Kashif Hafeez Siddiqui

Archive for the ‘Urdu Columns’ Category

نقیب کے نقیب

In Urdu Columns on January 18, 2018 at 3:31 pm

قدرت ظالم یقینا نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ اسی لئیے آخرت موجود ہے ۔۔۔۔۔۔ سارا حساب کتاب وہاں بے باک ہو گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کوئ سفارش ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئ کرسی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئ طاقت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئ ایجنسی کام نہیں آئے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بس اللہ کا قانون ہو گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور انصاف ہو گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جو کہ شفاف اور بے رحم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نقیب اللہ محسود ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ قاتلوں سے سوال پوچھے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مجھے کس جرم میں قتل کیا گیا ؟ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ صرف نقیب ہی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہاتھ پاوں بندھے ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پشت پہ گولیاں کھانے والے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جعلی پولیس مقابلوں میں مارے جانے والے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ راہ چلتے اغوا ہوکر قتل ہو جانے والے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سب مظلوم اللہ کے حضور مدعی ہوں گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس روز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ خوش اور نازاں ہوں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور سب ظالموں کی ناک خاک آلود ہو گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ انشااللہ

سی ٹی ڈی کے اہلکاروں نے چپل گارڈن گل شیر آغا ہوٹل سے خوبصورت جواں سال، تین بچوں کے والد نقیب محسود کو اغوا کیا تھا. پولیس نےمقدمہ درج کرنے سےبھی انکار کیا تھا. نقیب کے تین بچے ہیں . جن میں نو سالہ نائلہ , سات سالہ علینہ اور دو سال کا بیٹا عاطف شامل ہیں. نقیب سہراب گوٹھ میں مقیم تھا .
نقیب محسود کے چاچازاد رحمان محسود نے “دی نیوز” کے رپورٹر دوست کو بتایا کہ نقیب محسود کسی بھی دہشتگرد کارروائی میں ملوث نہیں تھا. آپریشن راہ نجات کے بعد نقیب اپنے آبائی علاقے جنوبی وزیرستان کے تحصیل مکین گاؤں رزمک سے خاندان سمیت کراچی مستقل منتقل ہوا تھا

Advertisements

کراچی کے وکیل جن کا تعلق دیر سے ہے

In Urdu Columns on January 18, 2018 at 3:29 pm

کراچی کے لاکھوں پریشان او مضطرب بہاریوں ، بنگالیوں ، برمیوں اور پختونوں خاندانوں کے لئیے قومی اسمبلی میں آواز کراچی سے نہیں ۔ دیر سے ااٹھی ہے

26756828_2059712624055324_945836161063356634_o

الحمداللہ قومی اسمبلی میں جماعت اسلامی کے نادرا کے حوالے سے آئینی بل کو منظور کرتےہوئے قائمہ کمیٹی کے سپرد کردیا گیا ۔۔۔۔۔۔ جماعت اسلامی کی کراچی کے شہریوں کیلئے ایک اور بڑی پیش رفت ۔۔۔۔ ۔

مذکورہ بل جماعت اسلامی کے ممبران قومی اسمبلی صاحبزادہ محمد یعقوب ،صاحبزادہ طارق اللہ،شیر اکبر خان اور محترمہ عائشہ سید کی طرف سے جمع کرایا گیا تھا۔
بل جمع کرانے کا مقصد قومی شناختی کارڈ کے حصول میں پاکستانی شہریوں کو پیش آمدہ مشکلات کا ازالہ کرتے ہوئے ایک پہلے سے طے شدہ میکانزم کے ذریعے بلاک شدہ شناختی کارڈ اور مندرجہ ذیل کاغذات مہیا کرنے کی صورت قومی شناختی کارڈ جاری شامل ہیں ۔بل میں ایکٹ کی دفعہ دس کے بعد نئی دفعہ دس اے کو شامل کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ ایسے تمام افراد کو شناختی کارڈ جاری کردیے جائیں گے اور بلاک شدہ کلیئر کردیے جائیں گے جن کے پاس تیس سال سے پہلے تک کے مندرجہ ذیل کاغذات سے کوئی بھی ثبوت کے طور پرموجود ہوں

۱ ۔ ریونیو ڈیپارٹمنٹ سے تصدیق شدہ تیس سال قبل رجسٹرڈ شدہ زمین کے کاغذات۔
۲ ۔ مجاز اتھارٹی کی جانب سے جاری کردہ مقامی ڈومیسائل سرٹیفکیٹ۔
۳ ۔ ریونیو ڈیپارٹمنٹ کی طرف تصدیق شدہ شجرہ نسب
۴ ۔ پچیس سال قبل ذاتی یا خون کا رشتہ دار کی سرکاری ملازمت کی سند۔
۵ ۔ تیس سال قبل جاری کردہ مصدقہ تعلیمی سند۔
۶ ۔ درخواست دہندہ کو تیس سال قبل جاری کردہ پاسپورٹ۔

مذکورہ بل کو اگر قائمہ کمیٹی منظور کرتی ہے اور دونوں ایوانوں سے منظور ہوتا ہے تو پورے پاکستان میں شہریوں کے بلاک شدہ شناختی کارڈ کلیئر ہوجائیں گے اورجن کے پاس شناختی کارڈ نہیں ہیں اور پاکستان میں تیس سال پہلے کی موجودگی کا ثبوت ان کے پاس ہے تو وہ افراد بھی اس سے استفادہ کر یں گے

ظلم کی کوئ حد ہے

In Urdu Columns on January 18, 2018 at 3:26 pm

غم زدہ باپ کہتا ہے کہ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ اکلوتے بیٹے نے عصر کی نماز پڑھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چائے پی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ماتھا چوما اور بولا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دوستوں کے ساتھ کھانا وغیرہ کھا کر آتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پھر ہوا یوں کہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کسی موڑ پہ پولیس کے رکنے کا اشارہ بقول پولیس اس نے نہ جانے کیوں اگنور کردیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مستعد پولیس اہلکار جو ہر قاتل و ظالم کو پکڑ لیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فورا ایکشن میں آکر۔۔۔۔۔۔۔۔۔ گاڑی پہ فائرنگ کر دیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ براہ راست گاڑی پہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ براہ راست ڈرائیور پہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نہ کسی ٹائر پہ اور نہ ہی کوئ Chase ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بس ٹھائیں ٹھائیں ٹھائیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ پولیس والے سادہ لباس میں تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پھر ۲۲ سالہ انتظار کی لاش ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بلکتی ماں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دہائیاں دیتا باپ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اکلوتا بیٹا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اب قبر میں آسودہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایف آئ آرنامعلوم افراد کے خلاف ہے

اتنی نہ بڑھا پاکیٔ داماں کی حکایت

In Urdu Columns on January 18, 2018 at 3:25 pm

دیتے ہیں دہوکہ یہ بازی گر کھلا
===================

امن، انصاف اورمظلوم عوام کے حقوق کا دن رات بھاشن دینے والے ۔ کس قدر پرفریب اور دہوکہ باز ہیں اسکا اندازہ بابر اعوان صاحب کی ٹویٹ سے لگائیے ۔
اپنے آپ کو کس قدراصول پسند دکھانے اور بتانے کی کوشش کی ہے موصوف نے 
الفاظ کےالٹ پھیراور استعمال سئ دہوکہ دینے کی صریح کوشش کی ہے
ناک کو اوپر سے پکڑیں یا نیچے سے ناک ہی پکڑی جائے گی

آپ یقینا شاہ رخ جتوئ کے وکیل نہیں
آپ براہ راست شاہ رخ جتوئ جو قاتل ہے کے ساتھی غلام مرتضیٰ لاشاری کی طرف سےعدالت میں نہایت بھاری فیس لیکر پیش ہوئے۔
افسوس آپ سچ کو چھپا رہے ہیں ۔

آپ کواس دن کی Proceedings کی کاپی پیش کر رہے ہیں اور کہہ دیں کہ آپ قاتلوں اور ظالموں کے وکیل بنکر پیش نہیں پوئے ۔ پمارے پاس تو ثبوت موجود ہے
یا آپ کہہ دیں کہ یہ ڈاکٹر بابر اعوان آپ نہیں کوئ اور ہے

وکیل صاحب ! اسقدر پارسا نہیں بنئیے ْ
بقول شاعر

اتنی نہ بڑھا پاکیٔ داماں کی حکایت
دامن کو ذرا دیکھ ذرا بند قبا دیکھ

شاہ زیب قتل کیس کے مجرمان اور انکے وکلا

In Urdu Columns on January 18, 2018 at 3:23 pm

شاہ زیب قتل کیس کے مجرمان اور انکے وکلا !
=============================

یہ کون لوگ ہیں جو اسوقت قاتلوں کو بچانے کیلئے بھاری بھاری فیسز لیکر انصاف کا خون پروفیشنلزم کے نام پہ کر رہے ہیں ۔
فارق ایچ نائک ، لطیف کھوسہ ۔ بابر اعوان

یہی لوگ عدلتوں کے باہر عوامی جلسوں میں اپنی سیاسی حیثیت میں عدل و انصاف کے بھاشن دیتے ہیں اور چند ٹکوں کیلئے ظالموں اور قاتلوں کے ساتھ کھڑے ہو جاتے ہیں ۔ یہ بیغرت اور بے شرم لوگ ہیں ۔ اور ہمارا میڈیا انکو تبصروں کیلئے بلاتا ہے اور یہ کالے دل والے اپنے مکروہ چہرے لیئے بظاہر بھولے بن کر ہمارے سامنے بیٹھ جاتے ہیں

آج کی ہی خبر دیکھئے ۔ کون کون معاشرتی حقوق کے نام نہاد چمپیئنز مجرمان کی طرف سے پیش ہوئے
—————————————————————————————————-
شاہ زیب قتل کیس میں سول سوسائٹی کی جانب سے فیصل صدیقی نے کیس کی پیروی کی جب کہ مبینہ مرکزی ملزم شاہ جتوئی کی پیروی لطیف کھوسہ نے کی۔

ملزم سراج تالپور اور سجاد تالپور کی جانب سے محمود قریشی جب کہ غلام مرتضیٰ لاشاری کی طرف سے ڈاکٹر بابر اعوان پیش ہوئے۔

چیف جسٹس پاکستان نے مبینہ مرکزی ملزم شاہ رخ جتوئی سمیت سراج تالپور، سجاد تالپور اور مرتضیٰ لاشاری کا نام بھی ای سی ایل میں ڈالنے کا حکم دے دیا۔

چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے اس حوالے سے وزارت داخلہ کو تمام ایئرپورٹس کو ہدایت نامہ بھیجنے کا حکم دیا۔

اس کے علاوہ عدالت عظمیٰ نے کیس کے تمام فریقین کو نوٹس جاری کرتے ہوئے تمام ملزمان کے قابل ضمانت وارنٹ گرفتاری بھی جاری کردیئے۔

#زینب کا واقعہ ۔ قسط ۳

In Uncategorized, Urdu Columns on January 13, 2018 at 9:25 am

گزشتہ سے پیوستہ

کیا پاکستانی معاشرہ غیر محفوط اور جنسی ہیجان کا شکار ہے ؟
========================================

download (29)

* ریٹنگ کی دوڑ نے فل الوقت یہ بات قطعیت کے ساتھ ثابت کر دی ہے کہ میڈیائ اداروں میں کونٹینٹ ڈویلپمنٹ کے نام پہ جو لوگ بھرتی کئیے گئے ہیں انکو Social Sense نہ ہونے کے برابر ہے ۔ بہت ضروری ہے کہ انکو معاشرت ، طرز معاشرت اور فلسفہ معاشرت پڑھائ جائے

* قصور شہر کی حد تک دستیاب معلومات کے مطابق یہ تمام واقعات دو متصل تھانوں کی حدود میں ہوئے ہیں ۔ یہ واقعات تسلسل کے ساتھ ایک جیسی عمر کی بچیوں کے ساتھ ہوئے ہیں تو اسکا مطلب یہ ہے کہ اس معاملے میں ملوث ممکنہ طور پہ کئ افراد نہیں بلکہ ایک ہی فرد ہے جو یہ سب کچھ کر رہا ہے

* نفسیات کی دنیا میں اس کیفیت کو ایک بیماری کا نام دیا جاتا ہے اور اسکو Pedophillia کہتے ہیں ‘ جس میں مریض (مجرم) چھوٹے بچوں سے جنسی تعلق رکھتا ہے ۔ یہ Adultery زنا کاری یا Rape نہیں بلکہ اس سے بھی بڑھ کر کوئ قبیح حرکت ہے ۔

* موخرالزکر حرکات تو کسی جنسی شہوت اور جنسئی تحریک کا نتیجہ ہو سکتی ہیں مگراول الزکر تو ایک ویسی ہی نفسیاتی بیماری ہے جیسے ہم جنس پرستی ۔ گو کہ یہ الگ بات ہے کہ ہم جنس پرستی کے طرف داراس کو کسی زہنی بیماری کہنے کے خلاف ہی نہیں بلکہ اسکو انسانی حقوق کے ضمرے میں بھی لے آتے ہیں

* سب سے زیادہ پریشانی کی بات یہ ہے کہ قصور کے واقعے کی آڑ میں معاشرے کے رشتوں کی بھد اور تحقیر کی جارہی ہے بلکہ انکو مشتبہ بنایا جا رہا ہے ۔ اب چچا ، ماموں، پھوپھا، خالو، تایا ، بہنوئ جیسے رشتے بھی شک کا شکار کئیے جا رہے ہیں ۔ انکا تقدس ملیا میٹ کیا جا رہا ہے اور اس پلید فلسفے کو پروموٹ کرنے والے اسکے منفی اثرات کا سوچ بھی نہیں سکتے

* اسوقت پاکستانی قوم اور معاشرے کی 207 ملین کی آبادی کو جنسی ہیجان کا شکار بتایا جا رہا ہے ۔ گلوکار اور موسیقار شہزاد رائے کراچی پریس کلب میں فرماتے ہیں کہ ہر پانچ میں سے ایک بچہ جنسی زیادتی کا شکار ہے ۔ نہیں معلوم کہ یہ نمبرز انکے پاس کہاں سے آئے ہیں بصورت دیگر ہمارے تو محلے کے 500 گھر دائیں ہاتھ پہ اور 500 گھر ادھر بائیں ہاتھ پہ ایسا کوئ کیس دہائیوں سے نہیں سنا ۔ جو شرح شہزاد رائے نے بتائ ہے اسکے بعد تو مائیں اپنے بچے سڑک پر بھی نہیں بھیجیں ۔ الٹے سیدھے اعداد و شمار بتانا اور پھر اسکی میڈیائ تشہیر کود ایک نفسیاتی مسئلہ ہے

* اس میں کیا شک کہ یہ بیماری ہمارے معاشرے میں پھیل رہی ہے ۔ مگر کیا کیا جائے کہ اسباب معلوم کئیے بغیر عطائ طبیبوں کی طرح معاشرے کے بونے علاج کرنا شروع ہوجاتے ہیں

* سوال یہ ہے کہ جن ملکوں میں جنسی تعلیم دی جارہی ہے
کیا وہاں ریپ کی شرح کم ہوئ یا بڑھی ؟
کیا ان ممالک میں Molesting یا بچوں کے ساتھ جنسی زیادتی کم ہوئ یا بڑھی ؟
کیا وہاں ہم جنس پرستی کم ہوئ یا بڑھی ؟
کیا وہاں Save Sex کم ہوا یا بڑھا ؟
کیا وہاں شادیوں کی شرح کم ہوئ یا بڑھی ؟
کیا Single Parenting کی شرح کم ہوئ یا بڑھی ؟
بلکہ کیا ان ممالک میں اب Incestious Relationships مزید نہیں بڑھ گئے؟
کیا اس تعلیم کے نتیجے میں AIDS جیسے مرض اور STDs کی شرح کم ہوئ یا بڑھی ؟
اس جنسی تعلیم کو دینے کے فوائد کیا ہیں اور نقصانات کیا ہیں ؟ اسکی بیلنس شیٹ بننی چاہئے

* ایک اہم سوال یہ ہے کہ یورپ میں جنسی تعلیم کو کس مقصد کیلئے نصاب تعلیم میں شامل کیا گیا اور ہمارئ ہاں کس مقصد کیلئے شامل کیا جا رہا ہے

* شرم و حیا سے عاری زہن پاکبازی، عفت ، عصمت جیسے لفظوں سے واقف اور آشنا تو ضرور ہے مگر اسکے فہم ، مضمرات اور اسکے تصورات سے آگاہ اور شناسا نہیں

* سوال یہ بھی ہے کہ نصاب میں جنسی آداب کی تعلیمات کا مضمون شامل کرنے کا مطالبہ کرنے والے خواتین و حضرات میں “ماہر تعلیم” کس قدر ہیں ؟ شرمین عبید چنائے ، ملالہ یوسف زئ ، شہزاد رائے ، ماہرہ خان ، جبران ناصر اور دیگرمیڈیا اور سوشل ایکٹیوسٹ تو ہیں مگر ماہر تعلیم نہیں

* معاشرے میں ادب و آداب کے فروغ ، انٹرنیٹ کے استعمال کی حدود اور اسکے تقاضوں پہ مبنی بحث ، سوشل میڈیا کا درست اور والدین کا چیک ، سمارٹ فون پہ موجود ایپز کا استعمال اور اس پر چیک ۔ اسلامی تعلیمات کا منبر و محراب سے ترویج ، میڈیا کے زریعے پھیلتے ٖفحاشی و عریانی کے طوفان کے روک تھام پہ کوئ مثبت گفتگو نہیں

* اگر سوال اٹھا ہے تو اسکا جواب اہل الرائے اور اہل علم سے معلوم کیا جائے گا نہ کہ معاشرے میں خرابی پھیلائے جانے والے لوگوں سے ۔ ابھی پاکستانی معاشرہ علم کے موتیوں سے لبریز ہے ، ان سے رجوع ان کو اس موضوع کے ڈسکشن کے Loop میں لینا ازحد ضروری ہے

* سوال یہ بھی ہے کہ اسطرح کے جرائم کی روک تھام سزا کے حوالے سے کچھ سخت مثالیں قائم کرکے ہوگی یا نصاب میں جنسی تعلیم کے مضامین شامل کر کے ؟

جواب آپ بھی تلاش کریں اور ہم بھی

زینب کا واقعہ ۔ قسط ۲

In Miscellaneous, pakistan, Urdu Columns on January 12, 2018 at 9:19 am

گزشتہ سے پیوستہ

مملکت خداد پاکستان کا عدالتی نظام
====================

Corrupt-Judges

* تاریخ اس بات کی گواہی دیتا ہے کہ اسلام نے ظلم کے خلاف آواز بلند کی اور سستے ترین ، فوری اور بلا امتیازانصاف کے حصول کو یقینی بنایا ‘ محمد بن قاسم کت بت اہل سندھ نے اسکے مسلم ہونے کی وجہہ سے نہیں بلکہ فوری اور بلا متیاز برحق انصاف کی فراہمی کی وجہہ سے بنائے تھے جو بیشک اسلام کے زرین اصولوں پہ مبنی تھے

 

* انصاف کو روز اول سے امرا اور استحصالی طبقے کی دسترس سے دور رکھا گیا ۔ عدالتوں سے وقت کے حکمرانوں حضرت عمرؓ، حضرت علیؓ، ہارون الرشید اور عالمگیر جیسے جلیل القدر شخصیات کو عدالتوں میں پیش ہونا پڑا اور کئ فیصلوں میں قاضی نے حکمزان طبقے کے خلاف فیصلہ دیا ۔

* عدالتوں نے انصاف کی ایسی مثالیں پیش کیں کہ امن و امان خود بخود قائم ہو گیا ۔ قانون ہاتھ میں لینے کا معاملہ ختم ہوا اورانصاف کے نظام پہ اعتماد نے لوگوں کے جزبات کو قابو میں رکھا

* اسلامی قوانین کا نظام ۔ جن کو آج کے پڑھے لکھے لوگ وحشی قرار دیتے ہیں معاشرے میں ریاست کی رٹ اورجرم اورغلطی پہ بلا امتیاز قانون کا اطلاق کسی بھی بڑے سانحہ کو لگام دیتا ہے

* اسلام کی سزاوں میں وہ درس عبرت ہے جو کسی کو کسی جرم کے نتیجے میں ہونے والی سزا سے ہی خوف کی بدولت کسی اگلے قدم تک پہنچنے سے روک لیتا ہے

* قرآن واضح کہتا ہے کہ انسان کو اس کا علم نہیں کہ اللہ کی حدود کے بلا امتیاز اطلاق ہی میں خیر و برکت قائم ہوتی ہے ۔ اللہ تعالی کے خزانے زمین سے ابلتے اور آسمانوں سے برستے ہیں

* بدقسمتی سے عدالتیں انصاف فراہم نہیں کررہیں ۔ یہ تاثر اعلی ترین عدالتوں سے لیکر سب مجسٹریٹ لیول تک کا ہے ۔

* رشوت ، اقربا پروری اور امتیاز نے عدالتی نظام کو پامال کر دیا ہے ۔ وکلا ہر مجرم کی پشت پر موجود ہیں ۔ عدالتوں میں جنسی زیادتیوں کے کیسسز میں وہ وہ سوالات پوچھتے ہیں کہ آسمان بھی تھرا جائے ۔

* ابھی سندھ میں ہی شاہنواز جتوئ کا کیس ہی دیکھ لیں ۔ فاروق ایچ نائیک پروفیشنل بنکر قاتل کی طرف سے پیش ہوتے ہیں

* اسطرح کے کیسز میں کیونکہ عدالتیں فیصلے بروقت نہیں کرتیں تو کسی کو کوئ خوف نہیں ۔ پیشی پہ پیشی ، پھر مزید پیشیاں ۔ سوال جواب ، کبھی وکلا کی ہڑتال تو کبھی جج صاحب کی چھٹیاں کیا کوئ حصول انصاف کیلئے سوچ سکتا ہے

* دلچسپ بیان سابق وزیر اعظم اور صدر مسلم لیگ ن اور صدر حکمران جماعت جناب نواز شریف نے دیا کہ انصاف اورعدالتی نظام بہت مہنگا ہو چکا ہے انکو اب یہ احساس ہوا کہ عدالت میں مقدمہ لڑنا کس قدر مہنگا ہو چکا ہے اس کے بعد بھی انہوں نے کئی لوگوں کو اُس وقت حیران کر دیا جب انہوں نے اس خواہش کا اظہار کیا کہ اگر انہیں یہ بات اُس وقت پتہ چلتی جب وہ ملک کے وزیراعظم تھے تو وہ اس شکایت کو دور کرنے کے اقدامات ضرور کرتے۔ یہ ماننا تقریباً ناممکن ہے کہ یہ بات نواز شریف کو حال ہی میں وزیراعظم کے دفتر سے نکالے جانے کے بعد پتہ چلی ہے کہ ملک میں انصاف کا حصول واقعی بہت مہنگا ہو چکا ہے

* تمام مسائل کا حل صرف اور صرف اور صرف اور صرف اللہ کے نظام کے قیام میں ہے ،جہاں فیصلے تیز ترین اور انصاف پہ مبنی ہوں اللہ کی حدود کا قیام ہی امن اور انصاف کا ضامن ہے

* 1981 میں لاہور باغبانپورہ تھانے کی حدود میں پپو نامی بچہ اغوا ہوا تھا۔ بعد میں اسکی لاش ریلوے کے تالاب سے ملی تھی۔ ضیاءالحق کا مارشل لا تھا۔ قاتل گرفتار ہوئے۔ ٹکٹکی پر لٹکانے کا حکم فوجی عدالت سے جاری ہوا۔ تین دن بعد ٹکٹکی وہاں لگی جہاں آجکل بیگم پورہ والی سبزی منڈی ہے۔ پورے لاہور نے دیکھا پھانسی کیسے لگتی ہے۔ چاروں اغواکار اور قاتل پورا دن پھانسی پر جھولتے رہے۔ آرڈر تھا کہ لاشیں غروبِ آفتاب کے بعد اتاری جائیں گی۔
اسکے بعد دس سال کوئی بچہ اغوا اور قتل نہیں ہوا۔

#زینب کا واقعہ ۔ قسط ۱

In Miscellaneous, Urdu Columns on January 12, 2018 at 9:17 am

قصور شہر میں #زینب کا واقعہ پہلا نہیں ۔ اس سے قبل 10-12 واقعات ہو چکے ہیں ۔ یہ واقعہ ہم سب کو رلا اور اندر سے ہلا گیا ۔ ہر ایک نے اپنی بیٹی اور بہن میں #زینب کو تلاش کیا اور حتی المقدور جہاں تک ہو سکا او بہیمانہ واقعہ کی شدید ترین الفاظ میں مزمت کی اور دکھ اور افسوس کا اظہار کیا ۔

26677988_2053660051327248_7724050880383767952_o

تقریبا ہر فرد نے اس حوالے سے کچھ نہ کچھ اظہار خیال کیا ۔ مگر آئیے کچھ جملہ مسائل پر بھی گفتگو کریں

#زینب کا واقعہ پولیس کے فرسودہ ترین نظام کا مظہر ہے
==================================

* اس واقعہ کا سب سے اہم پہلو ہے کہ پولیس کا نظام نہ صرف اسوقت فرسودہ ہو چکا ہے بلکہ بدبودار اور متعفن بھی ہو چکا ہے، علاقے کا ایس ایچ او اسوقت وہ فرد تھا جس کو گزشتہ دنوں گنڈا سنگھ تھانے میں (اقرا الحسن ۔ سرعام کے بقول) میں رشوت کے الزام میں معطل ہو چکا تھا مگر پھر ڈیمارٹمنٹل کاروائ کے بعد یہاں ترقی دیکر SHO لگا دیا گیا تھا ۔ بچی چاردن تک غائب رہی مگر ان کی کوشش کاغزی کاراوئ سے زیادہ نہیں رہی ۔ کرپٹ فرد کس طرح کسی مظلوم کی داد رسی کر سکتا ہے ؟

* ایکسپریس نیوز میں میزبان عمران خان کے پروگرام میں زینب کے چچا نے کیمرے کے سامنے یہ بتایا کہ ان کا ڈی پی او نےا ننھی زینب کی لاش کے سامنے یہ شرمناک بات کہی کہ “بہت بو آ رہی ہے میں گاڑی سے باہر نہیں آسکتا ، آپ دس ہزار روپے لاش ڈھونڈنے والے سپاہی کو دے دیں میں اسے تعریفی سرٹیفکٹ بھی دوں گا”

* حد یہ ہے کہ قصور پولیس نے نہایت عجلت میں ملزم کا جو خاکہ جاری کیا ہے کہ وہ بھی غلط ہے ۔ سی سی کیمرہ کی فوٹیج ہونے کے باوجود گزشتہ چار دن میں کوئ بھی مثبت کاروائ سامنے نہیں آئی ۔ ناہل راشی ایس ایچ او کر بھی کیا سکتا تھا

* معا،لہ تو یہاں تک پہنچا کہ مظاہرین کو پروفیشنلی ٹیکل کتنے کے بجائے ان پہ الٹی براہ راست گولی چلائ گئ اور دو افراد مزید ہلاک ہو گئے اور چار افراد زخمی ہو گئے

* شہر کی انتظامیہ ، ارباب اختیار ، منتخب ممبران اسمبلی ، پولیس اور دیگر ادارے اسقدر بےغیرت ، بے شرم اور بے حیا ہیں کہ بارہوٰیں کیس پہ جب عوام نے احتجاج کیا تو روایتی طور پہ کاسمیٹکس اقدامات کر کے جان چھڑانے کی کوشش کی مگر اب عوامی احتجاج کے بعد ایک دو لوگوں کو معطل کر کے مستعدی دکھانے کی کوشش کر رہے ہیں ۔ ان کو گزشتہ تمام واقعات کا کوئ احساس نہیں

حکومت وقت کا رد عمل
==============

* لاہور اور قصور میں فاصلہ دو گھنٹے سے بھی کم ہے بلکہ یہ بھی معلوم نہیں ہو گا کہ لاہور کہاں ختم ہو رہا ہے اور قصور کہاں سے شروع ہو رہا ہے کہ اگر بورڈز نہ لگے ہوں بلکہ حالیہ بلدیاتی انتخابات میں قصور کی دو یونین کونسلز کو لاہور کی حدود میں شامل کر لیا گیا ۔

* سوال یہ ہے کہ لاہور کے ایوانوں میں گزشتہ ایک ماہ سے گزشتہ اغوا اور ہلاک شدہ 11 بچے / بچیوں کی آہ وزاری کیوں نہیں پہنچی ۔ انکی سسکیاں اور انکے آنسو کیوں رنگ نہ لا سکے۔ یہ تو ہوا کہ عوامی دباو پہ آج صبح پانچ بجے زینب کے گھر پہنچ گئے ؟ مگر یاد رکھئیے کہ اللہ کے امتحان میں سوال و جواب آج کی میڈیا کے مقابلے میں زیادہ سخت ہوں گے

* شاہ ولی اللہ دہلوی نے فرمایا تھا کہ ” جن کے قاتل نامعلوم ہو جائے اس مقتول کا قاتل حکمران ہوتا ہے ”
تو حضورکڑوی سچائی یہی ہے

ظالم کا غرور اور ہماری بے بسی

In pakistan, Pakistan History, Urdu Columns on December 29, 2017 at 12:24 pm

بابے_رحمتے !!! انصاف پھر 5 لاکھ کے مچلکے پہ بے بس ہے#
ایک ایم پی ائے ۔ پھر عدالت سے گزر کہ جیل کے باہر کھڑا ہے

اکڑ رہا ہے ۔ غرور اور تکبر سے سینہ پھلائے کھڑا ہے کہ دیکھو میرا کون کچھ بھی بگاڑ سکا

download (27)
اور اسکے حواری قاتل کو پھولوں کی پتیوں سے استقبال کر رہے ہیں
اور مقتول کی قبر پہ آنسو بہانے والے شاید پھول کی پتیاں بھی غربت کی وجہہ سے نہیں ڈال سکتے

146934_034204_updates

ایک بار پھر #طاقتور_ ظالم جیت گیا اور
مظلوم_مقتول ۔ #انصاف کے دروازے پہ ہی دفن ہو گیا#

اور یہ #ظلم اسلئے ہے کہ
اللہ کا قانون اس زمین پہ نافذ ہی نہیں
اور ہم اسکی جدوجہد کرنے کو تیار نہیں

دسمبر 27, اک داستان خونچکاں

In pakistan, Pakistan History, Urdu Columns on December 27, 2017 at 7:13 am

دسمبر27، 2007 پاکستان کی تاریخ کا ایک اندھوناک دن تھا جس میں بلا شبہ پاکستان کے تمام چار صوبوں میں مقبول رہنما #بے_نظیر_بھٹو کو بیدردی سے قتل کر دیا گیا تھا . اگر یہ نعرہ لگایا گیا کہ “چاروں صوبوں کی زنجیر ۔ بے نظیر بے نظیر” تو قطعی غلط نہیں تھا ۔ یقینا #بے_نظیر_بھٹو #وفاقکی علامت تھیں اور پاکستان پیپلز پارٹی کو اپنی نڈر قیادت کے زریعے بہت آگے لےجا سکتی تھیں مگرافسوس کہ وہ کسی سازش کا شکار ہو گئیں اور انکو موت کی نیند سلا دیا گیا

Rare-newspapers-Rare-edition-of-Dawn-December-28-2007-giving-news-of-Benazir-Bhuttos-assassination-on-December-27-2007-Old-and-rare-newspapers-about-Pakistan

مگر یہی دن #پاکستانیوں کیلئے ایک بھیانک ترین دن بھی تھا ۔ ایسا دن جس میں ہر شخص ایک داستان آج تک ہے – جب #پاکستان کی گلی کوچوں اور شاہراؤں پہ سینکڑوں گاڑیاں جلا دی گئیں پچاس کے قریب افراد بے نظیر کے ساتھ ساتھ موت کے گھاٹ اتار دئیے گئے ، بینکز لوٹے گئے اور بستیوں پہ منظم حملے کیئے گئے ؛ اسکولز اور ٹرینز جلا دی گئیں ۔ یہ سب اسقدر آناً فاناً ہوا کہ کوئ نہ سنبھل سکا ۔

مگر آج ان تمام افراد کی بھی برسی اور یوم شہادت ہے جو اس دن بے #بے_نظیر_بھٹو کی طرح#بےقصور مار دئیے گئے تھے ۔ اس عرصہ میں انکے اہل خانہ کس کرب سے گزرے اسکا حساب بھی ضروری ہے

1100323158-1

یہاں مجھے کہنے دیجئیے اس دن #ریاست اپنے شہریوں کی حفاظت میں قطعی ناکام تھی جس کی زمہ داری پرویز مشرف کو جاتی ہے ۔ ابھی تک یہ عقدہ نہیں کھلا کہ جب شہروں کو لوٹا جا رہا تھا اور ملک انارکی کا شکار تھا ْ اس دن #پاکستانی_افواج بیرکوں میں بیٹھی کیا کر رہی تھیں ؟ عام شہریوں کو لوٹ مار کرنے والوں کے رحم و کرم پہ کیوں چھوڑ دیا گیا تھا ؟ کیا ہماری حفاظت کی زمہ داری#افواج_پاکستان کی نہیں تھی . اس غفلت کی براہ راست زمہ داری ریاست کے زمہ دار اور افواج پاکستان کو بھی جاتی ہیں

اس بات کو بھی تسلیم کرنا ہوگا کہ اس خطرناک ماحول میں #آصف_علی_زرداری کا #پاکستان_کھپےکا نعرہ بروقت اور دلیرانہ کام تھا۔ اسکی تعریف بہت ضروری ہے۔ سیاسی مخالفت برائے مخالفت درست نہیں

1100322924-1

بہرحال 27 دسمبرہمیشہ بطور داستان خونچکاں ہی یاد کیا جائے گا ۔ اگر#بے_نظیر_بھٹو کو یاد کیا جائے گا تو اس روز #پاکستان کی مظلومیت اور لوٹ مار کے منظم واقعات کو بھی یاد رکھا جائے گا ۔
صرف #بے_نظیر_بھٹو نہیں بلکہ آج متاثر ہونے والے ہرہرفرد کو بھی یاد رکھا جائے گا ۔