہ شخص تھے جس نے طلبہ کو مشال خان کے خلاف اکٹھا کرنے میں اہم کردار ادا کیا اور وہی نعرے لگا کر ان کے پیچھے دوڑ پڑے جس سے حالات سنگین ہوئے۔

مزیدار بات یہ ہے کہ قاتل جماعت کے افراد ہی مشال کے والد کے ترجمان بنے بیٹھے ہیں
—————————————————————————
مگر مقامی طور پہ سوال اٹھایا جا رہا ہے کہ

* جس وقت JIT کا پروسیس چل رہا تھا اس وقت KPK پولیس اندھوں کی طرح گرفتاریاں کر رہی تھیں ؤ باوجود اشتہار کے کس میں ہمت تھی کہ اگر وہ پیش ہو اور اسکو بھی اس کیس میں بطور ملزم نہ دھر کیا جائے
* مشال کے خیالات پہ اس سے ساتھی طالب علموں کی بحث و مباحثہ کوئ نئ بات نہیں تھی ۔ مشال کے خیالات سے اسکے والد اور اسکے خاندان والے کیا واقف ؟ وہ تو نامعلوم کب سے گھر سے باہر تھا ۔ پہلے پشاور میں ممکنہ ہاسٹل لائیف پھر روس اور دیگر ممالک میں قیام ۔
* وہ تو بعد از مرگ مشال کے بارے میں وہی کہیں گے جو وہ کہہ رہے ہیں ۔ جیسا بیٹا ان سے بہت قریب تھا ۔ ان سے کوئ چیز معلوم کرنا خود ایک حماقت ہے
* اسکے خیالات سے صحیح آگاہی اسکے کلاس فیلوز دیں گے اور وہ اسکے خیالات سے متفق نہیں خاص طور پہ Land Of Pakhtoons نامی گروپ میں مشال نے جو کچھ کہا ہے اس پہ کئ سوالات اٹھائے جا سکتے ہیں
* مردان کے عام عوام مشال کے نظریات کے حوالے سے مختلف ڈائیلاگز کی بنیاد پہ مشال کو کلئیر قرار نہیں دیتے
* تاہم کوئ فرد اسکا دل چیر کر نہیں دیکھ سکتا کہ مشال کو نبی کریم ﷺ سے کس قدر محبت تھی

مشال کے قتل میں مزہبی جزبات کا عمل دخل ضرور تھا مگر کسی بھی مزہبی جماعت اور گروہ کا عمل دخل نہیں تھا بلکہ خالصتا ANP اور PTI کے افراد اسکو لیڈ کر رہے تھے

حامد میر صاحب کا کہنا ہے کہ “انہوں نے اپنی گمراہی کے باوجود ایک بے گناہ انسان کو ناصرف قتل کیا بلکہ اس کے بعد جشن بھی منایا اور پھر قسمیں بھی کھائیں اور وعدے بھی کئے لیکن اس میں سخت سزا صرف 6 لوگوں کو ملی ہے اور ایک شخص جو مطلوب ہے اور ابھی تک فرار ہے اور اس کا تعلق بھی صوبے کی حکمران جماعت سے ہے،”

مشال قتل کیس ۔ کچھ اہم پہلو۔ حصہ اول

In Urdu Columns on February 10, 2018 at 9:20 am

کیوں نہ بات ہم یہاں سے شروع کریں کہ

* ماورائے عدالت اور قانون کسی بھی فعل و قتل کی حمایت و تائید نہیں کی جا سکتی ۔ نہ گزرے ہوئے کل ، نہ آج اور نہ ہی آنے والے کل میں
* کسی بھی لاش کا مثلہ کرنا بھی قطعی درست نہیں

mashaal-3

توہین رسالت ﷺ بہت ہی حساس مسئلہ ہے
کسی کو “مظلوم / شہید یا مجبور” کہنے کا حق صرف اسی صورت میں جائیز ہو گا کہ جب عدالت فیصلہ دے کہ فلاں اس کیس میں قصوروار ہے اور فلاں اس کیس سے بری ہے

مشال خان کیس میں سب سے نازک ، حساس اور اشتعال انگیز حرکت “یونیورسٹی انتظامیہ” نے کی ہے اور اسکے ساتھ پختون اسٹوڈنٹس فیڈریشن اس کام میں ملوث تھی ۔

نوٹس بورڈ پہ اس قدر حساس نوٹس کو اسطرح آویزاں کرنا کہ ہم ان تین افراد کے خلاف توپہن رسالت ﷺ اور مزہب کی بنیاد پہ تحقیقات کر رہے ہیں اور انکی ہاسٹل اور یونیورسٹی آنے پہ پابندی ہو گی

اسطرح کے الفاظ کے استعمال سے توہین رسالت ﷺ کا صرف الزام لگا دینا ہی نبی کریم ﷺ سے والہانہ محبت رکھنے والے پختون طبقے کے جزبات کو چھیڑنے کے مترادف ہے ۔ اس الزام کو لگانے کے بعد انتظامیہ نے ان تین افراد کو کوئ سیکوریٹی دینے سے بھی انکار کردیا ۔ JIT میں واضح لکھا ہے کہ پولیس کا کردار مشکوک ہے ۔

اسکا مطلب یہ ہے کہ یہ کیس کرپٹ یونیورسٹی انتظامیہ + یونیورسٹی کے سیاسی بنیادوں پہ بھرتی کئیے گئے ملازمین اور پولیس کی مدد اور آشیدباد سے یہ پورا معاملہ کھڑا کیا گیا ۔

اس واقعے میں جزباتی نوجوانوں کے حب نبوی ﷺ کے جزبات کو اشتعال دلا کر اور بھڑکا کر اپنے مقاصد حاصل کئیے گئے ۔

گو کہ JIT نے اس مسئلہ کی طرف نشاندہی کردی گئ ۔ مگر فیصلے کی جلدی میں ان عوامل کو قطعی نظرانداز کر دیا گیا ہے اور یونیورسٹی انتظامیہ کے خلاف تاحال کوئ کاروائ عمل میں نہیں لائ گئ

جئیو کی درجہ زیل رپورٹ بطور ریفرنس دی جا رہی ہے

https://www.geo.tv/…/144533-no-proof-of-mashals-involvement… )

According to the JIT report, the president of university employees, Ajmal Mayar, revealed during investigation that around a month before the incident PSF President Sabir Mayar and an employee of the varsity, Asad Katlang, went to him and said they wanted to remove Mashal from their way as he was a threat to their group. The report added that Sabir and Asad did not mention how they wanted to get rid of Mashal, but they are on the run since the day of the killing.

Mashal, who was also part of PSF, would openly speak against irregularities in his varsity Abdul Wali Khan University Mardan (AWKUM), the report added. He had protested over the issue of university not having a vice chancellor after the previous one retired, as the absence of one would hinder the students from getting their degrees, read the report. “No one from the AWKUM management visited the camp, due to which Mashal called them thieves.”

The report has revealed that the most of the people at the university, from the registrar to security officer, were hired on the basis of nepotism and not merit. “They even have criminal records and should be investigated,” the report read. “This has disrupted the environment of the university

The report states the murder was premeditated and also raises questions about the role of the police

#احساسات 

In Urdu Columns on February 9, 2018 at 1:46 pm

#احساسات
(کچھ قریبی دوستوں کا مجھ سے مکالمہ )

download (33)

دیکھو ! اس مسئلہ پہ
میں تمہاری کوئ بات نہیں سنوں گا ۔
بس تم اپنے زہن کی کھڑکیاں بند کرکے
اپنی سوچ پہ پہرے لگا کر
صرف میرے موقف کی ہی تائید کرو
کیونکہ جو کچھ میں کہہ رہا ہوں “وہی” صحیح ہے
تم جو کچھ بیان کرو وہ “غلط” ہے اور جو کچھ میں کہوں وہی “درست”
تمہاری سوچ “باطل” ۔ میرے خیالات “برحق”
تم “ظلم” کے ساتھی اور میں “انصاف” کا علمبردار
تم اپنی سوچ کے ساتھ “جھوٹے، مکار ، منافق، بیغیرت اور دھوکہ باز”
بلکہ تم تو یہ بتاؤ کہ تم میری سوچ کے مطابق “عمل” کب کرو گے ۔ ٹائم لائینزدو
اور اگر نہیں عمل کرو گے
تو تم “پست زہنیت” اور “سکہ بند سوچ” کے حامل
تم جن کے حامی ۔
وہ تمام “جاہل ، اجڈ ، گنوار اور انتہاپسند”
جبکہ میری سوچ “معتدل، اعلیٰ و ارفع”
تم اس قابل ہی نہیں کہ ۔ تم سے “مکالمہ” کیا جا سکے ۔
“مکالمہ” اہل علم کا کام ہے ۔ “اہل علم” سے ہی کیا جاتا ہے
اور “اہل علم” کون ہیں وہ بتانا میرا کام ہے ۔ تمہارا نہیں
صد شکر ۔ کہ مجھ میں اور تم میں تفریق ہو گئ
اب میری توپوں کا رخ ۔ تماہرے خلاف ہو گا ۔
میں نے بہت دیکھ لیا اور برداشت کر لیا ۔
اب فیصلہ فیس بک کے پیجز پہ ہو گا ۔ سوشل میڈیا پہ ہو گا
تمہاری رائے اگر مجھ سے مختلف ہے تو تم میرے پاس سے ہی دفان ہو جاؤ
نہیں چایہے مجھے تم جیسی “سوچ” والےگھٹیا لوگ
مجھے بس اپنی ہی سوچ والے لوگ درکار ہیں ۔
جو میری ہاں میں بس ہاں ملائے
سنو !!!
تم ایک بند کنویں کے قیدی ہو ۔
تمہاری بصیرتوں ، سماعتوں اور ازہان پہ “سمع و اطاعت” کے دبیز پردے پڑے ہوئے ہیں ۔
کیونکہ تم میرے موقف کے حامی نہیں
دیکھو میری تائید میں کتنے لوگوں نے کمنٹز کئیے ہیں ۔ کس قدر لائیکنگ ہے
میں باہمت ہوں اور تم بزدل اور ایک محدود سوچ کے عکاس
اسلئیے
تمہارا ٹھکانہ جہنم ہے ۔ تم آگ کے شعلوں کے شکار ہوگے ۔
تم کچھ نہیں میں “سب کچھ”
تمہارے جیسوں سے ملک کا یہ حال ہوا ہے
خدا کا شکر ہے کہ اب میرا “تم” سے کوئ تعلق نہیں
مجھے خدا تم جیسوں سے محفوظ رکھے ۔ آمین

مثالیں ، پیغام اور مسلم لیگی قیادت

In Urdu Columns on February 1, 2018 at 8:22 am

#سپریم_کورٹ ۔ مجھے کیوں نکالا؟
اورسپریم کورٹ پہ کی جانے والی تسلسل کے ساتھ مسلم لیگی تنقید یا دشنام ترازی کا جواب پہلے اشاروں اور استعاروں کے زریعے دے رہی تھی اور اب آج #نہال_ہاشمی_کیس کے فیصلے کے زریعے مثال قائم کر کے واضح پیغام دے دیا ہے

images (14)

#سپریم_کورٹ پہ جلسوں میں کی جانے والی تنقید کا جواب حکومت پنجاب کے ہسپتالوں میں جا کر Management Capabilities کو چیلنج کیا ۔ جو کہ عوام #سپریم_کورٹ کی اس موومنٹ کو اپنا مسئلہ حل ہوتے دیکھ کر تحسین کی نگاہ سے دیکھ رہے ہیں

اسی طرح سندھ کی حکومت کو پانی ، زمینوں پہ ناجائیز قبضوں اوردودھ کی کوالٹی پہ گھیرا گیا ہے ۔#عدالتیں آئ جی سندھ کی پشتبان بن کر سامنے آئ ہیں ۔ جب ہی بلالول بھٹو نے جیوڈیشنل کمیشن کو نہ بلانے پہ تنقید کی ۔ وزیر اعلی سندھ بھی چلتے پھرتے عدالتوں کی وجہ سے اپنی بے بسی کا اظہار کر ہی دیتے ہیں

عدالتی فیصلوں پہ کی جانے والی کھلے عام تنقید کے خلاف پہلی مثال #نہال_ہاشمی کو بنا دیا گیا ہے ۔ باوجود انکی غیر مشروط معافی کے عدالتوں نے انکو معاف نہیں کیا ۔ 5 سال کیلئے نااہل ، جرمانہ اور ایک ماہ کی قید سنا دی گئ

یہ سزا ہے یا پیغام اسکے لئیے شام 7 بجے سے لیکر 12 بجے تک مختلف تجزیہ نگار ٹی وی پہ ایران طوران کی کہانی سنائیں گے ۔ مگر ہم جیسے نکموں کی نظر میں یہ ایک پیغام ہے کہ جب کہ عدالتوں میں مسلم لیگی زعما کے خلاف #توہین_عدالت کا کیس سماعت کیلئے منظور کر لیا گیا ہے تو ایسا اور بہت ساروں کے ساتھ بھی ہو سکتا ہے

الیکشن کچھ ہی فاصلے پہ ہے مسلم لیگی قیادت کو احتیاط برتنی چاہئیے ۔ خیال رکھنا چاہئیے ۔ الفاظ کے استعمال میں محتاط رہیں ۔ آج کل وہ مشکلات میں ہیں ۔ الیکشن کی تیاری کیلئے زہنی اور اعصابی طور پہ انکو Maturity کا اظہار کرنا ہو گا ۔ کچھ تلخ حقائق کو چاہے وہ انکو غلط سمجھیں یا درست بعین ہی ماننا پڑے گا

مسلم لیگ کو چاہیئے کہ اپنے کام کی بنیاد پہ کمپین چلائے ۔ ہوا کے رخ کو دیکھ کر تدبر کے ساتھ فیصلے کریں ۔ منفی سے زیادہ مثبت سوچ اپنائیں ۔ اسی میں انکا بھلا ہے

POB Eye Hospital

In Urdu Columns on January 31, 2018 at 7:23 am

پاکستان اسلامک میڈیکل ایسوسئیشن کا منور چورنگی ، گلستان جوہر میں قائم کردہ POB Eye Hospital جدید ترین سہولیات پہ مبنی اسٹیٹ آف دی آرٹ ہسپتال ہے ۔

27023418_10156134262074826_97779955170493482_o

جہاں جدید ترین مشینوں اور سہولیات کے زریعے ہر طبقے کے مریضوں کی آنکھوں کا بالکل مفت علاج ہوتا ہے ۔

اگر آپ فائیل کی مد میں صرف 10 روپئے دے سکتے ہیں تو دے دیجئیے (حالانکہ اس فائیل کی پرنٹنگ کاسٹ ہی کہیں زیادہ ہے) – آپ بے فکر ہو کر اپنا علاج کروائیے ۔ اس شہر کراچی میں اللہ کی راہ میں خرچ کرنے والوں کی کمی نہیں

27540314_1587093288051250_4475435956546684010_n

ہسپتال کی بلڈنگ اسکی تزئین و آرائیش خود اپنی مثال آپ ہیں ۔ اس میں موجود سہولیات، ماحول اور مشینوں کی قیمت ہی کروڑوں میں ہے اور یہ سب کچھ بلا معاوضہ ہے

آپ کوئ بھی پھنے خان ہوں ۔ کوئ بھی چیز ہوں ۔ کاونٹر سے ٹوکن لیں اور اپنے نمبر پہ ڈاکٹر کو دکھا دیں

یہاں اللہ کی راہ میں کچھ دیوانے ہیں جو اپنا وقت اور پیسہ اس کار خیرمیں دن رات لگا رہے ہیں

بلاشبہ مولانا مودودی اور اسلامی جمعیت طلبا سے متاثرہ نظریاتی افراد ہی ہیں جن کو دنیا اورآخرت کا شعور ہےاور جوایسی خدمات فی اللہ ایمانداری اور خلوص نیت کے ساتھ پیش کر سکتے ہیں